دل وہ پیاسا ہے کہ دریا کا تماشا دیکھے (اختر امام رضوی)

نیرنگ خیال نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 29, 2017

  1. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    17,935
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    دل وہ پیاسا ہے کہ دریا کا تماشا دیکھے
    اور پھر لہر نہ دیکھے کف دریا دیکھے

    میں ہر اک حال میں تھا گردش دوراں کا امیں
    جس نے دنیا نہیں دیکھی مرا چہرہ دیکھے

    اب بھی آتی ہے تری یاد پہ اس کرب کے ساتھ
    ٹوٹتی نیند میں جیسے کوئی سپنا دیکھے

    رنگ کی آنچ میں جلتا ہوا خوشبو کا بدن
    آنکھ اس پھول کی تصویر میں کیا کیا دیکھے

    کوئی چوٹی نہیں اب تو مرے قد سے آگے
    یہ زمانہ تو ابھی اور بھی اونچا دیکھے

    پھر وہی دھند میں لپٹا ہوا پیکر ہوگا
    کون بے کار میں اٹھتا ہوا پردہ دیکھے

    ایک احساس ندامت سے لرز اٹھتا ہوں
    جب رم موج مری وسعت صحرا دیکھے

    اختر امام رضوی​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 2
  2. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,184
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    15,595
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    اِس شعر کے پہلے مصرع میں "پہ" کی جگہ "پر" ہونا چاہیے
    اب بھی آتی ہے تری یاد پر اس کرب کے ساتھ
    ٹوٹتی نیند میں جیسے کوئی سپنا دیکھے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    17,935
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    حکم سر۔۔۔ کیا ہوا اس شعر کو۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    17,935
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    ایسا ہی ہوگا مرشد۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر