حفیظ ہوشیارپوری :::: راز سربستہ محبّت کے، زباں تک پہنچے -- Hafeez Hoshiarpuri

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 30, 2013

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,620
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    غزلِ

    حفیظ ہوشیار پوری

    راز سربستہ محبّت کے، زباں تک پہنچے
    بات بڑھ کر یہ خُدا جانے کہاں تک پہنچے

    کیا تصرّف ہے تِرے حُسن کا، اللہ الله
    جلوے آنکھوں سے، اُترکردِل وجاں تک پہنچے

    تیری منزل پہ پہنچنا کوئی آسان نہ تھا
    سرحدِ عقل سے گزُرے تو یہاں تک پنچے

    حیرتِ عشق مِری، حُسن کا آئینہ ہے
    دیکھنے والے کہاں سے ہیں کہاں تک پہنچے

    کُھل گیا آج، نِگاہیں ہیں نِگاہیں اپنی !
    جلوے ہی جلوے نظر آئے جہاں تک پہنچے

    حفیظ ہوشیار پوری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر