سیدھا سادا سارا سودا

راحیل فاروق نے 'آپ کی تحریریں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 2, 2015

  1. راحیل فاروق

    راحیل فاروق محفلین

    مراسلے:
    1,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    میری عمر آٹھ برس ہو گی۔
    امی نے سب بہن بھائیوں کے پیسے میرے ہاتھ میں تھما دیے۔ بڑا بھائی ہونے کے ناتے میری ذمہ داری تھی کہ میں سب کو شاپنگ کراؤں۔
    جھومتے جھامتے باہر نکلے۔ تھوڑی دیر بجٹ پر بالغانہ بحث ہوئی۔ پھر سب آئسکریم کھانے پر متفق ہو گئے۔ تین کونز خریدی گئیں۔ میں نے سب سے پہلے اپنی کون چاٹ کر اس کے ملکیتی حقوق محفوظ کیے اور باقی دو دونوں بہنوں کے حوالے کر دیں۔
    ہمارا چھوٹا بھائی عدیل، جسے ہم دیلی بلاتے ہیں، یہ تمام غیر اخلاقی حرکات تمام تر جزئیات کے ساتھ اپنی شارٹ ٹرم میموری میں محفوظ کر رہا تھا۔ اس نے طبلِ جنگ بجا دیا۔ ایک دل دوز چیخ کے ساتھ اس نے چھینا چھپٹی کی کوشش کی مگر لسے دا کی زور محمد، نس جانا یا رونا۔ اس نے دھائیں دھائیں رونا شروع کر دیا۔ میں نے اسے بہتیرا سمجھایا کہ میاں اگر تمھیں دے دیتے تو ہم کیا کھاتے؟ مگر سفارتی تعلقات منقطع ہو چکے تھے۔
    بہنوں نے ہمارے برادرانہ معاملات میں دخل دینا مناسب نہیں سمجھا۔ وہ اپنی اپنی آئسکریم کے ساتھ محفوظ مقامات پر منتقل ہو گئیں۔ کوئی اور چارہ نہ دیکھا تو میں نے بھائی کو کون کا نچلا دھڑ پیش کیا۔ اس پر صدمے کا ایک اور دورہ پڑ گیا۔
    میں نے بھی جھگڑے پر لعنت بھیجی اور آرام سے آئسکریم کھانے لگا۔ بس اتنا ہی ہوتا ہے۔ اور کیا کر سکتا تھا میں؟ دیلی گلی میں بیٹھا روتا رہا۔
    میری آئسکریم ختم بھی نہ ہوئی تھی کہ ابو جان دیلی پر جھکے ہوئے نظر آئے۔ پھر وہ میری طرف بڑھے۔ میرے اوسان خطا ہو گئے۔ ایک آدھ تھپڑ پڑا۔ ڈھیر ساری ڈانٹ۔ اور پھر ان گناہگار آنکھوں نے دیلی کو دو کونز اکٹھی کھاتے بھی دیکھا۔
    اس کہانی کا دوسرا رخ ماں جی سے روایت ہے۔ امی بتاتی ہیں کہ جب نیچے گلی میں (ہم چھت پر رہتے تھے) ہمارا جھگڑا ہو رہا تھا تو ابو نماز پڑھ رہے تھے۔ دیلی کی چیخ سنائی دی تو ابو کو نجانے کیا ہو گیا۔ امی کو تب احساس ہوا جب انھوں نے ابو کو بار بار کھانستے ہوئے سنا۔ دوڑ کر پہنچیں تو ان کی آنکھوں میں آنسو تھے، گلے میں جیسے کچھ پھنسا ہوا تھا اور چہرہ متغیر تھا۔ پتا نہیں کیسے انھوں نے نماز مکمل کی اور دیوانہ وار دوڑ پڑے۔ امی کہتی رہ گئیں کہ آرام سے سیڑھیاں اتریں مگر ان کا دل زخمی تھا۔ کہاں رکتے تھے!
    مجھے یاد ہے دیلی کا ایک دفعہ ایکسیڈنٹ ہوا تھا۔ اس کی عمر اس وقت کوئی چودہ پندرہ سال ہو گی۔ لیکن تب تک تگڑا جوان ہو گیا تھا۔ موٹر سائیکل رکشا سے ٹکرا گئی تھی۔ دیلی کے پاؤں پر چوٹ آئی۔ ابو ایک نہایت قابل ہومیوپیتھ تھے مگر ایمرجنسی کی صورت میں ایلوپیتھس کو ترجیح دیتے تھے۔ اسے لے کر ہسپتال گئے۔ ڈاکٹر صاحب مرہم پٹی کر رہے تھے کہ ابو کی آنکھوں کے آگے اندھیرا چھا گیا۔ بیٹے کا خون نہ دیکھا گیا۔ ڈاکٹر صاحب ابو کے دوست تھے۔ لیکن یہ رنگ شاید انھوں نے پہلی بار دیکھا تھا۔
    صاحبو، دیلی ہم سب میں بھولا تھا۔ اور شاید اب تک ہے۔ ابو اسے لوٹا کہ کر بلاتے تھے۔ طرح طرح کے نام رکھتے تھے۔ گالیاں دیتے تھے۔ چھیڑتے تھے۔ بات بات پہ پٹائی کرتے تھے۔ یہ سب ہمارے ساتھ نہیں ہوتا تھا۔ کیونکہ ہم مذاق سمجھ سکتے تھے۔ کب ابو غصے میں ہیں اور کب مذاق کر رہے ہیں ہمیں زیادہ تر پتا ہوتا تھا۔ لیکن دیلی؟
    وہ اتنا سادہ تھا کہ ایک دفعہ ابو مجھے کسی بات پر برا بھلا کہ رہے تھے۔ دیلی نے ابو کی غضب ناک آواز سنی تو ہانپتا کانپتا آیا اور بولا:
    "ابو، میں؟"
    ابو قربان نہ ہو گئے ہوں گے اس پر؟
    میرے سسر بڑے آدمی ہیں۔ فرماتے ہیں کہ خدا کے سامنے معصوم ہو جاؤ۔ اس سے چالاکی نہ کرو۔ اسے بھولے بھالے اسی طرح پسند ہیں جس طرح والدین کو ہوتے ہیں۔ اور چالاکوں کو وہ ان کے حال پر چھوڑ دیتا ہے۔
    بات بھی سچ ہے۔ ماں باپ ذہین بچوں کی قدر کرتے ہیں۔ ان کی تعلیم پر خرچ کرتے ہیں۔ زمانے کے سامنے ان پر فخر کرتے ہیں۔ ان سے امیدیں وابستہ رکھتے ہیں۔ لیکن ایک طرح کی بے فکری بھی ہوتی ہے۔ کہ یہ سمجھدار ہیں۔ اپنا رستہ خود بنا لیں گے۔ جان جن میں اٹکی ہوتی ہے وہ تو معصوم ہوتے ہیں۔ انھیں تو بات کرنی نہیں آتی۔ وہ تو صرف حماقتیں کرتے ہیں۔
    سمجھ دار بچے کچھ کرتے پھریں، ماں باپ مطمئن ہوتے ہیں کہ انھیں کچھ نہیں ہوتا۔ یہ کر لیں گے۔ گر گئے تو کھڑے بھی ہو جائیں گے۔ لیکن کسی بھولے بھالے کے قدم ذرا لڑکھڑائیں تو دنیا اندھیر ہو جاتی ہے۔ پاگلوں کی طرح دوڑ پڑتے ہیں۔ کیا ہوا میرے بیٹے کو؟ کوئی چوٹ تو نہیں آئی؟ کیا چاہیے؟ ہائے میری جان۔ میں واری۔ ماں صدقے!
    صاحبو، پتا ہوتا ہے کہ یہ خود نہیں سنبھل سکتے۔ سنبھلنا چاہیں بھی تو نہیں سنبھل سکتے۔ انھوں نے سب کچھ ہم پر چھوڑ رکھا ہے۔ ہم نہ آئیں گے تو یہ نہ اٹھ سکیں گے۔ پڑے رہیں گے روتے۔
    رسولِ پاکﷺ فرماتے ہیں کہ جوتے کا تسمہ بھی ٹوٹ جائے تو خدا سے مانگو۔ اب ظاہر ہے یہ سمجھ دار بندوں کا تو کام نہیں۔ وہ تو خود بندوبست کر سکتے ہیں۔ اپنے پہ بھروسا رکھتے ہیں۔ خدا انھیں چھوڑتا بھی ان کے حال پہ ہے۔ جاؤ، لے لو۔ میں کہاں سے دوں؟ لیکن ایسے بھی تو ہیں جو واقعی تسمے تک کے لیے اس کے محتاج ہیں۔ روتے رہتے ہیں۔ گڑگڑاتے رہتے ہیں۔ وہ دے دے تو بچوں کی طرح خوش ہو جاتے ہیں۔ ورنہ لگے رہتے ہیں۔

    ماخذ: دل دریا
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 2, 2015
    • زبردست زبردست × 16
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  2. آوازِ دوست

    آوازِ دوست محفلین

    مراسلے:
    1,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    عقل ہے محوِ تماشائے لبِ بام ابھی :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  3. ابن رضا

    ابن رضا لائبریرین

    مراسلے:
    4,255
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بہت نفیس پیرائے میں انمول نصیحت کے لیے شکریہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  4. سلمان حمید

    سلمان حمید محفلین

    مراسلے:
    1,269
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Breezy
    بہت خوب :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  5. ادب دوست

    ادب دوست معطل

    مراسلے:
    3,429
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    لاجواب ، راحیل بھائی ، بہت ہی خوب
    بہت ہی خوبصورت موضوع ، اور اس سے بھی خوبصورت اندازِ تحریر
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. نوشاب

    نوشاب محفلین

    مراسلے:
    754
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    بہت خوب
    اسے کہتے ہیں کوزے میں دریا بند کرنا
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. ادب دوست

    ادب دوست معطل

    مراسلے:
    3,429
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    یہ دیکھ لیں ٹائپو ہے ، کہہ
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. فاروق احمد بھٹی

    فاروق احمد بھٹی محفلین

    مراسلے:
    2,423
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    دل دریا سمندروں ڈونگے کون دلاں دیا جانے ھو۔۔۔
    بہت خوبصورت تحریر
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    14,554
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    بہت خوبصورت تحریر۔ ایک پیارا سا نکتہ بتانے کے لئے۔۔۔جزاک اللہ!
    لیکن کچھ تشنگی سی ہے۔۔۔یا پھر مجھے محسوس ہو رہی ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  10. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,165
    بہت ہی خوبصورت تحریر! :) :) :)
    ویسے لگے ہاتھوں تین سو مراسلوں کی مبارکباد بھی قبول فرما لیں۔ :) :) :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. تجمل حسین

    تجمل حسین محفلین

    مراسلے:
    2,236
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    زبردست اور معلوماتی تحریر راحیل فاروق بھائی!

    اف۔۔۔۔۔
    3 سال 8 ماہ اور 23 دن میں صرف 300 مراسلے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. نور وجدان

    نور وجدان مدیر

    مراسلے:
    6,367
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    تحریر تو بُلاشبہ انمول ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ آپ نے تخییل کی انتقالی کا ڈھنگ بہت اچھا اپنایا ہے ۔ ماشاءاللہ آپ کی شاعری تو لاجواب ہوتی ہے ۔ مگر نثر بھی کمال ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. یوسف سلطان

    یوسف سلطان محفلین

    مراسلے:
    3,631
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    راحیل فاروق بھائی بہت خوبصورت تحریر اور سبق آموز بھی ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. راحیل فاروق

    راحیل فاروق محفلین

    مراسلے:
    1,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    لکھنا وکھنا تو کیا، پیارے لوگو۔ لیکن اللہ جانتا ہے آپ لوگوں کی طرف سے یہ پیار بھرے جملے پڑھ کر غالبؔ والا رشک آتا ہے خود پر!
    عقل کی خوش قسمتی ہے۔ ہمیں تو منڈیر سے کوئی کوا تک نہیں اڑانے دیتا۔ تانک جھانک تو ایک طرف رہی!
    ہائیں؟ تو ہم ناصح ہو گئے کیا؟ روز آ جاتا ہے، سمجھاتا ہے، یوں ہے، یوں ہے والا ناصح؟ خدا نکردہ!
    آپ کی محبت کا ممنون ہوں۔
    بہت شکریہ۔
    شکرگزار ہوں، بھائی۔
    نوازش۔ یعنی اب ہماری تحریر کی بدولت مچھیرے روزی روٹی کے لیے سقوں کے پیچھے پیچھے ہوا کریں گے؟
    یہ اس زمانے کی تحریر ہے، بھائی، جب فقیر اردو املا کے سلسلے میں کچھ انتہا پسند اکابر کے ہاتھ پر بیعت تھا۔ اب تو کہہ ہی لکھتا ہوں عوام کی طرح۔
    جزاک اللہ!
    بہت شکریہ، آپی۔ تشنگی ہو سکتی ہے۔ ہم کون سے بحر الفصاحت ہیں۔ اگر واضح کر دیں تو شاید کوئی راہ نکالوں۔
    ویسے میں آپ کو آپی کہہ کے پکارتا ہوں۔ اگر آپ کی عمر مجھ سے کم ہے تو برداشت کر کے ثوابِ دارین حاصل کریں۔ اگر زیادہ ہے تو ہر نماز کے بعد میرے لیے بھی دعا کیا کریں!
    شکریہ، محبی!
    لگے ہاتھوں کی بجائے رنگے ہاتھوں کہنا چاہیے۔ تحقیق بتاتی ہے کہ اس سے موگیمبو خوش ہوتا ہے۔
    عنایت، برادرم۔
    اور بھی دکھ ہیں زمانے میں۔۔۔
    میرا گمان ہے کہ آپ نے میری ستائش فرمائی ہے۔ اس حسنِ ظن کو بنیاد بنا کر میں آپ کا بےطرح شکرگزار ہوں۔
    تخییل کی انتقالی کا جہاں تک تعلق ہے تو یقین جانیے کہ یہ اتفاقاً ہی سرزد ہو گئی یا ہو گیا۔ فقیر کا ایسا قصد حاشا و کلا نہ تھا، نہ ہے، نہ ہو گا۔
    پیارے بھائی کا بہت شکریہ!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 4
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    14,554
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    "میں کہاں سے دوں؟"
    اللہ کے حوالے سے یہ کچھ صحیح نہیں لگ رہا۔
    واقعی عقلمند اللہ کی بجائے خود پہ بھروسہ کیے کام کرتے ہیں اور جب ناکام ہونے لگتے ہیں تو پھر اللہ کی طرف رجوع کرتے ہیں۔
    اور سادہ لوگوں سے متعلق۔۔۔۔۔اشفاق صاحب کا ایک واقعہ۔۔۔۔قبرستان میں ایک تروتازہ قبر دیکھ کے گورکن سے دریافت۔۔۔۔۔کتنے سال پہلے کی قبر اور اس خوبصورت حالت میں۔۔۔۔۔گاؤں میں مرحوم بابے کی بوڑھی بیوہ سے پوچھا کہ ایسا کیا کام کرتے تھے کہ یہ مقام ملا؟؟؟؟؟ پتہ چلا کہ سادہ تھے۔ کم ذہن۔قرآن پاک پڑھنے کے بے حد شوقین۔۔۔۔مولوی نے کئی سال سر کھپا کے جواب دے دیا تو خود ہی گھر پہ قرآنِ پاک کے صفحوں پہ انگلی پھیرتے"اللہ سائیں تُوں کِنّاں چنگاں ایں""اللہ سائیں تُوں کِنّاں سوہنڑاں ایں""اے تُوں جولکھیا اے اے وی بالکل ٹھیک اے۔۔۔اے تُو جو آکھیا اے ایہہ وی بالکل ٹھیک آکھیا اے۔۔۔۔۔۔۔"
    شاید تحریر نے اثر اتنا کیا ہے کی ایک اداسی سی ،تشنگی سی محسوس ہو رہی ہے۔۔۔۔۔۔
    اِس سے کیا فرق پڑتا ہے۔آپ ضرور آپی کہیں،خالہ کہیں،بہنا کہیں۔۔۔۔۔۔:)اور دعا۔۔۔۔چھوٹے بھائی!کیوں نہیں۔۔۔ضرور۔اللہ آپ کو بے حد و حساب آسانیاں، دنیا و آخرت کی خوشیاں اور کامیابیاں عطا کرے۔ آپ کا دِل آپ کے گھر والوں سے ٹھنڈا رکھے۔ایمان کی دولت دے۔ صراطِ مستقیم پہ ہمیشہ قائم رکھے۔ آمین!
     
    • زبردست زبردست × 5
  16. ادب دوست

    ادب دوست معطل

    مراسلے:
    3,429
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ویسے تو میں عمر کے اُس حصے میں ہوں کہ کسی کو آپا خالہ کہتے ہوئے ضمیر ملامت کرتا ہے
    مگر ان دعاوں نے وہ اثر کیا کہ
    میں جھک کے دیکھتا ہوں جوانی کیدھر گئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  17. راحیل فاروق

    راحیل فاروق محفلین

    مراسلے:
    1,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    اب میرا ضمیر ملامت کر رہا ہے کہ میں آپ کو بھائی بھائی کہتا رہا۔ اس کا کیا علاج ہے؟
    یہی دعائیں لینے کے لیے تو لوگ جاسمن آپا کا پاؤچ چھین کے بھاگ جاتے ہیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 5
  18. ادب دوست

    ادب دوست معطل

    مراسلے:
    3,429
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    آپ کی تصویر کا تاثر ایسا ہے کہ اگر آپ مجھے انکل بھی کہہ دیں تو یقین کیجیئے برا نہیں لگے گا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. اوشو

    اوشو لائبریرین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Drunk
    عمدہ تحریر جناب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  20. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    اچھی تحریر ہے۔ ہمارا چھوٹا بھائی بھی بچپن میں ایسا ہی تھا، سیدھا سادھا معصوم۔ اب تو ماشاءاللہ سے افواج میں بھرتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر