غلاف کعبہ سے - زکی کیفی

باسم نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 22, 2012

  1. باسم

    باسم محفلین

    مراسلے:
    1,767
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    غلافِ کعبہ تری عظمتوں کا کیا کہنا​
    عروسِ حُسنِ ازل کا لباسِ نور ہَے تُو​
    گناہگار تِرا کیوں نہ چوم لیں دامن​
    امینِ رازِ وفا، جلوہ زارِ طُور ہے تُو​
    کمالِ فرض کا پیکر ہے تیری ہستی بھی​
    کسی کی ذات میں خُود کو مٹادیا تُو نے​
    ہر آن سینہ سپر ہے حرم کی خدمت میں​
    دلوں میں نقشِ محبت جمادیا تو نے​
    یہ تیرا جذبہٗ خدمت ہے رشک کے قابل​
    غبار دامنِ کعبہ تک آ نہیں سکتا​
    حوادثات کے طُوفاں ہزار ٹکرائیں​
    تو اپنے فرض کو لیکن بھلا نہیں سکتا​
    تجھے نصیب ہے قربت حرم کے سینے سے​
    حریمِ حُسنِ حقیقت کا رازدار ہے تُو​
    ہے تیرا مقصدِ ہستی حرم کی زیبائش​
    نگارِ حسن و تجلّی کا پردہ دار ہے تو​
    درِ حرم کے محافظ ادائے فرض کے بعد​
    جہاں بھی اہلِ وفا تجھ کو دیکھ پائیں گے​
    سکوںِ قلب کی خاطر لگا کے سینے سے​
    ہر اک تار تِرا، تارِ جاں بنائیں گے​
    غلافِ کعبہ قسم مجھ کو ربِّ کعبہ کی​
    تجھے جو دیکھا تو آنکھوں میں اشک بھر آئے​
    تصوّرات کی دنیا میں ایک ہلچل ہے​
    جو دل میں داغ تھے پوشیدہ وہ نکھر آئے​
    نہ پُوچھ مجھ سے کہ میں گم ہوں کن خیالوں میں​
    گزر رہی ہے جو دل پر بتا نہیں سکتا​
    ٹپک رہے ہیں یہ کیوں اشک آج آنکھوں سے​
    تری نظر سے نظر کیوں مِلا نہیں سکتا​
    یہ سوچتا ہوں بھلا مجھ کو تجھ سے کیا نسبت​
    زمینِ عجز ہوں میں رشکِ آسماں تو ہے​
    میں ایک راہِ محبت کا راہ گم کردہ​
    حریمِ منزلِ محبوب کا نشاں تو ہے​
    شرف مجھے بھی تھا حاصل حرم کی خدمت کا​
    مگر یہ فرضِ محبت بھلا دیا میں نے​
    مرا ضمیر بھی بیدار تھا کبھی، لیکن​
    ہوس کی گود میں اس کو سلا دیا میں نے​
    مجھے بھی ناز تھا کعبہ کی پاسبانی پر​
    حرم کے حُسنِ نہاں کا تھا راز داں میں بھی​
    سرِ نیاز میں تھی شان کج کلاہی کی​
    غمِ حبیب سے رہتا تھا شادماں میں بھی​
    غرورِ علم جہالت کی راہ پر لایا​
    حرم کی راہ سے بیگانہ کردیا مجھ کو​
    میں ایک رازِ حقیقت تھا بزمِ دنیا میں​
    مگر خرد نے اک افسانہ کردیا مجھ کو​
    درِ حرم سے جدا ہوکے تیرہ بختی سے​
    جہاں میں خود کو تماشا بنادیا میں نے​
    وہ دل جو مرکزِ انوارِ حق تھا اس دل کو​
    بُتانِ حرص و ہوس سے سجادیا میں نے​
    تھا میرا فرض حرم کا پیام پہنچانا​
    چمن میں دشت میں صحرا میں خشک میں تَر میں​
    حرم سے خیر کی دولت لیے ہوئے نکلا​
    اُلجھ کے رہ گیا لیکن میں دامنِ شر میں​
    گناہگارِ محبت ہوں اے غلافِ حرم​
    کھڑا ہوں شرم و ندامت سے سر جھکائے ہوئے​
    مجھے سنبھال خدا کیلیے سنبھال مجھے​
    شکستہ دل ہوں قدم بھی ہیں لڑکھڑائے ہوئے​
    ادا شناسِ وفا اے حرم کے پیراہن​
    مرے لیے بھی سرِ ملتزم دعا کرنا​
    عطا ہو پھر مجھے احساسِ فرض کی دولت​
    نصیب پھر ہو حرم سے مجھے وفا کرنا​
    دیارِ حُسن و تجلّی کے راہرو تجھ پر​
    یہ چند اشکِ ندامت نثار کرتا ہوں​
    خزاں نصیبِ چمن ہوں میں اے نسیمِ حرم​
    دعائے آمد فصلِ بہار کرتا ہوں​

    جس سال غلافِ کعبہ تیار کرنے کی سعادت پاکستان کو حاصل ہوئی اسی سال یہ نظم کہی گئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 6
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. زبیر مرزا

    زبیر مرزا محفلین

    مراسلے:
    5,997
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سبحان اللہ ، جزاک اللہ
    بہت شکریہ جناب شئیرکرنے کا - اللہ تعالٰی آپ کو خیرکثیرعطا فرمائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. قرۃالعین اعوان

    قرۃالعین اعوان لائبریرین

    مراسلے:
    8,961
    موڈ:
    Lurking
    بہت اعلی
    جزاک اللہ!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. مہ جبین

    مہ جبین محفلین

    مراسلے:
    6,246
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    دیارِ حُسن و تجلّی کے راہرو تجھ پر
    یہ چند اشکِ ندامت نثار کرتا ہوں
    خزاں نصیبِ چمن ہوں میں اے نسیمِ حرم
    دعائے آمد فصلِ بہار کرتا ہوں
    سبحان اللہ
    بہت عمدہ و اعلیٰ کلام
    شاملِ محفل کرنے کا بہت شکریہ باسم
    جزاک اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. سمير خان

    سمير خان محفلین

    مراسلے:
    13
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Lonely
    سبحان اللہ ، جزاک اللہ
    بہت شکریہ جناب شئیرکرنے کا - اللہ تعالٰی آپ کو جزاء الخير عطا فرمائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. سید زبیر

    سید زبیر محفلین

    مراسلے:
    4,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    انتہائی اعلیٰ کلام شئیر کرنے کا شکریہ
    ہر بند لا جواب ہے ۔۔۔۔ جزاک اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,568
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    لاجواب۔

    شکریہ باسم صاحب ارسال فرمانے کیلیے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    بہت عمدہ و اعلٰی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. باسم

    باسم محفلین

    مراسلے:
    1,767
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    یہ پیشکش پسند کرنے پر آپ سب کا بہت شکریہ
    منتظمین سے ایک ٹائپو درست کرنے کی گزارش ہے
    ٹپک رہے ہیں یہ کیوں اشک آج آنکھوں سے
    لیجیے یہ عمدہ نظم ایک دلنشیں آواز میں بھی پیش ہے
    غلاف کعبہ -انس یونس http://www.islamicwavez.com
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  10. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,389
    بہت ہی عمدہ اور لاجواب۔ بہت شکریہ شیئر کرنے کے لیئے۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر