علموں بس کریں او یار

راحیل فاروق نے 'لطائف' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 20, 2016

  1. راحیل فاروق

    راحیل فاروق محفلین

    مراسلے:
    1,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    محکمۂِ تعلیم کے ایک افسر سکول کے معائنے کو گئے۔ ایک جماعت میں انھوں نے تختۂِ سیاہ پر لفظ Nature لکھا اور ایک بچے سے پوچھا، "بیٹا! یہ کیا لکھا ہے؟"
    بچہ کچھ دیر لفظ کو گھورتا رہا۔ پھر بولا:
    "نٹورے۔"
    افسر گھبرا گئے۔ بولے:
    "ہائیں؟ کیا لکھا ہے؟"
    بچہ متانت سے بولا:
    "نٹورے لکھا ہے، سر!"
    افسر کے تن بدن میں آگ لگ گئی۔ انھوں نے کڑک کر استانی سے کہا:
    "یہ سکھایا ہے آپ نے بچوں کو؟ نیچر پڑھنا نہیں آتا انھیں؟ بڑے ہو کر کیا کریں گے یہ؟"
    استانی جی گھبرا کے بولیں:
    "سر، آپ پریشان نہ ہوں۔ ابھی بچہ ہے۔ آہستہ آہستہ مٹورے (Mature) ہو جائے گا۔"
    افسر نے استانی جی کو ساتھ لیا اور پرنسپل کے دفتر پہنچ گئے۔ پرنسپل نے نہایت تحمل سے ساری بات سنی۔ پھر گرج کر استانی جی سے فرمایا:
    "آخر آپ بچوں کا فٹورے (Future) خراب کرنے پر کیوں تلی ہوئی ہیں؟"
     
    • پر مزاح پر مزاح × 13
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. نور وجدان

    نور وجدان مدیر

    مراسلے:
    6,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    یہ لطیفہ گو کہ سنا ہوا تھا مگر لطف دو بالا ہوگیا دوبارہ پڑھ کے
     
    • متفق متفق × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,568
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    کسی زمانے میں، کم و بیش ساڑھے تین چار دہائیاں پہلے، والد صاحب مرحوم اس کا پنجابی ورژن سنایا کرتے تھے۔

    ایک انسپکڑ ایک اسکول دورے پر آیا، بچے سے کہا پڑھو، اُس نے "چونکہ" کو "چوَن کے" پڑھا، ماسٹر سے شکایت کی اُس نے کہا میں نے تو کئی بار بتایا ہے کہ یہ لفظ "چَون کا" ہے، بچہ ہی جاہل ہے۔ ہیڈ ماسٹر سے شکایت کی اُس نے کہا، ان اُلو کے پٹھوں کو "چُو نکّا" پڑھنا بھی نہیں آتا :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر