جب بھی ملتے ہیں تو جینے کی دعا دیتے ہیں - اجے پانڈے سحاب

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 16, 2016

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,393
    غزل
    (اجے پانڈے سحاب)
    جب بھی ملتے ہیں تو جینے کی دعا دیتے ہیں
    جانے کس بات کی وہ ہم کو سزا دیتے ہیں

    حادثے جان تو لیتے ہیں مگر سچ یہ ہے
    حادثے ہی ہمیں جینا بھی سکھا دیتے ہیں

    رات آئی تو تڑپتے ہیں چراغوں کے لئے
    صبح ہوتے ہی جنہیں لوگ بجھا دیتے ہیں

    ہوش میں ہو کے بھی ساقی کا بھرم رکھنے کو
    لڑکھڑانے کی ہم افواہ اُڑا دیتے ہیں

    کیوں نہ لوٹے وہ اُداسی کا مسافر یارو
    زخم سینے کے اسے روز صدا دیتے ہیں

    جب بھی آنکھوں سے کوئی اشکوں کی گنگا نکلے
    راکھ ٹوٹے ہوئے سپنوں کی بہا دیتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,665
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    جب بھی ملِتے ہیں تو جِینے کی دُعا دیتے ہیں
    جانے کِس بات کی وہ ہم کو سزا دیتے ہیں

    حادثے، جان تو لیتے ہیں مگر سچ یہ ہے !
    حادثے ہی، ہَمَیں جِینا بھی سِکھا دیتے ہیں

    رات آئی تو تڑپتے ہیں چراغوں کے لیے
    صُبح ہوتے ہی جنھیں لوگ بُجھا دیتے ہیں

    :) :) :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر