مجذوب مجذوب: وہ مستِ ناز آتا ہے ذرا ہشیار ہو جانا

محمد عظیم الدین نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 13, 2017

  1. محمد عظیم الدین

    محمد عظیم الدین محفلین

    مراسلے:
    853
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    وہ مستِ ناز آتا ہے ذرا ہشیار ہو جانا
    یہیں دیکھا گیا ہے بے پئے سرشار ہو جانا
    ہمارا شغل ہے راتوں کو رونا یادِ دلبر میں
    ہماری نیند ہے محوِ خیالِ یار ہو جانا
    تصور کی مرے گلکاریاں صیاد کیا جانے
    قفس کا بھی گلوں کی یاد میں گلزار ہو جانا
    لگاوٹ سے تری کیا دل کھلے معلوم ہے ہم کو
    ذرا سی بات میں کھنچ کر ترا تلوار ہو جانا
    عبث ہے جستجو بحرِمحبت کے کنارے کو
    بس اس میں ڈوب مرنا ہی ہے اے دل پار ہو جانا
    نہیں درکار مے ہم کوپیے جا تو ہی اے ساقی
    ہمیں تو مست کرتا ہے ترا سرشار ہو جانا
    خبر کیا تھی کہ اس انکار میں اقرار پنہاں ہے
    مرا غش کھا کے گر پڑنا کہ بس دیدار ہو جانا

    اقتباس: کشکولِ مجذوب از خواجہ عزیز الحسن مجذوبؒ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر