غافل نہ رہیو اُس سے تو اے یار آج کل ۔ جرأت

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 12, 2012

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    غافل نہ رہیو اُس سے تو اے یار آج کل
    مرتا ہے تیرے عشق کا بیمار آج کل

    کیا جانیں کیا کرے گا وہ خونخوار آج کل
    رکھتا بہت ہے ہاتھ میں تلوار آج کل

    جو ہے سو آہ عشق کا بیمار ہے دلا
    پھیلا ہے بے طرح سے یہ آزار آج کل

    اُس دوست کے لئے ترے دشمن ہیں سینکڑوں
    اے دل! ٹک اک پہر تو خبردار آج کل

    یوسف کسی زمانے میں تھا خوب رُو ولے
    تجھ سا نظر پڑے نہ طرح دار آج کل

    ہم مفلسوں سے کیا کوئی دل کھول کر ملے
    سب کے تئیں عزیز ہے زردار آج کل

    کون اٹھ گیا ہے پاس سے کیا ہو گیا ہے جو
    پڑتی نہیں ہے تجھ کو دلِ زار آج کل

    وعدہ خلاف آ کے ملے گا بھی تُو کبھی
    کب تک سنا کریں تری ہر بار آج کل

    کیا ذکر ماہ و سال کا بہہ جائے دل جگر
    رونے سے تیرے دیدۂ خوں بار آج کل

    افسوس ہے کہ ہم تو تڑپتے ہیں دام میں
    اور کھِل رہا ہے کیا گل و گلزار آج کل

    آنکھوں میں اشک، جان بہ لب، سینہ چاک ہے
    جرأت کہیں ہوا ہے گرفتار آج کل

    (شیخ قلندر بخش جرأت)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت خوب انتخاب ہے فرخ بھائی۔

    خوش رہیے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ احمد بھائی! سلامت رہیے!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. ماظق

    ماظق محفلین

    مراسلے:
    324
    جھنڈا:
    Pakistan
    بہت عمدہ انتخاب ہے فرخ بھائی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,826
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ ماظق بھائی!
     

اس صفحے کی تشہیر