ساغر نظامی مقسوم دل کروں خلش نشتر کو میں - ساغر نظامی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 18, 2010

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (ساغر نظامی)
    مقسوم دل کروں خلش نشتر کو میں
    اب کے تری نظر سے لڑادوں نظر کو میں
    میرا مذاق عشق زمانے پہ کھل گیا
    اب کیا کہوں چھپا نہ سکا چشم تر کو میں
    خاموشیء جمود میں پھونکونگا صورِ حشر
    تیری خبر سنا کے دلِ بے خبر کو میں
    یا آرزو نے عمرِ محبت سنوار دی
    یا دستِ آرزو سے گیا عمر بھر کو میں
    کتنی گداز بخش ہے صبحِ تجلیات
    پاتا ہوں ہر نفس میں نسیمِ سحر کو میں
    گر یہ نشاطِ چشم ہے اے بیخودی مگر
    کس دھوپ میں سکھاؤنگا دامانِ تر کو میں
    ساغر یہ ہے شباب میں معیار مے کشی
    آنکھوں سے کھنچتا ہوں شرابِ نظر کو میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,827
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    واہ واہ! کیا خوبصورت غزل ہے۔ شکریہ کاشفی صاحب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    شکریہ سخنور صاحب!
     
  4. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    صحیح اور مکمل غزل مطلع کی درستگی کے ساتھ کچھ اس طرح سے ہے۔۔
    غزل
    (ساغر نظامی)
    کرتا ہوں یوں وسیع فریبِ نظر کو میں
    ذرّوں میں ڈھونڈتا ہوں، تری رہگزر کو میں

    رسوا کروں گا سوزشِ داغِ جگر کو میں
    اُٹھّا ہوں لے کے حشر میں، دامانِ تر کو میں


    مقسومِ دل کروں خلشِ نیشتر کو میں
    اب کے تری نظر سے لڑادوں نظر کو میں

    میرا مذاقِ عشق زمانے پہ کُھل گیا
    مجبور تھا چھپا نہ سکا، چشمِ تر کو میں

    دل مستیء نگاہ سے اک چیز ہوگیا
    سرشار دیکھتا ہوں خرابِ نظر کو میں

    خاموشیء جمود میں پھونکوں گا صُورِ حشر
    تیری خبر سُنا کے دلِ بے خبر کو میں

    یا آرزو نے عمرِ محبت سنوار دی
    یا دستِ آرزو سے گیا عمر بھر کو میں!

    کتنی گداز بخش ہے صبحِ تجلیات
    پاتا ہوں ہر نفس میں نسیمِ سحر کو میں

    گریہ نشاطِ چشم ہے اے بیخودی مگر
    کس دھوپ میں سکھاؤں گا دامانِ تر کو میں

    کس درجہ غم کی موت میں ہیجانِ یاس ہے
    اُٹھ اُٹھ کے دیکھتا ہوں، رُخِ نوحہ گر کو میں

    ساغر یہ ہے شباب میں معیار مے کشی!
    آنکھوں سے کھنچتا ہوں، شرابِ نظر کو میں!
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر