اقبال علامہ اقبال کی پنجاب سے متعلق شاعری

غدیر زھرا نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 28, 2015

  1. غدیر زھرا

    غدیر زھرا لائبریرین

    مراسلے:
    3,150
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    پنجاب کے پیر زادوں سے

    حاضر ہوا مَیں شیخِ مجّددؒ کی لحّد پر
    وہ خاک کہ ہے زیرِ فلک ہے مطلعِ انوار

    اس خاک کے ذرّوں سے ہیں شرمندہ ستارے
    اس خاک میں پوشیدہ ہے وہ صاحبِ اصرار

    گردن نہ جھکی جس کی جہانگیر کے آگے
    جس کے نفّسِ گرم سے ہے گرمیِ احرار

    وہ ہند میں سرمایہء ملّت کا نگہباں
    اللہ نے بروقت کیا جس کو خبردار

    کی عرض یہ مَیں نے کہ عطا فقر ہو مجھ کو
    آنکھیں میری بینا ہیں، ولیکن نہیں بیدار!

    آئی یہ صدا سلسلہء فقر ہُوا بند!
    ہیں اہلِ نظر کِشورِ پنجاب سے بیزار

    عارف کا ٹھکانہ نہیں وہ خِطَّہ کہ جس میں
    پیدا کُلَہِ فقر سے ہو طُرّہء دستار

    باقی کُلَہِ فقر سے تھا ولولہء حق
    طُروں نے چڑھایا نشہء خدمتِ سرکار!

    (علامہ اقبال)
    بالِ جبریل

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    پنجاب کے دہقان سے

    بتا کیا تری زندگی کا ہے راز
    ہزاروں برس سے ہے تُو خاک باز

    اسی خاک میں دَب گئی تیری آگ
    سحّر کی اذاں ہو گئی، اب تو جاگ!

    زمیں میں ہے گو خاکیوں کی برات
    نہیں اِس اندھیرے میں آبِ حیات

    زمانے میں جھُوٹا ہے اِس کا نِگیں
    جو اپنی خودی کو پرکھتا نہیں!

    بتانِ شعوب و قبائل کو توڑ
    رسُومِ کُہَن کے سلاسل کو توڑ

    یہی دینِ محکم، یہی فتحِ باب
    کہ دنیا میں توحید ہو بے حجاب

    بخاکِ بدن دانہء دِل فشاں
    کہ ایں دانہ دارد ز حاصِل نشاں

    (علامہ اقبال)
    بالِ جبریل

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    پنجابی مسلمان

    مذہب میں بہت تازہ پسند اِس کی طبیعت
    کر لے کہیں منزل تو گُزرتا ہے بہت جلد

    تحقیق کی بازی ہو تو شرکت نہیں کرتا!
    ہو کھیل مریدی کا تو ہَرتا ہے بہت جلد

    تاویل کا پھندہ کوئی صیاد لگا دے
    یہ شاخِ نشیمن سے اُترتا ہے بہت جلد

    (علامہ اقبال)
    ضربِ کلیم

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2

اس صفحے کی تشہیر