انور شعور غزل ۔ ہوگئے دن جنہیں بھلائے ہوئے ۔ انور شعورؔ

محمداحمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 13, 2012

  1. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,289
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    غزل
    ہوگئے دن جنہیں بھلائے ہوئے
    آج کل ہیں وہ یاد آئے ہوئے
    میں نے راتیں بہت گزاری ہیں
    صرف دل کا دیا جلائے ہوئے
    ایک اُسی شخص کا نہیں مذکور
    ہم زمانے کے ہیں ستائے ہوئے
    سونے آتے ہیں لوگ بستی میں
    سارے دن کے تھکے تھکائے ہوئے
    مسکرائے بغیر بھی وہ ہونٹ
    نظر آتے ہیں مسکرائے ہوئے
    گو فلک پہ نہیں، پلک پہ سہی
    دو ستارے ہیں جگمگائے ہوئے
    الوداعی مقام تک آئے
    ہم نظر سے نظر ملائے ہوئے
    اے شعورؔ اور کوئی بات کرو
    ہیں یہ قصّے سُنے سنائے ہوئے
    انور شعورؔ
     

اس صفحے کی تشہیر