جانے کتنے راز چھپے ہیں ٹھہرے ٹھہرے پانی میں

ظہیراحمدظہیر نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 21, 2016

  1. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,810
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    غزل

    جانے کتنے راز چھپے ہیں ٹھہرے ٹھہرے پانی میں
    کون اُتر کردیکھےاب اس یاد کے گہرے پانی میں

    جل پریوں کی خاموشی تو منظر کا ا یک دھوکا ہے
    فریادوں کا شور مچا ہے اندھے بہرے پانی میں

    کوئی سیپی موتی اُگلتی ہے ، نہ موجیں کوئی راز
    حرص و ہوا کے ایسے لگے ہیں چار سُو پہرے پانی میں

    جھیل کے نیلے آئینے پر پتھر پھینکنے والو تم !
    ساحل پر اب بیٹھ کے دیکھو بگڑے چہرے پانی میں

    چاہا ہم نے جھیل کنارے چاندنی راتوں میں جن کو
    ِکھلتے ہیں بَن بَن کے کنول وہ پھول سے چہرے پانی میں

    ظہیر احمد ۔ ۔ ۔ ۔ ۲۰۰۳​
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 22, 2016
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    26,625
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    واہ واہ. کیا خوبصورت کلام ہے.
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,810
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    تابش بھائی یہ پرانی غزل ہے ۔ ان دنوں کی بات ہے کہ جب شعوری طور پر مختلف ردیف قافیوں کے ساتھ تجربات کررہا تھا ۔ ورڈز ورتھ کو کچھ سالوں تک خوب پڑھا تھا اور جیسا کہ ہوتا ہے اس دوران اس کا اثر بھی قبول کیا ۔ چونکہ بنیادی طور پر نظم کے بجائے غزل ہی لکھتا ہوں اس لئے غزل میں علاماتِ فطرت کو بطور استعارہ استعمال کرنے کی کوشش کی ۔ اس زمانے کی پانچ چھ غزلیات کی ردیفیں پانی، دریا ، سورج ، ہوا وغیرہ ہیں ۔ اب جبکہ سب کچھ ایک جگہ جمع کرہی رہا ہوں تو وہ سب بھی یہاں لگانے کا ارادہ ہے ۔
    وارننگ دیدی ہے ۔ :):):)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر