حجابِ شعر۔ عبیدہ انجم

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 2, 2008

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حجابِ شعر

    عبیدہ انجمؔ​

    حجابِ شعر میں اس طرح پوشیدہ ہوں میں انجم
    کہ جیسے پ میں خوشبو ، جو بس محسوس ہ
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حسن فانی ہے جوانی بھی ہے فانی انجم
    صرف کردار ہی ایسا ہے جو لافانی ہے
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ابتدائی اشعار (شادی کے بعد)

    میرے تخیلات کی دنیا صد آفریں
    اپنے مکاں میں رہتی ہوں اپنے مکاں سے دور
    پردیس میں نصیب مرا لے کے آ گیا
    ہوں آج بی* سے، بھائیوں سے، اور میاں* سے دور


    ۔۔۔۔
    * بی اور میاں والدین کو کہا جاتا تھا
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    /////


    غزلیں

    ///////
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اٹھا اے مطربہ اپنا رباب آہست آہستہ
    ابھرنے دے یمِ دل میں حباب آہستہ آہستہ

    مرا دل جو کبھی رنگیں تمنّاؤں کا مسکن تھا
    ہوا جاتا ہے اب خانہ خراب آہستہ آہستہ

    محبت در حقیقت ایک ایسی موجِ دریا ہے
    جو بڑھتی ہے بشکلِ اضطراب آہستہ آہستہ

    خزاں آنے سے یہ اہلِ چمن اندوہگیں کیوں ہیں
    عروسِ گل بھی ہو گی بے نقاب آہستہ آہستہ

    کرے میری بلا ساقی کی منت جب کہ وہ خود ہی
    چلا آتا ہے لے کر جامِ ناب آہستہ آہستہ

    مجھے اس طرح یاد آتی ہیں وہ گزری ہوئی باتیں
    کہ جیسے آتے ہوں رنگین خواب آہستہ آہستہ

    نہ ہو کیوں رونق انجمؔ محفلِ گردوں میں آتا ہے
    ضیائیں اپنی لے کر ماہتاب آہستہ آہستہ

    کرم آمادہ ہے چشمِ عتاب آلودہ آج ان کی
    دعائیں ہو رہی ہیں مستجاب آہستہ آہستہ
    ۔۔۲/ اپریل ۱۹۴۳، شائع شدہ زیب النساء، لاہو ر
    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دنیا کو اپنا تابعِ فرماں بناؤں گی
    پھر آج چشمِ دوست کو حیراں بناؤں گی

    دنیا کی موج موج کو طوفاں بناؤں گی
    اس طرح مشکلات کو آساں بناؤں گی

    جلوہ نما اسے کسی عنواں بناؤں گی
    دنیائے رنگ و نور کو حیراں بناؤں گی

    قائم رہی اگر یہ مری وسعتِ نگاہ
    ذرّے کو آفتابِ درخشاں بناؤں گی

    شبنم صفت بہا کے ہر اشکِ لطیف کو
    دریائے بے بہا کو میں ارزاں بناؤں گی

    سمجھے نہ سمجھے کوئی اسے لیکن اے بدیم
    ہر شکلِ آرزو کو نمایاں بناؤں گی

    انجمؔ ہر ایک کارِ بیاباں کو ایک دن
    آسودۂ بہارِ گلستاں بناؤں گی
    ۔۔ مئی ۱۹۴۵ء
    ******
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وفا میں ڈوب جانا چاہتی ہوں
    الم میں مسکرانا چاہتی ہوں

    حریمِ دل سجانا چاہتی ہوں
    انہیں مہماں بلانا چاہتی ہوں

    میسر ہو جہاں تسکینِ خاطر
    وہیں دنیا بسانا چاہتی ہوں

    جبیں اپنی کسی کے در پہ رکھ کے
    مقدر آزمانا چاہتی ہوں

    کہاں تک دوریِ منزل کا خطرہ
    ترے نزدیک آنا چاہتی ہوں

    تمنا، آرزو کچے ہے تو یہ ہے
    کہ میں تجھ میں سمانا چاہتی ہوں

    خوشا میرا صعودِ عشق انجم
    فلک پر جگمگانا چاہتی ہوں

    ۔۔مارچ ۱۹۴۹ء
    ***
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ***

    احساسِ محبت کی ادنیٰ یہ نشانی ہے
    آہوں میں تلاطم ہے،اشکوں میں روانی ہے

    برداشتہ خاطر ہوں دنیا کے جھمیلوں سے
    دنیا سے الگ مجھ کو اک دنیا بسانی ہے

    ہنگامِ سحر جس کو ہم سنتے ہیں گلشن میں
    شبنم کی کہانی ہے،پھولوں کی زبانی ہے

    ہونتوں پہ جو رہتا ہے، وہ ہے ترا افسانہ
    جو دل پہ ہے مستولی، وہ تیری کہانی ہے

    غم حاصلِ عشرت ہے،پھولوں پہ نظر ڈالو
    کلیوں کا تبسم بھی مٹنے کی نشانی ہے

    ہر لفظ ہو گلدستی رنگینی و نکہت کا
    اشعار کے پھولوں سے اک بزم سجانی ہے

    مجبوری و ناکامی ہے نام محبت کا
    ہر ذرے کو اے انکم، یہ بات بتانی ہے
    ۔۔ اپریل ۱۹۴۹ء
    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    خیال اپنا ہٹا کر کہکشاں اور ماہِ تاباں سے
    ملانا چاہتی ہوں اب نگاہیں حسنِ جاناں سے

    بہت کی جستجو میں نے حرم اور دیر میں تیری
    مگر پایا تجھے نزدیک اپنی ہی رگِ جاں سے

    چمن میں صرف بلبل ہی نہیں آشفتہ سر ہمدم
    پتہ تو یہ ہی چلتا ہے گلوں کے چاک داماں سے

    ما کر اپنی ہپستی کو حقیقت آشنا ہو جا
    اسے پہچان لے دامن بچا کر کفر و عصیاں سے

    نشیمن کی بنا پڑتے ہی بجلی نے جلا ڈالا
    ابھی مانوس نھی ہونے نہ پائے تھے گلستاں سے

    مری کمزور کشتی آ رہی ہے موج کی زد میں
    الٰہی خیر ہو، پھر کشمکش ہے زورِ طوفاں سے

    زمانہ جھوم جائے اور ہر اک پر وجد طاری ہو
    وہ نغمہ چھیڑ اے انجمسلاسل ہائے زنداں سے

    ۔۔ اپریل ۱۹۴۹ء
    ***
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جو فریبِ رہگزر ہیں وہی نقشِ پا متائیں
    نئے راستے نکالیں۔ نئی نزلیں بنائیں

    نہیں مستقل چمن میں ابھی موسمِ بہاراں
    کبھی مسکرائیں غنچے تو سنبھل کے مسکرائیں

    ہو نوید زندگی کو ہے قریب کامرانی
    جو بڑھے ہوئے ہوں آگے، وہ قدم نہ ڈگمگائیں

    ہیں اسیرِ طرزِ کہنہ یہ نظامِ نو کے داعی
    جو سکوتِ دل ہو ایسا کوئی انقلاب لائیں

    کسی غمزدہ کی آںکھیں سوئے آسماں اٹھی ہیں
    یہ فلک یہ ماہ و انجم کہیں گر کے رہ نہ جائیں

    مرا عزم مستقل ہے کوئی حادثوں سے کہہ دو
    رہیں ہوشیار مجھ سے، مرے راستے میں نہ آئیں

    ہے یقیں ملے گا ساحل اسی موجِ مضطرب میں
    جنھیں ہو ملالِ طوفاں، وہ یہں پہ ڈوب جائیں

    ہو امیں پہ امن قائم، یہ دلیلِ ارتقاء ہے
    نہیں ارتقائے انساں، جو ہیں زیر پا خلائیں

    نئی منزلیں ملیں گی رہِ زندگی میں انجم
    اسی ذوقِ جستجو کو چلو راہبر بنائیں

    ۔۔ اپریل ۱۹۵۶ء
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میں بہاروں کے گیت گاتی ہوں
    چاند تاروں کے گیت گاتی ہوں

    آنشاروں کے گیت گاتی ہوں
    کوہساروں کے گیت گاتی ہوں

    بڑھ کے جو پھونک دیں نظامِ کہن
    اُن شراروں کے گیت گاتی ہوں

    گھر کے چاروں طرف سے طوفاں میں
    میں کناروں کے گیت گاتی ہوں

    میرا دامن جو تھام لیتے ہیں
    ان ہی خاروں کے گیت گاتی ہوں

    کام جو لغزشوں میں آ جائیں
    اُن سہاروں کے گیت گاتی ہوں

    چھیڑ کر سازِ مفلسی انجم
    غم کے ماروں کے گیت گاتی ہوں

    ۔۔جون ۱۹۵۶ء
    شائع شدہ شاعر ممبئی
    ***
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جو زندگی کی کشاکش سے تنگ آئے ہیں
    وہ آدمی تو نہیں، آدمی کے سائے ہیں

    زمانہ لاکھ مٹائے، مٹا نہیں سکتا
    ہم ایسے نقش بھی راہوں میں چھوڑ آئے ہیں

    یہ سادہ لوحی ہماری کہ آزما کر بھی
    وفا کے نام پہ اکثر فریب کھائے ہیں

    نہ مل سکا جنیہں دامن خلوص کا اب تک
    کچھ ایسے اشک بھی پلکوں پہ تھرتھرائے ہیں

    یہ انتشار، یہ بد نظمیِ چمن انجم
    بہار پر بھی مسلّط خزاں کے سائے ہیں

    ***
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    الجھنوں سے جو پیار کرتے ہیں
    زندگی استوار کرتے ہیں

    خشک شاخوں کو دے کے اپنا لہو
    انتظارِ بہارکرتے ہیں

    رکھ کے ماضی کے تجربوں پہ اساس
    حال کو سازگار کرتے ہیں

    صاف گوئی پہ جب ہو پابندی
    خامشی اختیار کرتے ہیں

    ***
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نظمیں /گیت​
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جھولا

    آؤ سکھیو جھولا جھولیں آئی ہے برسات

    بجلی چمکے بادل گرجے مست پون لہرائے
    رم جھم رم جھم مینہا برسے جھولا ہلوریں کھائے
    آؤ ری سکھیو۔۔۔۔۔۔۔

    پاپی پپیہا جنگل جنگل پی کی تان لگائے
    کویل بولے ڈالی ڈالی سنگ ہمارے گائے
    آؤ ری سکھیو۔۔۔۔۔۔۔

    لمبی لمبی پینگ بڑھائیں آم کی پتی لائیں
    یہ رنگ رلیاں بالے پن کی جانے کہاں کھو جائیں
    آؤ ری سکھیو۔۔۔۔۔۔۔

    ***
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    برکھا رت

    رنگیں فضائیں
    بھیگی ہوائیں
    دلکش مناظر
    کالی گھٹائیں
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    سر سبز گلشن
    سرشار صحرا
    نکھرا ہوا ہے
    پھولوں کا چہرہ
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    شاداب پتّے
    مسرور غنچے
    بربط بجا کر
    گاتے ہیں نغمے
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    پھولوں کے رخ پر
    رعنائیاں ہیں
    رعنائیاں ہیں
    رنگینیاں ہیں
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    فرشِ زمیں پر
    گلپوش وادی
    اوجِ فلک پر
    قوسِ قزح بھی
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    پانی کی پریاں
    آئیں فلک پر
    موتی لٹائے
    الفیں جھٹک کر
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    فرطِ طرب سے
    طائر چہکتے
    کلیاں چٹکتیں
    گلشن مہکتے
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    گل اور بلبل
    شاداں و فرحاں
    ہیں تتلیاں بھی
    رقصاں و لرزاں
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی



    بگلوں کا اڑنا
    کالی گھٹا میں
    کوئل کی کوکو
    بھینی فضا میں
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    قالین دھانی
    ہر سو بچھا ہے
    صحنِ گلستاں
    کیا دلربا ہے
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    انجم یہ رُت بھی
    کتنی حسیں ہے
    فرشِ زمیں کیا
    عرشِ بریں ہے
    برکھا کی رت ہے
    کیسی سہانی

    ۔۔ اگست ۱۹۴۲ء
    شائع شدہ زیب النساء لاہور
    ***
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکایت


    ایک خاص واقعے سے متاثر ہو کر​


    آرام و سکوں ہوئے روانہ
    دل درد کا ہو گیا ٹھکانہ
    افراظ، الم اسی سے پوچھو
    جس کا کہ جلا ہو آشیانہ
    کیا بدلی نگاہِ مہر آگیں
    گویا کہ بدل گیا زمانہ
    دنیا سے وفا کی ہیں امیدیں
    تیرا یہ خیال جاہلانہ
    قرآن ہو اندگی کا مقصد
    انجم ہو روش بھی سوفیانہ
    ۔۔ ستمبر ۱۹۴۵ء

    ***
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کیا یاد بھی ہیں تم کو وہ تین ملاقاتیں
    ایک سہیلی کو خط[/CENTER]

    وہ پان مرا لانا
    تمیارا وہ گھبرانا
    ’کیا ہرج ہے، کھا بھی لو‘
    میرا یہی دہرانا
    بھولی تو نہ جائیں گی
    پیہم وہ ملاقاتیں

    تکرار وہ چائے پر
    وہ پیالیاں بھر بھر کر
    تمہارا یہی کہنا
    ’ایک اور دو‘ ہنس ہنس کر
    بھولی تو نہ جائیں گی
    پیہم وہ ملاقاتیں

    کم بخت وہ کیٹل تھی
    یا کوئی تماشہ تھی
    سینے میں لئے اپنے
    اک چائے کا دریا تھی
    بھولی تو نہ جائیں گی
    پیہم وہ ملاقاتیں

    اے گردشِ دوراں پھر
    وہ دن ہمیں مل جائیں
    امید کہ یہ غنچے
    اے کاش کہ کھل جائیں
    بھولی تو نہ جائیں گی
    پیہم وہ ملاقاتیں

    یہ زیست بھی اے انجم
    ہے مثلِ حبابِ یم
    اس طرح گزر جائے
    جو پاس نہ آئے غم
    بھولی تو نہ جائیں گی
    پیہم وہ ملاقاتیں

    ۔۔جنوری ۱۹۴۸ء
    ***​
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تبریک الم آمیز

    عزیزہ بختیار فاطمہ (سہیلی اورمحترم کوثر چاندپوری کی بھتیجی) کی شادی اور ان کی والدہ مرحومہ کی موت کی خبر پا کر


    مبارک ہو تمہیں یہ ساعتِ خوش بختیار اپنی
    ہوئی ہیں بعد مدت کے دعائیں کامگار اپنی
    مبارک آج امی جان کے ارماں ہوئے پورے
    تھا جن کا انتظار اب تک وہ سب ساماں ہوئے پورے
    نہایت چاؤ سے ارمان سے دلہن بنایا ہے
    سہاگن رشتہ داروں نے تمہیں مل کر سجایا ہے
    بہن بھائی پدر ماں اور بھاوج صدقے ہوتے ہیں
    بزرگوں کی محبت کے تقاضے ایسے ہوتے ہیں
    بپا ہے غلغلہ ہر سو مبارک کا سلامت کا
    دکھائی دے رہا ہے ایک نقشہ عیشِ عشرت کا
    بصد عشرت تمیہں ماں باپ رخصت آج کرتے ہیں
    دلوں میں موجزن خوشیاں ہیں لیکن اشک بھرتے ہیں

    امانت جان کر تم کو بڑے نازوں سے پالا تھا
    وضاحتؔ کے حوالے وہ امانت آج کرتے ہیں
    تمیارا آج سے ہم سب انیہں سرتاج کرتے ہیں
    تمیہں حق نے عطا کی ہے ذکا و فہم کی دولت
    نئے ماحول کو تم خود بنا سکتی ہو اک جنت
    تمیہں اپنے نئے ماحول کی عزّت مبارک ہو
    شگفتہ طلعتیں، ہنستی ہوئی صورت مبارک ہو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    پڑی عشرت پہ اوس اک اطلاع غم مآب آئی
    ابھی دو دن نہ گزرے تھے کہ برقِ انقلاب آئی
    یکایک محفلِ عشرت پہ کوہِ رنج و غم ٹوٹا
    دلِ نغمہ نوا کے ساز کا ہر زیر و بم ٹوٹا
    یکایک پیاری امی جان پر سکتہ ہوا طاری
    وہ سانس اکھڑی، وہ ڈوبی نبض، سر پر موت آ پہنچی
    ہمارے سر سے سایہ اٹھ گیا پیار اور شفقت کا
    عنایت کا، مودّت کا، مروّت کا، محبّت کا
    کسے معلوم تھا عشرت بدل جائے گی یوں غم سے
    مبدّل نغمۂ شادی بھی ہوگا شورِ ماتم سے
    اٹل قانونِ قدرست ہے یہاں میں لب کشا ہو کر
    بنوں مطعون کیوں انجم مگر شکوہ سرا ہو کر
    خدا دیتا ہے جن کو عیش، ان کو غم بھی ہوتے ہیں
    جہاں بجتے ہیں نقّارے، وہاں ماتم بھی ہوتے ہیں‘ (داغ)
    ۔۔ ستمبر ۱۹۵۰ء
    ***
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تضاد


    ہم نفس سوچتی رہتی ہوں کہ ایسا کیوں ہے

    آج بھی دیس میں بد نظمی کا عالم ہے وہی
    مفلسی ہے وہی فاقے ہیں وہی زرداری
    اک طرف ریشم و کم خواب کے زریں ملبوس
    اک طرف ننگے بدن چیتھڑوں کو بھی محتاج
    اک طرف میز پہ شیشیوں میں ہے دہقان کا خوں
    اک طرف بھوک سے فاقوں سے ہے ھالت ابتر
    برقی فانوسوں سے ہوتا ہے اُدھر دن کا گماں
    اور اِدھر ٹوٹی ہوئی کٹیا کا بجھتا سا چراغ
    ریشمی پردے ہیں، قالین ہیں ایرانی اِدھر
    اور اُدھر بوریا بھی اُس کے مقدر میں نہیں
    اِس طرف ساغرمل رقص و سرود و مستی
    اُس طرف یاس و الم مفلسی و ناداری
    اِس طرف کتّوں کی بیماری پہ آئے سرجن
    اُس طرف مفلس و بیمار دوا کو ترسے
    ہر طرف عیش کے سامان میسر اِن کو
    اور ازل ہی سے مقدر میں ہے اُس کے تکلیف
    جس کی محنت سے انہیں رزق ملے راج کریں
    ہائے افسوس صد افسوس وہی بھوکا مرے
    رفعت و پستیِ انساں کو اگر دیکھنا ہو
    دیکھئے دیکھئے وہ سامنے چوراہے پر
    ایک بیٹھے ہیں بڑا پیٹ لئے رکشا پر
    ایک مدقوق سا نزدور جسے کھینچتا ہے
    ہو کے آزاد بھی پایا نہ کوئی امن و سکوں
    چین نایاب ہے یوں کہنے کو ہے جنتا راج

    آج بھی دیس میں بد نظمی کا عالم ہے وہی
    ہم نفس سوچتی رہتی ہوں کہ ایسا کیوں ہے
    ۔۔ ماررچ ۱۹۵۲ء

    ***
     

اس صفحے کی تشہیر