علامہ انور صابری صاحب کی ایک غزل

فارقلیط رحمانی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 11, 2013

  1. فارقلیط رحمانی

    فارقلیط رحمانی لائبریرین

    مراسلے:
    1,935
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Festive
    لب پہ کانٹوں کے ہے فریادو فغاں تیرے بعد
    کوئی آیا ہی نہیں آبلہ پا تیرے بعد
    اب نہ وہ رنگِ جبیں ہے نہ بہارِ عارض
    لالہ رویوں کا عجب حال ہوا تیرے بعد
    چند سوکھے ہوئے پتے ہیں چمن میں رقصاں
    ہائے بے گانگئ آب وہواتیرے بعد
    منہ دھلاتی نہیں غنچوں کا عروس شبنم
    گرد آلود ہے کلیوں کی قبا تیرے بعد
    آدمیت شکنی بھی تو نہیں کم انور
    ڈر ہے کچھ اور نہو اس سے سوا تیرے بعد
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,421
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    بہت خوب انتخاب
     
  3. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,704
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    بہت خوب ۔۔
     
  4. کاشف اختر

    کاشف اختر لائبریرین

    مراسلے:
    718
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Goofy
    بہت خوب فارقلیط صاحب ! حق مغفرت کرے عجب آزاد مرد تھا ،شنید ہے کہ علامہ بڑے لحیم شحیم اور لمبے قد کے تھے ، لمبا کرتا اور خوب چوڑا سا پاجامہ پہنتے تھے ، لوگوں پر ان کے رعب و جلال کا عجیب عالم تھا ، مستزاد یہ کہ ایک ایک مہینے تک غسل نہ فرمانے کے باعث چلتے پھرتے آثار قدیمہ معلوم ہوتے تھے ، جس مشاعرہ میں حاضر ہوتے سامعین کی توجہات کا مرکز بنے رہتے ، اور لابالی پن ایسا کہ غزل سنا کر اپنا لکھا ہوا کلام وہیں چھوڑ جاتے ، اس لئے کہتے ہیں کہ آپ کے کلام کا بہت سا حصہ ضائع ہوگیا ، ان کے بارے میں اور بھی عجیب و غریب واقعات ہم نے چشم دید گواہوں کی زبانی سن رکھے ہیں ، خیر ہماری قیام گاہ سے چند قدم کے فاصلے پر شیر شاہ سوری کی تعمیر کردہ سڑک والی مسجد میں علامہ کا مزار موجود ہے ، کتبے پر ایک شعر کندہ ہے جو ان کی شعری صداقت اور ایفائے عہد کی حسین یادگار بنا ہوا ہے ،


    حشر تک اب زباں نہ کھولیں گے
    تم پکارو گے ہم نہ بولیں گے
    واقعی انہوں نے حسب وعدہ اب تک لب کشائی نہیں کی ، اور خاک کی چادر اوڑھے کھلی چھت کے نیچے محو خواب ہیں۔
     

اس صفحے کی تشہیر