سعود عثمانی حوصلہ چھوڑ گئی راہ گزر آخرِ کار - سعود عثمانی

چوہدری لیاقت علی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 1, 2015

  1. چوہدری لیاقت علی

    چوہدری لیاقت علی محفلین

    مراسلے:
    305
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حوصلہ چھوڑ گئی راہ گزر آخرِ کار
    رہ گیا ساتھ مسافر کے سفر آخر ِ کار

    کوہ ِ اسود نے بہت راستے روکے لیکن
    شرق سے پھوٹ پڑا چشمٔہ زر آخرِ ِ کار

    اُس کے پتوں پہ لکیریں تھیں ہتھیلی جیسی
    مدتوں سبز رہا پیڑ ، مگر ، آخر ِ کار

    تھم کے رہ جائے گی اک روز لہو کی گردش
    ختم ہوجائے گا اندر بھی سفر آخر ِ کار

    جس نے اک عمر سے آواز جھلس رکھی تھی
    آنکھ تک آگیا وہ شعلۂ تر آخر ِ کار

    زرد ہوجائیں گے پتے بھی گلابوں کی طرح
    ایک ہوجائیں گے سب عیب و ہنر آخر ِ کار

    دستِ خوش لمس میسر نہیں آ ئے گا کبھی
    بند رہ جائے گا سیپی میں گہر آخر ِ کار

    تم نہیں جانتے اس رنج کو ہم جانتے ہیں
    راکھ کر جائے گا تم کو یہ شرر آخر ِ کار

    ٹوٹ جاتا ہے کسی شخص کے مانند سعود
    قید ِ تنہائی میں رہتا ہوا گھر آخر ِ کار

    (سعود عثمانی )
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. bilal260

    bilal260 محفلین

    مراسلے:
    1,905
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Chatty
    ماشاء اللہ بہت خوب جناب ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر