غمزہ وہ برسرِ بے داد آیا ۔ بہادر شاہ ظفر

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 7, 2015

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    غمزہ وہ برسرِ بے داد آیا
    مژدہ اے مرگ کہ جلّاد آیا

    دہنِ تنگ جو یاد آیا مجھے
    تنگ کیا کیا دلِ ناشاد آیا

    عشق میں تیشۂ آخر کے سوا
    کچھ ترے کام نہ فرہاد آیا

    بلبلو دیکھو چمن میں اتنا
    نہ کرو شور کہ صّیاد آیا

    بول اٹھا دیکھ کے مجنوں مجھ کو
    یہ تو کوئی مرا استاد آیا

    اُڑ گئے ہوش مرے ناصح کے
    سامنے جب وہ پری زاد آیا

    جو لکھا تھا مری پیشانی میں
    سو وہ پیش اے دلِ ناشاد آیا

    نہ تُو آیا مری سن کر فریاد
    دم لبوں پر دمِ فریاد آیا

    دیکھ کر اُس بتِ کافر کے ستم
    اے ظفرؔ مجھ کو خدا یاد آیا

    (بہادر شاہ ظفرؔ)​
     

اس صفحے کی تشہیر