قلندر کا مفہوم

محمد بلال اعظم نے 'متفرقات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 8, 2013

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    آج کتاب چہرے پہ ایک دوست نے پوچھا کہ "قلندر" کا کیا مفہوم ہے؟
    میں آپ سب کیا کہتے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ٹیگز
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. ساجد

    ساجد محفلین

    مراسلے:
    7,113
    موڈ:
    Question
    قلندر
    علامہ اقبال فرما گئے
    ؎مہر و مہ و انجم کا محاسب ہے قلندر
    ايام کا مرکب نہيں، راکب ہے قلندر
    ---------------------
    ؎پانی پانی کر گئی مجھ کو قلندر کی يہ بات
    تو جھکا جب غير کے آگے ، نہ من تيرا نہ تن
    قتیل شفائی​
    ؎حالات کے قدموں پہ قلندر نہیں گرتا
    ٹوٹے بھی جو تارا تو زمیں پر نہیں گرتا
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    لیکن پھر ہم علامہ اقبال کو آدھا قلندر کیوں کہتے ہیں، وہ نہ تو اپنے وجود سے بے خبر تھے اور نہ علائقِ دنیوی سے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  5. ساجد

    ساجد محفلین

    مراسلے:
    7,113
    موڈ:
    Question
    یہ تو علامہ رحمۃاللہ کو قلندر کہنے والے ہی بتا سکتے ہیں کہ وہ آدھے قلندر تھے یا پورے میں اُن کے بارے میں ایسا ظن نہیں رکھتا۔ میری دانست میں قلندری اور چیز ہے اور علامہ اقبال ایک مصلح تھے۔
    اب یہ ہمارا معاشرتی رویہ بھی ایسا ہے کہ کچھ لوگ عوام کے عقائد کی کمزوری سے کھیل کر خود کو قلندر یا ان کے جیسا ظاہر کرتے ہیں ۔ بالحقیقت قلندرانہ صفات اپنے صحیح معانی میں ہر مومن کے اندر موجود ہونی چاہئیں جیسی کہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ کے اندر بھی موجود تھیں لیکن صفات کا کچھ حصہ کسی انسان میں پایا جانا اس کے قلندر یا آدھا قلندر ہونے کی دلیل نہیں بن سکتا۔
     
    • متفق متفق × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. عینی شاہ

    عینی شاہ محفلین

    مراسلے:
    9,698
    موڈ:
    Cheerful
    پانی پانی کر گئی مجھ کو قلندر (منے) کی یہ بات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔:cautious:
    مجھ سے پوچھ رہے ہو اسکا مطلب مجھ سے یعنی کہ مجھ سے عینی شاہ سے :eek: وہ بھی ٹیگ کر کے افففف منے کیا ہو گیا تمہیں :nerd:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
    • زبردست زبردست × 2
  7. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    محترم بھائی
    قلندر جہان تصوف میں ایسی ہستی قرار دی جاتی ہے ، جس نے خود کو پہچان کر اپنے خالق کی پہچان کر لی ہوتی ہے ۔ اور وہ اپنے نفس پر ایسے قادر ہوتا جیسے اک مداری اپنے پالتو سدھائے ہوئے جانوروں پر ۔
    اہل تصوف " قلندر " سے مراد " آزاد اور اپنی مستی میں مست ہستی " لیتے ہیں ۔
    ایسی مست ہستی جس نے کٹھن مجاہدے کے بعد اپنے نفس پر قدرت پا لی ہو۔" بو علی شاہ " سخی لعل شہباز " جناب رابعہ بصری " یہ تین ہستیاں درجہ " قلندری " کی حامل قرار دی جاتی ہیں ۔ جناب رابعہ بصری کو " نصف قلندر " کہا جاتا ہے ۔
    مجذوب اور قلندر اک سی کیفیات کے حامل ہوتے ہیں ۔ فرق صرف اتنا ہوتا ہے کہ " مجذوبیت " مادر ذاد بحکم الہی ہوتی ہے
    اور قلندری " اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی " سے منسوب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    تصوف میں یہ واحد مقام ہے جو کہ اپنے آپ میں مکمل ہے ۔ باقی تمام تصوف کے سلسلے راہ سلوک پر چلتے سالک سے ولی ۔ ولی سے ابدال ابدال سے قطب قطب سے غوث کی جانب رواں رہتے ہیں ۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 7
    • زبردست زبردست × 4
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    میں اس دھاگے کا کراس نہیں بنوانا چاہتا۔:D
    میں نے تو اس لیے ٹیگ کیا تھا کہ شاید آپ بھی کوئی معلوماتی بات بتا دیں کیونکہ اس سے متعلق آپ کے جواب بہت اچھے انٹرویو کے دھاگے میں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    زبردست
    اگر آپ سالک، ولی، ابدال، قطب اور غوث پہ روشنی ڈال سکیں تو ممنون ہوں گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    یہ تو میں نے بھی سنا ہی ہے کہ علامہ اقبالؒ آدھے قلندر تھے، کسی کتاب میں نہیں پڑھا۔
    اس ضمن میں صرف ایک واقعہ سنا ہے کہ
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  11. تلمیذ

    تلمیذ لائبریرین

    مراسلے:
    3,914
    موڈ:
    Cool
    جیسا کہ نایاب صاحب نے اوپر فرمایا ہے ہم نے بھی 'آدھے قلندر' کی یہ اصطلاح صرف حضرت رابعہ بصری کے لئے استعمال ہوتی ہی پڑھی ہے۔
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  12. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    منے کراس جمع کرتے جاؤ۔ جلد ہی وکٹوریا کراس بن جائے گا
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  13. تلمیذ

    تلمیذ لائبریرین

    مراسلے:
    3,914
    موڈ:
    Cool
    بلال جی، میں آپ کو تجویز دوں گا کہ آپ لاہور میں مقیم دور حاضر کی نادر روزگار شخصیت اورعظیم صوفی بزرگ جناب سرفراز شاہ صاحب کی کتابیں 'کہے فقیر' اور 'فقیر رنگ' پڑھیں جن کے ساتھ موصوف کے لیکچروں پر مشتمل سی ڈیز بھی ملتی ہیں، ان لیکچرز (میں سے کسی ایک) میں تصوف کی ان اصطلاحات پر سیر حاصل گفتگو کی گئی ہے اور امید ہے کہ آپ کواپنے کئی سوالات کا جواب ان سے مل جائے گا بلکہ کئی دیگر پہلوؤں سے بھی آپ کے علم میں بے پنا ہ اضافہ ہوگا۔ (ناشر: جہانگیر بکڈپو ۔لاہور)
    ان لیکچروں کو آن لائن سننے کے لئے ان کی ویب سائٹ ہے:
    http://qalander.org/first.html
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • متفق متفق × 2
  14. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    میرے محترم بھائی میں تو خود روشنی کی تلاش میں ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بہرحال میرے ناقص علم میں یہ سب کچھ ایسے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    یہ بہت پیچیدہ اور متنازغہ قسم کا موضوع ہے ۔ اس پر گفتگو آسان نہیں ۔ یہ " عبادت ریاضت اور مشاہدے " سے حاصل ہونے والی ایسی کیفیات کا نام ہے ۔ جو صرف ان پر ہی عیاں ہوتی ہیں جوکہ ان اعمال کو کماحقہ ادا کر رہے ہوتے ہیں ۔ تصوف اک بحر بے کنار کا نام ہے جس میں اترنے والا ہی اس کی حقیقت کو جان سکتا ہے۔
    تصوف کیا ہے ۔ اس کی بنیاد کیا ہے ۔ اس کی راہ پر چلنے کے آداب کیا ہیں ۔ اس راہ پر کون کون سی منزلیں " پڑاؤ " کی صورت راہ سلوک کے مسافر جسے " سالک " کہا جاتا ہے کہ سامنے آتی ہیں ۔
    راہ سلوک کے مسافر درجہ بدرجہ ان منازل تک پہنچتے ہیں ۔ اور " سالک " ابدال " قطب " غوث " کہلاتے ہیں ۔
    تصوف کی آخری منزل جو کہ " امور تکوینی " بجا لانے کی منزل ہے وہ جناب حضرت خواجہ خضر علیہ السلام کے پاس ہے ۔ اور سورت کہف میں ان کا بیان ہے ۔اور کوئی صوفی کوئی انسان اس مقام تک نہیں پہنچ سکتا ۔
    تصوف کو " راہ سلوک " بھی کہا جاتا ہے ۔ ایسی راہ جس پر چلتے کوئی انسان دوسرے انسانوں کے لیئے آسانیوں کا سبب بنے ۔ اور انسانیت کی فلاح اور سلامتی کا پیغامبر ٹھہرے ۔
    سالک وہ ہستی کہلاتی ہے جو " مسلمان " ( انسانیت کے لیئے سلامتی کا پیغامبر )ٹھہرتے قران پاک میں بیان کردہ فرمان الہی کو جان سمجھ کر اپنی ذات اور بیرون ذات بکھرے کائنات کے مظاہر پر غوروفکر کرنے کے حکم کو بجا لانے کا خواہش مند ہوتا ہے ۔
    اور جب وہ اس عمل میں مبتلا ہوتا ہے تو اس کے سامنے سے حجابات سمٹنے لگتے ہیں ۔ اور وہ حقیقت سے واقف ہوتے " خلاق العظیم " کے پاک ذکر میں محو ہوجاتا ہے ۔ اور سورہ آل عمران میں کی آخری آیات میں فرمائے گئے ارشاد پاک کا عملی ثبوت بن جاتا ہے ۔
    الَّذِينَ يَذْكُرُونَ اللَّهَ قِيَامًا وَقُعُودًا وَعَلَىٰ جُنُوبِهِمْ وَيَتَفَكَّرُونَ فِي خَلْقِ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ رَبَّنَا مَا خَلَقْتَ هَٰذَا بَاطِلًا سُبْحَانَكَ فَقِنَا عَذَابَ النَّارِ [٣:١٩١]
    یہ وہ لوگ ہیں جو (سراپا نیاز بن کر) کھڑے اور (سراپا ادب بن کر) بیٹھے اور (ہجر میں تڑپتے ہوئے) اپنی کروٹوں پر (بھی) اللہ کو یاد کرتے رہتے ہیں اور آسمانوں اور زمین کی تخلیق (میں کارفرما اس کی عظمت اور حُسن کے جلووں) میں فکر کرتے رہتے ہیں، (پھر اس کی معرفت سے لذت آشنا ہو کر پکار اٹھتے ہیں:) اے ہمارے رب! تو نے یہ (سب کچھ) بے حکمت اور بے تدبیر نہیں بنایا، تو (سب کوتاہیوں اور مجبوریوں سے) پاک ہے پس ہمیں دوزخ کے عذاب سے بچا لے، [طاہر القادری]
    جو اٹھتے، بیٹھتے اور لیٹتے، ہر حال میں خدا کو یاد کرتے ہیں اور آسمان و زمین کی ساخت میں غور و فکر کرتے ہیں (وہ بے اختیار بو ل اٹھتے ہیں) "پروردگار! یہ سب کچھ تو نے فضول اور بے مقصد نہیں بنایا ہے، تو پاک ہے اس سے کہ عبث کام کرے پس اے رب! ہمیں دوزخ کے عذاب سے بچا لے [ابوالاعلی مودودی]
    جو اللہ کی یاد کرت ہیں کھڑے اور بیٹھے اور کروٹ پر لیٹے اور آسمانوں اور زمین کی پیدائش میں غور کرتے ہیں اے رب ہمارے! تو نے یہ بیکار نہ بنایا پاکی ہے تجھے تو ہمیں دوزخ کے عذاب سے بچالے، [احمد رضا خان] جو اٹھتے، بیٹھتے اور پہلوؤں پر لیٹے ہوئے (برابر) اللہ کو یاد کرتے ہیں اور آسمانوں و زمین کی تخلیق و ساخت میں غور و فکر کرتے ہیں (اور بے ساختہ بول اٹھتے ہیں) اے ہمارے پروردگار! تو نے یہ سب کچھ فضول و بیکار پیدا نہیں کیا۔ تو (عبث کام کرنے سے) پاک ہے ہمیں دوزخ کے عذاب سے بچا۔ [آیۃ اللہ محمد حسین نجفی]
    جو لوگ اٹھتے, بیٹھتے, لیٹتے خدا کو یاد کرتے ہیں اور آسمان و زمین کی تخلیق میں غوروفکر کرتے ہیں... کہ خدایا تو نے یہ سب بے کار نہیں پیدا کیا ہے- تو پاک و بے نیاز ہے ہمیں عذاب جہّنم سے محفوظ فرما [سید ذیشان حیدر جوادی]
    وہ جو الله کو کھڑے اور بیٹھے اور کروٹ پر لیٹے یاد کرتے ہیں اور آسمان اور زمین کی پیدائش میں فکر کرتے ہیں (کہتے ہیں) اے ہمارے رب تو نے یہ بےفائدہ نہیں بنایا توسب عیبوں سے پاک ہے سو ہمیں دوزح کے عذاب سے بچا [احمد علی]
    جو اللہ تعالیٰ کا ذکر کھڑے اور بیٹھے اور اپنی کروٹوں پر لیٹے ہوئے کرتے ہیں اور آسمانوں وزمین کی پیدائش میں غوروفکر کرتے ہیں اور کہتے ہیں اے ہمارے پروردگار! تو نے یہ بے فائده نہیں بنایا، تو پاک ہے پس ہمیں آگ کے عذاب سے بچا لے [محمد جوناگڑھی]
    ﴿١٩١﴾

    راہ سلوک کے مسافر ان منازل تصوف کے اثبات میں درج ذیل حدیث مبارکہ بھی بطور دلیل پیش کرتے ہیں ۔
    حضرت ابو ھریرہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا اللہ تعالی فرماتا ہے:
    من عادی لی ولیا فقد اٰذنتہ بالحرب وما تقرب الی عبدی بشیئ احب الی مما افترضت علیہ، وما یزال عبدی یتقرب الی بالنوافل حتی احبہ، فاذا احببتہ: کنت سمعہ الذی یسمع بہ، وبصرہ الذی یبصربہ، ویدہ التی یبطش بھا، ورجلہ التی یمشی بھا، وان سالنی لاعطینہ، ولانستعاذنی لاعیذنہ، وما ترددت عن شیئ انا فاعلہ ترددی عن النفس المومن یکرہ الموت وانا اکرہ مساءتہ۔ او کما قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم
    (بخاری، ابن حبان، بیہقی(
    ترجمہ: جو میرے کسی ولی سے دشمنی رکھے میں اس سے اعلان جنگ کرتا ہوں اور میرا بندہ کسی ایسی چیز کے ذریعے میرا قرب نہیں پاتا جو مجھے فرائض سے زیادہ محبوب ہو،اور میرا بندہ مسلسل میری نفلی عبادات کے ذریعے میرا قرب حاصل کرتا رہتا ہے یہاں تک کہ میں اس سے محبت کرنے لگتا ہوں اور جب میں اس سے محبت کرتا ہوں تو اس کے کان کی سماعت بن جاتا ہوں جن سے وہ سنتا ہے اور اس کی آنکھ کا نور بن جاتا ہوں جس سے وہ دیکھتا ہے اور اس کے ہاتھ کی گرفت بن جاتا ہو جس سے وہ پکڑتا ہے اور اس کے پاءوں کی توانائی بن جاتا جس سے وہ چلتا ہےاگر وہ مجھ سے سوال کرتا ہے تو میں اسے ضرور بر ضرور عطا کرتا ہوں اور اگر وہ میری پناہ مانگتا ہے تو میں اسے ضرور بر ضرور پناہ دیتا ہوں ۔ میں نے جو کام کرنا ہوتا ہے اس میں کبھی متردد نہیں ہوتا جیسے بندہءمومن کی جان لینے میں ہوتا ہوں ایسے میں کہ اسے موت پسند نہیں اور مجھے اس کی تکلیف پسند نہیں۔"
    علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ نے بھی اپنے کلام میں جہاں " مرد مومن اور قلندر " بارے اپنے قلم کو حرکت دی ہے وہاں انہوں نے " خودی " کے اثبات کو لازم قرار دیا ہے ۔
    خودی کے ساز سے ہے عمر جاوداں کا چراغ
    خودی کے سوز سے روشن ہیں امتوں کے چراغ
    خودی کیا ہے ؟
    درحقیقت خود سے آگاہی ہے کہ اقبال کہ اس پیغام کی اصل حدیث نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے کہ ۔ ۔
    مَنْ عَرَفَ نَفْسَه فَقَدْ عَرَفَ رَبَّه.
    ’’جس نے اپنے آپ کو پہچان لیا۔ اس نےاپنے رب کو پہچان لیا‘‘۔
    " راہ سلوک کا یہ سفر " خود شناسی سے شروع ہوکر بندے کو خدا شناسی تک لے جاتا ہے اور اس سفر میں بندہ کو بقاء و دوام تب نصیب ہوتا ہے کہ جب بندہ اپنی خودی کی حقیقت کو پہچان کر خود اپنی ہی خودی میں گم ہونے کی بجائے اپنی خودی کو خدا شناسی میں گم کردیتا ہے تب بندہ مقام فنا سے مقام بقا پر فائز ہوجاتا ہے ۔ یعنی انسان کا شعوری سفر اپنے احساس نفس سے اپنی معرفت اور پہچان کی حقیقت کے ساتھ جتنا آگے بڑھے گا اسے اتنا ہی اپنے رب کی معرفت حاصل ہوگی انسان جتنا اپنی ذات پر غور کرتا ہے، اپنی حقیقت کو پہچانتا ہے اتنا ہی اسے اپنے رب کی معرفت حاصل ہوتی ہے اور یہ معرفت اس کو رب کی محبت میں فنایت پر مجبور کرتی ہے
    " سالک " سچے دل عبادت و ریاضت سے کیف، جذب، مستی، استغراق، سکر (بے ہوشی) اور صحو (ہوش) ،وجد، حال جیسی کیفیات سے گزرتے " ولی ابدال قطب غوث کے درجے پاتے ہیں ۔
    کچھ اہل تصوف "فقیر و درویش " کو بھی " سالک " کے حکم میں قرار دیتے ہیں ۔
     
    • زبردست زبردست × 10
    • معلوماتی معلوماتی × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بہت زبردست ویب سائٹ ہے۔
    کتابیں بھی پتہ کرتا ہوں۔
    کیا ان کی کتابیں آن لائن بھی دستیاب ہیں؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  16. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    قلندر جز دو حرفِ لا الٰہ کچھ نہیں رکھتا۔۔
    فقیہہِ شہر قاروں ہے لغت ہائے حجازی کا
    اقبال علیہ الرحمۃ
     
    • متفق متفق × 3
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. تلمیذ

    تلمیذ لائبریرین

    مراسلے:
    3,914
    موڈ:
    Cool
    نہیں ابھی حال ہی میں چھپی ہیں اور جملہ حقوق محفوظ ہیں اس لئے گمان غالب ہے کہ آن لائن دستیاب نہیں ہوں گی (اور جہانگیر بکڈپو ویسے بھی ایک مضبوط ناشر ہیں) لیکن صاحب، کاپی رائٹ کا کون خیال کرتا ہے۔ مجھے چند روز پہلے اک سائٹ کا پتہ چلا ہے جس پر بے شمار ایسی کتب فری دستیاب ہیں جن کے بارے میں کوئی شک نہیں کہ کاپی رائٹ کے اندر آتی ہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 3
  18. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    یہ دونوں کتب میرے پاس ہیں اور ہر کتاب میں دراصل شاہ صاحب کے چالیس بیالیس لیکچرز کو قلمبند ہی کیا گیا ہےآپ کو اگر کتاب نہ بھی ملے تو انکی ویب سائٹ پر موجود 223 لیکچرز کو ایک ایک کرکے سن لیں یا ڈاؤنلوڈ کر لیں۔۔۔۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • متفق متفق × 1
  19. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    محترم فرخ بھائی نے " کہے فقیر " بارے یہاں اچھی شراکت دی ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  20. تلمیذ

    تلمیذ لائبریرین

    مراسلے:
    3,914
    موڈ:
    Cool
    ویب سائٹ پر ابھی تک 221 لیکچر اپ لوڈ ہوئے ہیں۔ 18 نومبر 2012 کے بعد کوئی لیکچر نہیں آیا، نہ جانے کیوں؟
     

اس صفحے کی تشہیر