طلسم ہوشربا صفحہ 141 تا 160

فہیم نے 'داستان' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 5, 2007

  1. فہیم

    فہیم لائبریرین

    مراسلے:
    33,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Sleepy
    میں خبر عرض کی۔ وہاں قران موجود تھا۔ اس لیے کہ عمرو جب سے گیا ہے۔ یہ بارگاہ میں بہت رہتا ہے۔
    الحاصل قران مہ برق علیحدہ گیا ور کہا: "اے برق تم چھپ رہو، وہ چھپ رہا۔ قران دوڑ کر لشکر حریف میں گیا دیکھا ایک بڑھیا بھیک مانگتی ہے۔ اس کو اس نے الگ لایا اور کہا: "میرے ساتھ چل میں تجھ کو بہت سا مال دوں گا وہ ضعیفہ اس کے ساتھ گئی۔ درہ کوہ میں قران نے اس کو بیہوش کرکے روغن و روغن لگا کر برق کی صورت بنایا اور ہوشیار کرکے بہت سا مال و زر و گوہر دیا اور کہا: تم چل کر بارگاہ میں بیٹھو جو کوئی پوچھے کہنا میں برق ہوں۔ اس کہنے سے میں تم کو بہت سا مال دوں گا اور جو کوئی تم کو پکڑے جائے گا، وہ بھی بہت کچھ دے گا اور اگر میرے کہنے کئے خالف ہوگا تو جان تمہاری جاتی رہے گی۔"
    اس ضعیفہ نے جو مال وافر پایا اور آئندہ بھی ملنے کی امید پائی۔
    پس گویا ہوئی کہ جو آپ نے کہا ہے اس سے بڑھ کر میں کہوں گی۔"
    غرض اس کو بہت کچھ سمجھا کر قران بارگاہ میں لے آیا اور مقامِ برق پر بٹھا کر خود چلا گیا اور اہلِ بارگاہ سے کہا گیا جو کوئی برق کو پکڑنے آئے تو پکڑے جانےدینا اور تم کچھ نہ بولنا۔"
    فی الجملہ یہ تو چلا گیا اور بعد کچھ دیر عذرا بارگاہ میں آکر اترا اور پکارا: " کہاں ہے وہ ناعیار برق۔"
    وہ ضعیفہ پکاری: " میرا نام برق ہے۔"
    ازبسکہ حلیے عیاروں کے تمام طلسم میں ہیں۔ سب ساحر پہنچاتے ہیں۔ اس نے برق کہ جو بصورت اصل پایا تصویر دیکھنے کی ضرورت نہ سمجھی۔ کیونکہ اگر کسی اور کی صورت برق نے بنائی ہوتی تو یہ تصویر دیکھتا۔ بس اس بڑھیا کو برق بنا ہوا دیکھ کر پنجہ کمر میں دے کر اڑا اور یہاں لشکر میں غل ہوا کہ لیے جاتکا ہے مگر حسب ہدایت قران کسی نے مقابلہ نہیں کیا۔ یہ سیدھا بارگاہ حیرت میں آکر اترا اور کہا: میں لایا برق کو وہاں طولان بیٹھا تھا اور وہ نہایت برق سے جلا ہوا تھا۔ اس نے صورت دیکھتے ہی بغیر پوچھے ایک تلوار ایسی لگائی کہ نقلی برق کا سر کٹ گیا۔ لاش اس نے کچھوار کو گورے پر ڈلوادی اور سر بارگاہ کے دروازوں پر لٹکوادیا اور نہایت خوش ہوا کہ میں نے دشمن سے اپنا عوض لے لیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. فہیم

    فہیم لائبریرین

    مراسلے:
    33,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Sleepy
    قران عیار

    یہ خبر طائران سحر نے لشکر مہ رخ میں پہنچائی ہر ایک نے سنتے ہی اس خبر وحشت اثر کے پچھاڑ کھائی۔ گریبان چاک کیا۔ دامن ہر ایک کا جوش گریہ سے دامن سحاب بنا۔
    مہ رخ نے کہا: اس میں کوئی مہترانی نے عیاری کی ہے۔ کیونکہ وہ لڑنے کو منع کر گئے تھے۔ اب جزع فزع نہ کرو اور نظر بفضل کریم کارساز رکھو، تم اب شیر کی کھال پہنو اور بہ شکل ببر وہاں بن کر تیار ہو۔"
    برق حسب الارشاد و عمل میں لایا۔ یعنی شیر کی کھال پہن کر گھنڈیاں اس کی سینے تک لگا کر درست ہوا۔ اس کا بیان پہلی قسطوں میں ہم کرچکے ہیں کہ برق کے پاس سب جانوروں کے مثل گربہ و سگ و شیر وغیرہ کے رہتے ہیں اور اس کا جونر کی صورت بنتے ہیں بڑا ملکہ ہے چناچہ ایک بار کتا بن کر عمرو کو یہ پکڑ کر لے گیا تھا اور عمرو اس کو پہچان نہ سکا تھا۔
    غرضیکہ جب شیر بن کر تیار ہوا۔ قران نے صورت اپنی ایک ساحر کی ایسی بنائی اور مہیب صورت سیاہ فام کہ تین سر ایک شیر کا دوسرا اژدھے کا اور تیسرا خرس(ریچھ) کا بنایا۔ ہر سر میں سانپ لپٹے کہ وہ زبان نکالتے تھے، کئی ہاتھ بنائے کہ کسی میں منقل آتشیں لیے تھا، کسی میں ترسول اور کسی میں تھال برنجی تھا، جھولا بادلا نگار محلے میں ڈالے، دھوتی تمپبری باندھے تھا۔
    غرض یہ کہ اس شکل میں جب بن کر تیار ہوچکا، برق پر، جو بہ شکل شیر تھا سوار ہوا اور ایک نامہ شاہ طلسم کی جانب سے مہری لکھ کر اپنے پاس رکھا۔
    برق اس کو لیے ہوئے مورگاہ حیرت پر لایا۔ اس کو خبر ہوئی کہ ایک ساحر سوار شیر شہنشاہ کے پاس سے آیا ہے اس نے استقبال کرکے سامنے بلایا۔ قران نے سامنے آکر تسلیم کی وار نذر دی پھر نامہ پیش کیا۔ ملکہ حیرت نے پڑھا، لکھا تھا: "اے ملکہ!برق عیار مارا نہیں گیا، بلکہ ہم نے اس ساحر کے حوالے برق کو گرفتار کرکے دیا ہے۔ اب عذرا سے کہنا جو یہ ساحر کے اس کے بمو جب کام کرے۔"
    مکلکہ حیرت مضمون نامہ سے جب مطلع ہوئی۔ عذار سے کہا تم نے بھی دھوکا کھایا، شہنشاہ لکھتے ہیں کہ وہ برق نہ تھا جو مارا گیا۔"
    عذار نے کہا: "میں شہنشاہ کو تو جھوٹا نہیں کہہ سکتا لیکن میں بارگاہ میں حریف سے جاکر پکڑ لایا ہوں، کیونکہ کہوں میں دھوکا کھایا۔"
    یہ کلام سن کر نامہ دار نے کہا: تم دیکھو گے برق کو میں بلاؤں مجھ کو شہاہ نے اسے دے دیا ہے۔"
    یہ کہہ کر باہر آیا اور شیر کی کھال برق پر سے اتروا کر اپنے ساتھ اندر بارگاہ کے لایا۔
    ملکہ حیرت نے کہا: بھلا شہنشاہ کی بات کہیں جھوٹی ہوسکتی ہے۔
    غرض اب سب کو یقین ہوا کہ بیشک یہ نامہ دار فرستادہ شاہ جاوداں ہے۔ بس عذار نے کہا: "اور شہنشاہ نے لکھا ہے۔
    اس نے کہا: "وہ بات علیحدہ کہنے کی ہے۔ عذار اس کا ہاتھ پکڑ کر اپنے خیمے میں لے چلا۔ قضائے کار اثنائے راہ میں عیار صبا رفتار ملی اور اس نے قران کو پہچانا۔ صاف تو نہ سکی، مگر بطور کنایہ کے پکاری: "میاں صاحب ہمارا سلام ہے۔
    قران نے کہا: "کیوں دھگڑے(یار) کو یدکھا جی تو اچھا ہے۔
    ان کلمات کو سن کر عذار سمجھا کہ یہ عورت سمجھ کر اس عیارہ سے ہنس رہا ہے۔ یہ سمجھ کر اس کو لیے پانی اپنی بارگاہ میں گیا۔
    ادھر صبا رفتار نے جب دیکھا کہ میرا کنایہ عذار نہیں سمجھا۔ بس جدل چلی کہ جاکر ملکہ حیرت کو خبر کروں اور جاکر سامنے ملکہ کے عرض کیا: "حضور، نامہ دار نہیں ہے وہ قران عیار ہے، جو عذار کو لے گیا ہے جلد خبر لیجیے نہیں تو عذار مارا جائے گا۔
    حیرت نے کہا: "تو دیوانی ہے وہ شیر پر چڑھ کر آیا ہے اور نامہ مہری شہنشاہ کا لایا ہے کہیں عیار بھی شیر بن سکتے ہیں یا اپنے تین سر بناسکتے ہیں۔
    صبا رفتار نے کہا: "اس وقت اس شبہ میں نہ پڑھتے اور عیاری کے فن کی تفریح نہ فرمائیے جلد وہاں کی خبر منگوائیں ملکہ حیرت نے اس کے کہنے سے ایک ساحر جو حکم دیا: " حبا اور عذار کی خبر لا۔
    وہ تو ادھر چلا مگر جب تک یہ آئے۔ وہاں پہنچتے ہی قران نے کہا: "اے عذار میں تجھے قتل کرنے آیا ہوں۔
    اس نے کہا: "کیوں۔
    جواب دیا: " حکم حاکم دیکھو نا وہ کیا مارنے چلے آتے ہیں: "اس نے گھبراکر اس کے کہنے سے پھر کر دیکھا۔ قران نے چمک کر بغدہ مارا کہ سر پھٹ گیا اور تڑپ کر ہلاک ہوگیا۔ غل و شور اور تاریکی ہوگئی۔ قران و برق بھاگ کر لشکر سے نکل گئے اور ساحر فرستادہ حیرت جو آیا اس نے بھی ہنگامہ دیکھا پلٹ کر ملکہ کے پاس گیا اور کہا: "وہاں خاتمہ ہوگیا۔
    ملکہ حیرت کو بڑا رنج ہوا۔ لاش عذار کی اٹھوائی وار یہ زبردستی جو عیاروں کو دیکھی۔ طولان کا فرط خوب سے دم نکل گیا کہ واقعی ان عیاروں کے ہاتھ سے جان پچنا مشکل ہے۔
    ملکہ حیرت نامہ اس سب حال کا افراسیاب کو لکھا اور قران نے جاکر سب ماجرا مہ رخ سے بیان کیا اور برق کی گرفتاری سے ہر ایک رنجیدہ ہورہا تھا۔ اب اس کو دیکھ کر خوش ہورہا تھا۔
    الحاصل یہ سب تو اس کیفیت میں ہیں اور عمرو اور مخمور دریائے مروارید سے گزر کر سمت کو کب رواں ہیں۔ ان سب کو اسی حال میں رکھیے اور شمہ داستاں زلا زل قاف ثانی سلیمان امیر حمزہ صاحبقراں کے لشکر نصرت اثر کی سنیے۔
    سابقہ اقساط میں ذکر کیا گیا تھا پیکان کا کہ وہ لشکر لقا میں گیا تھا اور قتل ہوا تھا۔ اب اس کا بھائی اس کا یعنی سوفار جادو فرستادہ شاہ جاوداں نہ کرو فر تمام خدمت بقائے بد انجام میں پہنچا۔ اس کا استقبال شیطان درگاہ بختیارک نے کیا جب یہ اس مردود کے سمانے گیا سجدہ کیا اور دنگل پر بیٹھ کر رونے لگا اپنے بھائی کو یاد کرکے جان کھونے لگا۔ بختیارک بھی اس کے ساتھ گریہ کناں ہوا۔ یہاں تک یہ تو چپ بھی ہورہا مگر بختیارک چپ نہ ہوا۔
    اس نے خود کہا: "ملک جی آپ صبر کیجئے فضل خداوند سے اپنے بھائی کا بدلہ ان مبھی جیتا نہ چ ایک کو بھی جیتا نہ چھوڑوں گا۔
    بختیارک نے کہا: "میں جو تم سے زیاہد رویا تو سبب یہ ہے کہ دو آدمیوں کو رویا۔ ایک تو تمہارے بھائی کو اور دوسرا تمہیں، کیونکہ میں تم کو بھی مردہ جانتا ہوں۔ خدا نے ان بندوں کو قدرت ہی ایسی دی ہے کہ جو ان سے لڑتا ہے قتل ہی ہوتا ہے۔
    سوفار نے کہا: "میں بھی ملک جی وہ ساحر ہوں کہ دم بھر یں ادھر کی دنیا ادھر کردوں گا۔
    لقانے اس کا لاف گزاف سن کر کہا: " اے بندے مجھ کو غرور کسی کا پسند نہیں ہے۔ اسی وجہ سے جو آتا ہے مارا جاتا ہے۔ اس لیے کہ اس کو غرور ہوجاتا ہے کہ میں ایسا صاحب شوکت و زور ہوں۔ پس کہ مجھ کو ناپسند ہوتا ہے میں اس کو قتل کر ڈالتا ہوں۔
    سومار اپنے دل میں ڈرا اور کہا: "یا خداوند! مجھ سے خطا ہوئی معاف فرمائیے۔
    الحاصل اس نے تبہ کی اور ایک دن کسل راہ سے آسودہ ہوا۔
    دوسرے دن شام کے وقت سو ففا نے طبل بجنے کی درخواست کی۔ لقا نے حبس خواہش اس کے حکم دیا کوش جمشدی پر چوپ پر ہر کارے بارگاہ سلیمانی میں خبر لے کر گئے اور شہنشاہ گردوں سریہ چراغ لشکر اسلام سعد بن قباد کی خدمت میں پہنچ کر مراسم آداب شاہی بجا لائے اور عرض پیرا ہوئے: "آج لشکر لقا میں سوفار جادو طلسم سے آیا ہے اس نے طلب جنگ بجوایا ہے۔
    ہر کارے یہ عرض کرکے کنارے ہوئے اور شہنشاہ نے امیر کو حکم دیا ہے: "لشکر میں بھی فضل پروردگار سے کوس رزم چوپ پڑے۔
    امیر نے حسب الارشاد چالاک سے فرمایا: "جاؤ اور طبل جنگ بچاؤ۔
    چالاک نے نقارہ خوانی سکندری میں آکر طبل سکندر پر دوال دیا۔
    جہاں فانی میں غوغائے اقتلوا بھر گیا۔ شیر پیشہ گان جراب و نہنگام قلزم شجاعت ہجر آہن میں بہر شکار عدو غوطہ لگانے لگے۔ اسلحہ خانہ کھل گیا۔ ہتھیار پسند کیے جانے لگے۔ سخن ہائے مردانگی برلب شاد و بشاش سب کے جوہر تیغ نجم پہر کو آنکھیں دکھاتا تھا۔ محراب کمان میں بہر حفاظت ہر بہادر چلہ چڑھا تھا شمشیر جانستان کو دیکھ کر ترک فلک نے دانت نکلائے تھے نہ تو ثوابت تھے نہ سیارے تھے صبح ہوتے سب بھاگنے والے تھے۔ دشت کین کو خون سے رنگین و پر بہار کرنے کی تیاری تھی۔ اسی سے آب آہن کی آبیاری تھی۔ صدائے نقبائے خوش الحان زمزمہ ہزار بنی تھی۔ بلبلان گلستان شجاعت گلہائے زخم کی محبت نے قرار کئے۔ تھی کہاں تک لکھوں۔ رات بھر یہی ہنگامہ رہا۔
    صبح دم امیر کو رگیر مسجد کے پاس سے بعد فراغت طاعت آلہ و دولت آسمان پناہ ظل اللہ پہر آئے اور مع سرداروں کے بادشاہ کو قلب لشکر لے کر دار دشت مصارت ہوئے۔ اس طرف سے لقا فوج بیکراں مع سوفار بے ایمان داخل میدان ہوئے۔ صفیں جمعیں سقون چھڑکاؤ کرکے گرد کو بٹھایا۔ نقیبوں نے بہاروں کو مرنا یاد دلایا۔ دنیائے فانی کو باپائدار بتایا۔ لازم ہے کہ سرائے فانی کو ہچ و دبوج جان کر مرنے کو زندگی جاوید سمجھو اس کے معرکے کو مار لو نام کر لو۔ بڑی خوشی سے گردن پر تیغ کر دھار لو۔
    دلاور ان کلمات سے جوش شجاعت میں جھومنے لگے نقیب صفوف لشکر پر سناٹا چھایا ہوا دیکھ کر ہٹ گئے سوفار اژور سحر کو وسعلچچ میدان میں آکر للکارا: "ہے کوئی مرد میدان نبرد جو مجھ سے آکر مقابل ہو یا میں اس کو ہلاک کروں یا وہ میرا قاتل ہوا ادھر سے شہنشاہ عراق بادشاہ سے اجازت لے کر سامنے اس نابکار کے گیا اور پکارا: " لا ضربت میدان۔
    اس نے سحر پڑھ کر دستک دی۔ بروئے ہوا سناٹا ہوا اور سب نے دیکھا کہ ایک عقاب تیز چنگال ہمسر نسر طائر فلک اڑتا ہوا آیا اور شہنشاہ عراق کی کمر میں پنچہ ڈال کرلے اڑا ہر چند اس بہادر لنگر ارا مگر پشت مرکب پر قائم نہ رہا لٹکتا ہوا چلا گیا۔ بعد اس کے جانے کے پھر اس نے مبادر طلبی کی۔
    مندویل اصفہانی بادشاہ لشکر اسلام سے اجازت لے کر روبرو اس کے گیا اور طالب ضرب ہوا۔ اس نے پڑھ کر تالی بجائی وہی عقاب آیا اور اس کو بھی اٹھا لے گیا۔ اس طرح بیس پچیس سردار پنچہ عقاب میں گرفتار ہوئے۔
    اس وقت امیر نے عزم میدان جنگ گاہ فرمایا۔ مگر بختیارک نے جب لشکر اسلام کا پرا بندھا دیکھا۔ خیال کیا کہ شاید صاحبقران نکلیں گے۔ پس وہ اسم اعظم جانتے ہیں۔ سوفار مارا جائے گا۔ یہ سوچ کر اس نے طبل بازگشت بجوادیا۔ لشکر میدان قتال سے پھرا۔ امیر بھی رنجیدہ خاطر مراجعت پزیر ہوئے۔ ازبسکہ دن تمام نہ ہوا تھا اور امیر رنجیدہ خاطر بھی تھے۔ سرداروں نے لشکر خیمہ گاہ کی طرف بھیجے اور آپ باتوں میں لگا کر امیر کو صحرا کی طرف لائے اس جگہ دامن کوہ میں گلہائے خورد و کھلے تھے۔ دامن کوہ دامن گلچیں تھا یا ارژنگ چین تھا۔ ابر بہاری کا شامیانہ تھا۔ طاؤس زریں لباس کا رقص مستانہ تھا۔ سوائے سرد کشتی اے جان کے لیے ماومراد تھی۔ زمین وہاں کی شاید ان گل سے آباد تھی۔ آتش لالہ گل کا دھواں سحاب بناتھا۔ بجلی کا اس ابر میں کوند لب مسی آلود معشوق کا ہنسایا دلاتا تھا۔ طرفہ بہار تھی نسیم ہر سمت مشکبار تھی۔

    جابجا منتظم ہے باد بہار
    ہے وہ صحرا نمونہ گلزار
    برق سے ہے عیار تجلی طور
    سارا جنگل نور سے معمار
    گھر کے آیا ہے ابر دریا بار
    بھینی بھینی سی پڑی رہی ہے پھوہار
    قہقہ زن کسی طرف ہیں چکور
    کہیں کوئل کہیں پیپے کا شور
    گل خود رد پہ زور جوبن سے
    دامن دشت رشک گلشن ہے
    ڈھانک پھولا ہے بور آیا ہے
    لالہ کوہ رنگ لایا ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فہیم

    فہیم لائبریرین

    مراسلے:
    33,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Sleepy
    پس ایسے حرائے فرحت بخش میں پہنچ کر لندھور نے کہا: "یا امیر اس وقت لطف صیدا فگنی ہے۔
    امیر نے فرمایا: "بہتر۔
    لندھور نے ایماپا کر ملازموں کو حکم دیا: "سامان شکار حاضر کرو لوگ لشکر میں گئے اور حکم سنایا۔ اسی وقت قراول بہیلے جانوراں شکاری کو لے کر روانہ ہوئے۔ باز وار عقاب و شاہین کو لے کر چلے خیمہ و خرگاہ فرش شاہانہ سب روانہ ہوا۔ دم بھر میں جملہ سامان درست ہوگیا۔

    تھا وہ صید و شکار کا سامان
    سینکڑوں طاہران صید کناں
    وہ قراول بلا کے وہ صیاد
    فن صید و شکار ہیں استاد
    شہباز ایک ایک برق نظیر
    عازم صید طائر تقریر
    تیز پر وہ عقاب شاہین تھے
    صید مرغ گمان پر بین تھے
    وہ فلک میر ایک اک بحری
    قاتل صید بحری و بری
    جوڑیاں تازیوں کی برق شعار
    کوئی گلڈانک اور کوئی بو دار​

    خیمہ فلک فرسا دامن کوہ میں صحرائے سبزار دیکھ کر استادہ کرایا اور سب سردار شکار کھیلنے میں مصروف ہوئے۔ پھر تو یہ کیفیت تھی۔

    کئی صیاد خلق صید افگن
    صید گہ میں اڑاتے تھے تو سن
    زیب دوش ایک ایک کے وہ کمان
    جس پہ قوس قزح بھی قربان
    کوئی ناوک فگن کمان ابرو
    باندھا تھا نشانہ آہو
    محو صیاد تھا ہر اک نخچیر
    دنگ تھا مثل طائر تصویر​

    وہ بقیہ میں بسر ہوا۔ تمام سردار مع امیر اسی دشت میں مسکن گزین ہوئے اور شیر شب ماہ کرنے لگے ہر جگہ روشنی ہوئی۔ قندیلیں درختوں پر لٹکائیں۔ میدان میں چاندنیاں بچھوائیں۔ مشعل بادہ کشی میں سردار مصروف ہوئے امیر صنعت رنگا رنگ صائع حقیقی دیکھ کر حمد کرنے لگے ادھر تو یہ حال ہے اور اس طرف جب سونا۔ پھر گیا اس نے بختیارک سے کہا: "ابھی تو دن باقی تھا، تم نے طبل امان بجوادیا۔ اس نے جواب دیا۔: "امیر مالک باطل السحر ہے وہ تیرے مقابلے میں آنے والے تھے۔ ان کے ہاتھ سے بچنا دشوار تھا۔اس لحاظ سے میں پھر آیا۔
    سوفار نے کہا: "اگر یہ کیفیت ہے تو میں جاکر اسم اعظم بند کرتا ہوں۔
    بختیارک نے کہا: " وہاں جاؤ گے تو بارگاہ سلیمان میں سحر بھول جاؤ گے۔
    اب یہ حیران ہوا کہ کیا کروں۔ اس عرصہ میں ہر کاروں نے انوکھی کہ وہ میر مع سرداروں کے جنگ سے پھر کردار دشت ہوئے اور ہنور اس جگہ مصروف ہیرو تماشا ہیں۔
    پس یہ سنتے ہی سونار اٹھا اور سوار ہوکر جانب صحرا روانہ ہوا۔
    جب قریب خیام واجب الا کرام امیر پہنچا ایک ملازم و خدمت امیر میں بھیجا۔ اس نے روبرو آکر عرض کیا کہ مالک ہمارا سوان جادو حاضر ہوا ہے۔ امیدوار باریابی ہے۔
    امیر نے فرمایا: "میں فقیر آدمی ہوں جس کا جی چاہے آئے۔ یہ خانہ بے تکلف ہے۔
    یہ کہہ کر دو ایک سردار بہر استقبال بھیجے کہ وہ آکر اس کو لے گئے۔ جب سامنے پہنچا سلام کیا۔ امیر نے دنکل بیٹھنے کو دیا۔ پھر ساقی کو اشارہ کیا۔ اس نے جام شراب گلام اس کے سامنے کیا۔ سوفار میخواری کرنے لگا جب نشہ ہوا۔ اس وقت امیر نے پوچھا: "باعث تشریف لانے کا کیا ہے۔
    اس نے کہا: "میں آپ کو سمجھانے آیا ہوں کہ خداوند لقا کو سجدہ کیجئے اور سرکشی سے باز آئیے۔
    امیر یہ کلمہ سن کر آگ ہوگئے اور فرمایا کہ میں اس مردود درگاہ خدا پر ہزاروں بار لعنت کرتا ہوں اور تم اس وقت میرے مہمان عزیز نہ ہوتے تو زیان تیغ سے ان باتوں کا تم کو جواب دیتا۔
    سوفار نے یہ کلام سن کر جواب نہ دیا بلکہ اور باتیں کرنے لگا اور عین گفتگو میں اپنے جھولے سے ایک جانور سرخ رنگ کا نکال کر چھوڑا کہ وہ اڑ کر گرد امیر کے چکر مارکر پھر اس کے ہاتھ پر آگیا پس یہ اٹھا اور کہا: "یا امیر میں آپ کو فہماث کرنے آیا تھا۔ خیر آپ ہیں مانتے تو آپ جانئے غلام رخصت ہوتا ہے۔
    امیر نے پھر کچھ جواب نہ دیا۔ یہ چلا گیا اور اپنی بارگاہ میں پہنچ کر اگیار کرکے سحر پڑھنے لگا اور منتر سوئیوں پر دم کرکے اس جانور کے منہ ماریں۔ پھر اس کو ایک شیشے میں بند کرکے اپنے جھولے میں وہ شیشہ رکھا اور بارگاہ کی لقا کی طرف روانہ ہوا۔
    مگر جب امیر کے پاس سے وہ چلا آیا تو لندھور نے کہا: "یا امیر اس کافر کا آیا اور جانور اڑانا خالی از فساد نہیں، چہرہ پر نور آپ کا متغیر ہوتا ہے۔ اسم اعظم کو پڑھیے۔
    امیر نے چاہا کہ پڑھوں مگر ایک حرف بھی یاد نہ آیا فرمایا کہ بزور سحر اس مرتد نے اسم اعظم مجھ کو بھلایا ہے۔ خیر وہ مالک حقیقی قادر و توانا ہے۔ جو وہ چاہے گا۔ وہ ہی ہوگا۔
    سرداروں نے عرض کیا: "اب مناسب ہے حضور لشکر میں تشریف لے چلیں۔ اس لیے کہ بادشاہ جمضاہ وہاں اکیلے ہیں ایسا نہ ہو یہ کافر انہیں کچھ رنج پہنچائے۔
    امیر نے کہا: " چلو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر