عرفان صدیقی تشنہ رکھا ہے، نہ سرشار کیا ہے اُس نے

Qaisar Aziz نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 20, 2014

  1. Qaisar Aziz

    Qaisar Aziz محفلین

    مراسلے:
    141
    تشنہ رکھا ہے، نہ سرشار کیا ہے اُس نے
    میں نے پوچھا ہے تو اِقرار کیا ہے اُس نے

    گِر گئی قیمتِ شمشاد قداں آنکھوں میں
    شہر کو مصر کا بازار کیا ہے اُس نے

    وہ یہاں ایک نئے گھر کی بِنا ڈالے گا
    خانۂ درد کو مسمار کیا ہے اُس نے

    دیکھ لیتا ہے تو کِھلتے چلے جاتے ہیں گلاب
    میری مٹی کو خوش آثار کیا ہے اُس نے

    دوسرا چہرہ اِس آئینے میں دِکھلائی نہ دے
    دل کو اپنے لئے تیار کیا ہے اُس نے

    حرف میں جاگتی جاتی ہے مِرے دل کی مراد
    دھیرے دھیرے مجھے بیدار کیا ہے اس نے

    میرے اندر کا ہرن شیوۂ رم بھول گیا
    کیسے وحشی کو گرفتار کیا ہے اُس نے

    میں بہرحال اسی حلقۂ زنجیر میں ہوں
    یوں تو آزاد کئی بار کیا ہے اُس نے

    اب سحر تک تو جلوں گا، کوئی آئے کہ نہ آئے
    مجھ کو روشن سرِ دیوار کیا ہے اُس نے

    عرفانؔ صدیقی
     

اس صفحے کی تشہیر