تعویذ گنڈوں اور جنات وجادو کا علاج

دین حینف نے 'مطالعہ کتب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 25, 2011

لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں
  1. دین حینف

    دین حینف محفلین

    مراسلے:
    4
    تعویذ گنڈوں اور جنات وجادو کا علاج
    [​IMG]
    تبصرہ کتاب
    جادو برحق ہےاور کتاب وسنت کے دلائل کی رو سے جادو ،ٹونہ انسانی زندگی میں اثر انداز ہوتا ہے ،جس سے انسان کئی قسم کے روحانی و جسمانی عوارض کا شکار ہوتا ہے۔جادو کے برحق ہونے کے باوجود کتاب وسنت میں جادو ٹونے کا توڑ موجود ہے ،اس لیے جادو ٹونے کو دماغ پر سوار کرنا اور ہرمشکل ،پریشانی اور بیماری کے پیچھے جادو ٹونے کو محرک سمجھنا قطعا درست نہیں۔ایک تو جادو کرنا اور کروانا حرام ہے،لہذا کسی مسلمان کے لیے درست نہیں کہ وہ کسی مسلمان کو پریشان کرنے ، کسی کو نقصان پہنچانے یا اپنی دلی تسکین کے لیے جادو کرے یاکرائے ،پھر اگر کسی پر جادو کے اثرات ظاہر ہوں تو ایسے جادوگروں ، بے دین عاملوں اورکالے علم کے ماہرین کے پاس نہیں جانا چاہیے ،بلکہ مستند علما کے پاس جاکر ان سے مشاورت کی جائے یا جادو کے تو ڑ پر لکھی گئی کتب سے علاج کی کوشش کی جائے ،جادو ٹونے اور جنات کی شرارتوں کےتوڑ کے لیے یہ عمدہ کتاب ہے ،جس میں ہر قسم کے جادو ٹونےکا علاج کتاب وسنت کےدلائل سے ثابت کیا گیا ہے۔(ف۔ر)
    ڈاؤنلوڈ لنک
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. دین حینف

    دین حینف محفلین

    مراسلے:
    4
    کتاب کا نام گھانڈوں نہیں بلکہ گنڈوں ہے۔انتظامیہ سے گزارش ہے کہ وہ نام درست کرلے۔جزاکم اللہ خیرا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  3. mfdarvesh

    mfdarvesh محفلین

    مراسلے:
    6,524
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    شکریہ
    ہوسکتا ہے کسی کا پڑھ کے بھلا ہی ہو جائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    جز اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    پہلے یہ تو ثابت کریں کہ جادو ٹونے کا واقعی وجود ہے بھی یا نہیں۔ اسکے بعد اسکا "توڑ" سیکھیں گے :)
     
  6. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    پاکستان آ جائیں، یہاں جادو بکثرت ہوتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  7. حماد

    حماد محفلین

    مراسلے:
    550
    موڈ:
    Brooding
    یا پھر سعودی عرب چلے جائیں وہاں جادو کرنے والوں کی گردنیں اتار دی جاتی ہیں۔ حوالہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  8. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سعودی عرب میں جادو کرنے والوں کی گردنیں بالکل اتار دی جاتی ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    جادو کا اگر اثر کہیں بھی ہوتا تو سب سے پہلے مغربی اور مشرقی اقوام اسکا شکار بنتیں اور اس کے دفاع میں طرح طرح کی ایجادات کرتیں۔ حقیقت تو یہ ہے کہ جادو گنڈے کا کہیں بھی کوئی بھی وجود نہیں۔ سائنس و تحقیق اس امر کی گواہی دیتی ہے کہ جادو ٹونے میں کوئی حقیقت نہیں کیونکہ اسکے طور طریقے آزادانہ طور پر بار بار دہرائے نہیں جا سکتے۔ یہ صرف اس پر جھوٹا "یقین" رکھنے والوں کی کہانیاں ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جادو ہوتا ہے اور بالکل ہے۔ سائنس سے اس کا کوئی لینا دینا نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    سائنس حقیقی مشاہدات پر مبنی علوم کا نام ہے۔ جب سائنسی ریسرچ جادو ٹونے وغیرہ پر ریسرچ کے بعد اسکو جھٹلا چکی ہے تو پھر پیچھے کیا رہ جاتا ہے؟ ہٹ دھرمی اور زد؟
     
  12. بہزاد حسن

    بہزاد حسن معطل

    مراسلے:
    44
    موڈ:
    Brooding
    جادو کا ہونا ایک حقیقت ہے، قران میں جس امر کا ذکر ہے وہ سچ ہے، ثابت ہے لیکن جادو کاعمل کفر ہے، جادو کا وجود نہ ہوتا تو سامری اور شداد کا نام نہ ہوتا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 1
  13. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    زد نہیں ضد۔

    یورپ میں بھی تو اتنا ہی جادو ہے جتنا کہ ہندوستان اور پاکستان میں۔

    جادو ٹونے کا پتہ چلانا سائنس کے بس کی بات نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  14. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہزاد صاحب جو لوگ قرآن کو ہی نہیں مانتے، ان کو آپ کیسے قائل کریں گے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  15. ام نور العين

    ام نور العين معطل

    مراسلے:
    2,026
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سائنس اور مشاہدے كى دنيا اتنى محدود ہے كہ يہ بھی نہيں بتا سكتى كہ سيب كے ايك بيج ميں كتنے سيب ہو سكتے ہيں اور ہمارى كہكشاں سے باہر كل كتنى كہكشائيں ہيں ؟ اس حقير "مشاہدے " پر اتنا يقين كيسے ؟محض ضد اور ہٹ دھرمى :!::!:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 8
  16. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    پچھلے ۴۰۰ سالوں میں انسان نے جتنی بھی معاشی، سماجی اور تکنیکی ترقیات کی ہیں، ان سب میں سائنسی علوم کارگر رہے ہیں۔ آج اگر آپ بجلی، کمپیوٹر، انٹرنیٹ وغیرہ استعمال کر رہے ہیں تو یہاں بھی 100 فیصد سائنسی علوم کارفرما ہیں۔ جب سائنس غیر ممکنات کو ممکنات میں بدل سکتی ہے تو جادو ٹونا جسے قدیم انسان ہزار ہا سال سے ممکنات تصور کرتا رہا ہے کو کیوں سائنسی تقاضوں پر ثابت نہیں کر سکتی ہے؟ کیا یہ کھلا تضاد نہیں؟ :)
     
  17. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    سائنسی علوم وقت کیساتھ ساتھ بدلتے رہتے ہیں۔ نئی تھیوریز اور مشاہدے پرانے علوم کو رد کرکے نئے علوم کی بنیاد ڈالتے ہیں۔ آئن اسٹائن کا نظریہ کہ کائنات میں کوئی بھی ذرہ روشنی کی رفتار سے زیادہ حرکت نہیں کر سکتا کو ہزاروں آزادانہ مشاہدے ثابت کر چکے تھے، یہاں تک کہ اس سال ہونے والا ایک سائنسی تجربہ اس "قانون" کو توڑتا ہوا نظر آیا اور یوں ایک نئی طبیعات کی بنیاد ڈلی۔
    http://www.telegraph.co.uk/science/8782895/CERN-scientists-break-the-speed-of-light.html

    ابھی محض 400 سالوں کی سائنسی مشاہدات نے ہماری دنیا کیسی بدل دی ہے، اگلے ہزاروں، لاکھوں سالوں میں کیا ہوگا، یہ آپ اور میں تصور بھی نہیں کر سکتے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. ام نور العين

    ام نور العين معطل

    مراسلے:
    2,026
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سائنس صرف مادے تك محدود علم ہےاور اتنا محدود كہ خود مادے كى تشريح ميں اپنی سابقہ فاش غلطيوں كا اعتراف كرتا رہتا ہے ، كيا كسى كو ياد ہے كہ يہی سائنس مادے كا آخرى ناقابل تقسيم ذرہ ايٹم كو قرار ديتى تھی؟ آج اس ذرے كے كتنے مزيد ذيلى اجزا دريافت ہو چکے ہيں ؟
    جب سائنسى علوم بدلتے رہتے ہيں تو اس كى بنياد پر مذہبی مسلمات كو غلط قرار دينا كون سا انصاف ہے؟مذہب كو اس بات سے كوئى فرق نہيں پڑتا كہ انسان گھوڑے پر سوار ہے بس پر يا جہاز پر ، اس كے نزديك ترقى جہاز كى سوارى ميں نہيں ، رب كى اطاعت اور تقوى ميں ہے۔يہ مادى تبديلى مادہ پرستوں كى نظر ميں ترقى ہو گی ، روحانيت پسندوں كو اس سے كوئى سروكار نہيں۔
    انسان كو لاف و گزاف سے قبل اپنی ہستى پر ايك حقيقت پسندانہ نظر ڈال لينى چاہیے ۔
    بہر حال يہ موضوع خاتم النبيين حضرت محمد صلى الله عليه وسلم كے دين اسلام كے متعلق ہے جس كى بنياد اتباعِ وحىِ الہی ہے نہ كہ تجربہ حس اور مشاہدہ ، جس كو اس موضوع پر مباحثے كا شوق ہو وہ الگ موضوع ميں تشريف لائے تا كہ اس كے سائنسى مبلغ علم كا اندازہ ہو سكے۔ وہاں مرزا غلام احمد قاديانى کے سائنسى انكشافات كا تذكرہ بھی ضرور ہو گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  19. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,909
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    معلوم نہیں جادو کے انکار سے اسلام کو اتنا خطرہ کیوں ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    210,446
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اسلام کو تو کوئی خطرہ نہیں لیکن یہ کہ جادو برحق ہے اور اس کا ذکر قرآن کریم میں بھی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 7
    • متفق متفق × 1
لڑی کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں

اس صفحے کی تشہیر