مصطفیٰ زیدی دلِ رُسوا ۔ مصطفیٰ زیدی

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 2, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,867
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    دلِ رُسوا

    وہی اک ہمدمِ دیرینہ رہا اپنا رفیق
    جس کو ہم سوختہ تن، آبلہ پا کہتے تھے
    جس کو اغیار سے حاصل ہوئی فقروں کی صلیب
    شہر کے کتنے ہی کوچوں سے اٹھا اس کا جلوس
    کتنے اخباروں نے تصویر اتاری اس کی
    اس کے درشن سے بنا کوئی رشی، کوئی ادیب
    اگلے وقتوں سے یہی رسم چلی آتی ہے
    ہم نے چاہا تھا کہ دنیا کا مقدر بن جائے
    خود ہمیں ہو گئے برباد تو یہ اپنے نصیب


    (مصطفیٰ زیدی)​
     

اس صفحے کی تشہیر