"خودی" اور "میں" کا فرق ۔۔۔

الشفاء نے 'آپ کی تحریریں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 9, 2013

  1. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    خودی اور "میں" کا فرق

    کچھ عرصہ پہلے کسی صاحب سے "میں" کو ختم کرنے کے متعلق بات ہو رہی تھی کہ سارے جھگڑے اسی "میں" کے پیدا کئے ہوئے ہیں کہ

    ہم کو بھی میں نے مارا
    تم کو بھی میں نے مارا
    ہم سب کو میں نے مارا
    اس "میں" کو مار ڈالو۔
    لیکن اسی دوران ڈاکٹر محمد اقبال رحمۃ اللہ علیہ کے اس مصرعے نے توجہ اپنی طرف کھینچ لی کہ



    "خودی" کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے۔۔۔

    نکتہ واقعی بڑا دلچسپ تھا کہ جب "میں" کو مار دیں گے تو پھر "خودی" کا کیا ہو گا۔۔۔
    دراصل کنفیوزن یہ ہے کہ ہم خودی کو میں سے گڈ مڈ کر دیتے ہیں۔۔۔ اس لئے پہلے ہم میں کا مطلب سمجھنے کی کوشش کرتے ہیں کہ ،میں کیا ہے۔ اور چونکہ اشیاء اپنی ضد سے پہچانی جاتی ہیں تو اسی میں کی پہچان سے خودی کی پہچان بھی ہو جائے گی۔۔۔ ان شاءاللہ عزوجل۔۔۔
    وہ "میں" جس کو مارنے کا کہا جاتا ہے اس کا دوسرا نام انا ہے۔ جس کو انگریزی میں ایگو کہتے ہیں۔ اور عربی میں بھی جب اپنی ذات کی طرف اشارہ کرنا مقصود ہو تو انا کا لفظ ہی استعمال ہوتا ہے۔ یعنی میں۔۔۔ بذات خود۔۔۔
    قرآن مجید میں سے اس کی کچھ مثالیں لیتے ہیں۔۔۔۔

    اللہ سبحانہ وتعالٰی نے قرآن مجید میں اپنے لئے زیادہ تر ہم کا صیغہ استعمال فرمایا ہے۔ کہ شہنشاہوں کے یہی انداز ہوتے ہیں۔۔۔ اور وہ جو سب شہنشاہوں کا شہنشاہ ہے، اور سب بادشاہوں کا بادشاہ ہے۔ جو جل جلالہ ہے اور لا شریک لہ کی شان والا ہے اور جس کی نہ کوئی مثل ہے نہ مثال۔ اور جو سب سے بے نیاز ہے اور زمین و آسمانوں میں سب اس کے محتاج ہیں۔ وہی زیادہ حقدار ہے کہ اس لفظ کو اپنی شان ربوبیت اور شان بے نیازی کے اظہار کے لئے استعمال فرمائے۔۔۔ ارشاد ہوتا ہے۔۔۔
    وما ارسلناک الا رحمت اللعالمین۔۔۔ اور ہم نے آپ علیہ الصلاہ والسلام کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا۔۔۔

    اور سورہ الحجر آٰیت ٢٣ میں ارشاد ہوتا ہے۔۔۔
    وانا لنحن نحی ونمیت ، ونحن الوارثون۔۔۔ اور ہم ہی زندہ کرتے ہیں اور ہم ہی مارتے ہیں، اور ہم ہی سب کے وارث و مالک ہیں۔۔۔سبحان اللہ۔۔۔
    لیکن جب اس وحدہ لا شریک لہ نے اپنی شان جلالت و وحدانیت اور شان کبریائی کا اظہار فرمانا چاہا تو یوں ارشاد ہوا۔۔۔

    لا الٰہ الّا انا ، فاعبُدنی۔۔۔ نہیں ہے کوئی معبود سوائے میرے، تو بس میری ہی عبادت کرو۔۔۔

    ذرا غور فرمائیں کہ اس جملے سے کیسی جلالت ٹپک رہی ہے۔۔۔لا الٰہ الّا انا ، فاعبُدنی۔۔۔ اللہ اکبر۔۔۔

    (سبحانک یا ربنا۔۔۔ لا الٰہ الا انت۔۔۔ نعبدک ونستغفرک۔۔۔ اے ہمارے رب! تو پاک ہے۔۔۔ تیرے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں۔۔۔ ہم تیری ہی عبادت کرتے ہیں اور تجھ سے اپنی کوتاہیوں کی معافی چاہتے ہیں۔۔۔)۔

    اور جب فرعون نے اپنی باطل ربوبیت کا دعوٰی کیا تھا تو اس نے بھی یہی لفظ "میں" استعمال کیا۔ اور قرآن مجید نے اس کو یوں بیان کیا۔۔۔
    فقال انا ربکم الاعلٰی۔۔۔ اس فرعون نے کہا کہ میں ہی تمہارا بلند و بالا رب ہوں۔۔۔

    اور جب اللہ سبحانہ وتعالٰی نے ابلیس کو حکم دیا کہ حضرت آدم علیہ السلام کو سجدہ کرو تو اس نے انکار کرتے ہوئے یہی لفظ میں استعمال کیا اور جواب دیا۔۔۔ کہ

    انا خیر منہ۔۔۔ میں اس (آدم علیہ السلام ) سے بہتر ہوں۔۔۔

    اب ان جملوں میں جو "میں" ہے بس اسی کو مارنا مقصود ہے کہ جس کے اندر یہ میں ہوتی ہے وہ کہیں کا نہیں رہتا۔۔۔ لیکن اس کا یہ مطلب ہر گز نہیں کہ یہ لفظ استعمال کرنا ناجائز ہے۔۔۔ کہ الفاظ بذات خود اچھے یا برے نہیں ہوتے بلکہ ان کا استعمال انہیں اچھا یا برا بناتا ہے۔۔۔
    ہمارے خیال میں اوپر والے ریفرنسز سے یہ بات تو واضح ہو جاتی ہے کہ خودی، یہ اوپر والی میں نہیں ہو سکتی۔ بلکہ یہ دو الگ الگ چیزیں ہیں۔
    اب خودی کیا ہے۔۔۔ تو اس کے بارے میں مختصراً اتنا کہہ سکتے ہیں کہ خودی نام ہے خود شناسی کا۔ اپنے آپ کو پہچان لینے کا۔ کہ میں کیا ہوں۔۔۔ جی ہاں۔۔۔ یہاں بھی ایک "میں" ہے۔ لیکن یہ میں خود پرستی والی میں نہیں، بلکہ خود شناسی والی میں ہے۔ کہ جب بندہ جان لیتا ہے کہ میں تو کچھ بھی نہیں ہوں۔ تو یہی میں ، خودی بن جاتی ہے۔۔۔ بس یہی باریک سی لائن ہے ان دونوں کے درمیان۔۔۔ کہ جب ابلیس و فرعون کہتے ہیں کہ میں یہ ہوں اور میں وہ ہوں۔ تو یہ میں ہوتی ہے۔۔۔ اور جب بلھا کہتا ہے کہ ، بلھا کی جاناں میں کون۔۔۔ تو یہی میں خودی بن جاتی ہے۔۔۔ اور پھر یہ اتنی بلند ہو جاتی ہے کہ اپنے رب سے جا ملتی ہے۔۔۔ آثار و اخبار میں مشہور ہے کہ

    من عرف نفسہ ، فقد عرف ربہ۔۔۔ جس نے خود کو پہچان لیا، اس نے اپنے رب کو پہچان لیا۔۔۔
    کہ جب کوئی بندہ جان لیتا ہے کہ میں تو کچھ بھی نہیں ہوں۔ بس وہ ہی وہ ہے۔ تو پھر اس بندے کی میں ختم ہو جاتی ہے۔ اس کی اپنی کوئی خواہش باقی نہیں رہ جاتی۔ اور رب کی رضا ہی اس کی رضا بن جاتی ہے۔ اور اس کی ساری چاہتیں رب کی چاہت میں فنا ہو جاتی ہیں۔ اور جب رب اور بندے، دونوں کی چاہتیں ایک ہی چاہت بن جاتی ہے۔ تو پھر بندہ اس مقام پر پہنچ جاتا ہے کہ جہاں۔۔۔
    خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے۔۔۔

    عشق و ادب میں ڈوب کر میں کو ختم کر دینے کی ایک خوبصورت مثال حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کی مبارک زندگی سے لے لیتے ہیں کہ جو صحیح بخاری و مسلم میں مروی ہے۔ کہ
    جب ایک مرتبہ آقا علیہ الصلاۃ والسلام کسی معاملے کو نمٹانے کے لئے کہیں تشریف لے گئے اور نماز کا وقت آن پہنچا تو صحابہ کرام نے حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کو امامت کے مصلّے پر کھڑا کر دیا اور آپ رضی اللہ عنہ امامت فرمانے لگے۔۔۔ اسی دوران ہمارے من ٹھار آقا علیہ الصلاۃ والسلام تشریف لے آئے اور پہلی صف میں کھڑے ہو گئے۔ صحابہ کرام نے نماز میں ہاتھ پر ہاتھ مار کر حضرت صدیق رضی اللہ عنہ کو توجہ دلائی کہ آقا علیہ الصلاۃ والسلام تشریف لے آئے ہیں۔۔۔ آپ رضی اللہ عنہ پیچھے ہٹنے لگے تو آقا علیہ الصلاۃ والسلام نے اشارہ کیا کہ نماز پڑھاتے رہیں۔۔۔ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے اس بات پر اللہ عزوجل کی حمد کی اور شکر ادا کیا کہ حضور نے انہیں نماز پڑھاتے رہنے کا حکم فرمایا۔۔۔لیکن اس کے بعد پیچھے ہٹ کر صف میں مل گئے اور پھر آقا علیہ الصلاۃ والسلام نے آگے بڑھ کر نماز مکمل فرمائی۔۔۔ نماز سے فارغ ہونے کے بعد حضور علیہ الصلاۃ والسلام نے حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ سے ارشاد فرمایا کہ’’اے ابو بکر! جب میں نے تمہیں نماز پڑھانے کا حکم دیا تھا تو کس چیز نے تمہیں اپنی جگہ پر قائم نہ رہنے دیا۔۔۔ تو ذرا عشق و محبت کے اس شہسوار کا جواب سنیئے کہ یہ نہیں فرمایا کہ میری کیا مجال۔۔۔ کہ "میں" تو کب کی فنا فی الرسول ہو چکی تھی۔ بلکہ عرض کی۔ ’’ابو قحافہ کے بیٹے کی کیا مجال کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے آگے کھڑا ہو کر نماز پڑھائے‘‘۔ سبحان اللہ۔۔۔ سبحان اللہ۔۔۔
    کاش اس ادب اور عشق صدیق کا ایک ذرہ اللہ اپنے کرم سے ہمیں بھی نصیب فرمادے۔۔۔ کہ جن کے بارے میں امیرالمؤمنین حضرت عمر رضی اللہ عنہ فرمایا کرتے تھے کہ کاش میرے سارے اعمال ابو بکر کے ایک دن کے عمل کے برابر ہو جائیں۔۔۔

    .....
     
    • زبردست زبردست × 25
    • پسندیدہ پسندیدہ × 10
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    بہت خوبصورت۔۔۔جزاک اللہ
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بڑی نوازش غزنوی بھائی۔۔۔
    اللہ عزوجل آپ کو خوش رکھے۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. فرحت کیانی

    فرحت کیانی لائبریرین

    مراسلے:
    10,998
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    بہت اچھی بات کیآپ نے۔ جزاک اللہ خیر۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. محمد علم اللہ

    محمد علم اللہ محفلین

    مراسلے:
    5,832
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Daring
    خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
    خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے

    میرے خیال میں یہ شعر ڈاکٹر اقبال کا نہیں بلکہ مولانا علی جوہر کا ہے۔کیا کوئی کنفرم حوالہ دے دے تو بڑی مہربانی ہو۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  6. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت شکریہ آپی۔۔۔
    جزاک اللہ خیراً کثیرا۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  7. بھلکڑ

    بھلکڑ لائبریرین

    مراسلے:
    3,621
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Blah
    بہت خوبصورت لکھا ہے
    ماشاءاللہ
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    میرے خیال میں یہ ڈاکٹر صاحب ہی کی غزل "خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے" کا شعر ہے اور شائد بال جبریل میں ہے۔ کنفرم حوالے کے لئے محمد بلال اعظم بھائی یا دیگر احباب سے گزارش کی جاتی ہے۔ جزاک اللہ۔۔۔
     
    • متفق متفق × 5
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. غدیر زھرا

    غدیر زھرا لائبریرین

    مراسلے:
    3,150
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Devilish
    یہ شعر علامہ اقبال صاحب کا ہی ہے ۔۔ ان کی تصنیف بالِ جبریل سے :)
    خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے
    کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں، میری انتہا کیا ہے
    خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
    خدا بندے سے خود پوچھے، بتا تیری رضا کیا ہے
    مقامِ گفتگو کیا ہے اگر میں کیمیا گر ہوں
    یہی سوزِ نفس ہے اور میری کیمیا کیا ہے
    نظر آئیں مجھے تقدیر کی گہرائیاں اس میں
    نہ پوچھ اے ہمنشیں مجھ سے وہ چشمِ سرمہ سا کیا ہے
    اگر ہوتا وہ مجذوب فرنگی اس زمانے میں
    تو اقبال اس کو سمجھاتا مقام کبریا کیا ہے
    نوائے صبح گاہی نے جگر خوں کر دیا میرا
    خدایا جس خطا کی یہ سزا ہے وہ خطا کیا ہے؟
     
    • زبردست زبردست × 5
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت بہت شکریہ بھیا۔۔۔
    جزاک اللہ خیراً کثیرا۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  11. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    آپ کی کنفرمیشن کے لئے نہائت ممنون ہوں۔۔۔
    بہت بہت شکریہ۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  12. محمد علم اللہ

    محمد علم اللہ محفلین

    مراسلے:
    5,832
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Daring


    پیاری بہنا غدیر زہرا بہت بہت شکریہ
    میں بہت دنوں سے اسے محمد علی جوہر کا سمجھتا رہا ۔پتہ نہیں کس کی زبان سے میں نے یہ سنا تھا خیر آپ کا ممنون ہوں ۔
    اللہ تعالی جزائے خیر دے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  13. اشفاق احمد

    اشفاق احمد محفلین

    مراسلے:
    115
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding

    کیا یہ واقعی حدیث ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. باباجی

    باباجی محفلین

    مراسلے:
    3,852
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Curmudgeon
    بے شک "میں" ہی مرواتی ہے
    بکری بھی میں میں کرتی ہے اور چُھری کے نیچے آتی ہے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. محمد علم اللہ

    محمد علم اللہ محفلین

    مراسلے:
    5,832
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Daring
    یقین کے ساتھ نہیں کہا جا سکتا ۔کچھ لوگ اسے حضرت علی کا بھی قول کہتے ہیں ۔کچھ لوگ حدیث قدسی ۔کچھ مستند حوالہ مجھے نہیں مل سکا ہے ۔
    جو کچھ دستیاب ہوا وہ کچھ اس طرح ہے ۔بعض لوگ اس کو ضعیف بھی قرار دیتے ہیں تفصیل کے لئے دیکھئے :الاسرار المرفوعۃ(506)تنزیہ الشریعۃ(402/2)تذکرۃ الموضوعات(11)[
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    میرے آنے سے پہلت @غدیر ذھرا صاحبہ کنفرمیشن کر چکی ہے۔
    شکریہ ٹیگ کرنے کا۔
    اسی بہانے اتنی خوبصورت تحریر پڑھنے کو مل گئی۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. ماہا عطا

    ماہا عطا محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    بہت خوبصورت۔۔۔ جزاک اللہ​
     
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  18. محمد علم اللہ

    محمد علم اللہ محفلین

    مراسلے:
    5,832
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Daring
    شک
    شکریہ بھائی جان توجہ کا ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  19. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
  20. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    یہ ناچیز محترم اشفاق احمد بھائی کا سوال کرنے کے لئے اور محترم محمد علم اللہ اصلاحی بھائی کا جواب دینے کے لئے نہائت مشکور ہے۔۔۔حجۃ الاسلام امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ نے کیمیائے سعادت میں اس کو آثار و اخبار کے حوالے سے نقل کیا ہے۔ یعنی آثار سے مراد صحابہ رضی اللہ عنہم کے اقوال اور اخبار سے مراد احادیث نبوی صل اللہ علیہ وآلہ وسلم۔۔۔ اس لئے ہم امام صاحب کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اس کو ایسے ہی کہتے ہیں کہ "آثار و اخبار میں مشہور ہے"۔منتظمین جملہ تبدیل کر دیں تو مشکور و ممنون ہوں گا۔۔۔ جزاک اللہ الف خیر۔۔۔

    ضمناً عرض کر دوں کہ امام غزالی نے اس کو ان الفاظ سے بھی نقل کیا ہے کہ
    اعرف نفسک ، تعرف ربک۔ تُو پہچان اپنے نفس کو تو پہچانے گا اپنے رب کو۔
    واللہ اعلم۔۔۔
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر