ناز خیالوی ""سرِ میدانِ کربل لاشئہ شبیر کے ٹکڑے"" نازؔ خیالوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 13, 2017

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,112
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    سرِ میدانِ کربل لاشئہ شبیر کے ٹکڑے
    جو دیکھے تو ہوئے کیا کیا دلِ ہمشیر کے ٹکڑے

    رُلایا ہے لہو مختار نے مجبور کو اکثر
    کیے ہیں بارہا تقدیر نے تدبیر کے ٹکڑے

    وہاں ملتی نہیں اب نام کو بھی کوئی رنگینی
    کبھی جنت نشاں تھے وادئ کشمیر کے ٹکڑے

    ذرا کچھ زلزلہ آیا غمِ حالات کا دل میں
    ہوئے دیوار سے گِر کر تِری تصویر کے ٹکڑے

    کیے ہیں کتنی بیدردی سے کچھ سفّاک لوگوں نے
    قلندر کے مقدس خواب کی تعبیر کے ٹکڑے
    نازؔ خیالوی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر