دل کی لگی اسی سے بجھالیں گے شام میں - خلیل الرحمٰن اعظمی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 13, 2016

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (خلیل الرحمٰن اعظمی)
    دل کی لگی اسی سے بجھالیں گے شام میں
    اک بوند رہ گئی ہے ابھی اپنے جام میں

    ہم پر پڑا ہے وقت مگر اے نگاہِ یار
    کوئی کمی نہ ہوگی ترے احترام میں

    ہر سمت آتی جاتی صداؤں کے سلسلے
    ہم خود کو ڈھونڈتے ہیں اسی اژدہام میں

    چلنے کو ساتھ ساتھ ہمارے سبھی چلے
    ہاں پھر اُلجھ کے رہ گئے سب اپنے دام میں

    ہم کیا بتائیں اپنے حریفوں کا حالِ زار
    صورت بگڑ گئی ہوسِ انتقام میں

    پی کر ہمارے دل کا لہو واعظانِ شہر
    اب منہمک ہیں بحثِ حلال و حرام میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,382
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت خوب کاشفی بھائی!

    اچھی غزل ہے۔
     
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر