تعارف بقلم خود۔ محمد خلیل الرحمٰن

محمد خلیل الرحمٰن نے 'تعارف و انٹرویو' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 20, 2011

  1. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    بقلم خود۔محمد خلیل الرحمٰن
    تعارف لکھنے کی فرمائش ہوئی تو جی چاہا کہ فوراً کہہ دیں‘‘ کہ آپ اپنا تعارف ہوا بہار کی ہے’’ لیکن پھر قبل اسکے کہ کوئی اور ہم پر ہنستا، ہمیں خود اپنے آپ پر ہنسی آگئی۔ مشتاق احمد یوسفی صاحب بہت بڑے آدمی ہیں، بہت بڑے لکھاری ہیں، لیکن ان سے ایک غلطی سرزد ہوہی گئی۔ تزکِ یوسفی میں اپنے بجائے ہمارا تعارف لکھ مارا۔ لکھتے ہیں‘‘ یہ سرگزشت ایک عام آدمی کی کہانی ہے، جس پر بحمد اللہ کسی بڑے آدمی کی پرچھائیں تک نہیں پڑی۔ ۔ ایک ایسے آدمی کے شب و روز کا احوال جو ہیرو تو کجا اینٹی۔ ہیرو ہونے کا دعویٰ بھی نہیں کرسکتا۔ عام آدمی تو بیچارہ اتنی سکت اور استطاعت نہیں رکھتا کہ اپنی زندگی کو مردم آزاری کے تین مسلمہ ادوار میں تقسیم کرسکے ۔ یعنی جوانی میں فضیحت، ڈھلتی عمر میں نصیحت اور بڑھاپے میں وصیت۔ یہ طغیانِ شباب ، لاف ہائے شادکامی، معاصرانہ چشمکوں اور سیاست کی شورا شوری کی داستان نہیں۔نہ کسی کی مہم جوئی اور کشور کشائی کا ‘‘ساگا’’ ہے۔ ’’
    حلیہ بیان کرتے وقت بھی یہی غلطی دہرائی، سوائے ناک کے، کہ یوسفی صاحب، صاحبِ ناک ہیں اور اِدھر ہمارے مدعا کی طرح ناک بھی عنقا ہے۔ لکھتے ہیں۔‘‘ نہاں خانہ دل کی ہیرو گیلری پر نگاہ کی تو کسی کی رمق تک اپنی ذات میں نظر نہ آئی۰۰۰ ہنری ہشتم، سیموئل جانسن، گوتم بدھ، فالسٹاف، بابر، غالب، پک وک، بچے، امیر خسرو۔۔ ہاں ذہن پر ذرا زور ڈالا تو بعض مشاہیر کے جن چیدہ چیدہ اوصاف اور شباہتوں کا اپنی ذات میں جمگھٹا نظر آیا ، کاش وہ نہ ہوتیں تو زندگی سنور جاتی۔مثلاً نپولین کا قد، جولیس سیزر کا چٹیل سر، جینا لولو برجیدا کا وزن، سیموئل جانسن کی بینائی، ناک بالکل قلوپطرہ کی مانند کہ اگر ۱یک بٹا بارہ انچ بھی چھوٹی ہوتی تو اس دکھیا کا شمار بد صورتوں میں اور اپنا خوبصورتوں میں ہوتا۔’’ وغیرہ وغیرہ
    ہاتھی اور چوہے کی کہانی تو آپ نے سن رکھی ہوگی جنھوں نے ایک دوسرے سے اسکی عمر دریافت کی تھی۔چوہے کا جواب کہ عمر تو میری بھی اتنی ہی ہے پر میں بچپن میں ذرا بیمار رہتا تھا، دراصل ہمارا بھی جواب ہے۔ بچپن میں ایک مرتبہ ٹائیفائڈ نے آگھیرا تو جان کے لالے پڑ گئے۔ ماں پیاری نے ، روتے ہوئے بچے کو گود میں اٹھا کر کئی کئی راتیں جاگ کر گزاریں۔ باپ فقیر منش آدمی تھے ( جن کی سادہ زندگی اور محیر العقل کارناموں پر کتاب لکھ ماری ہے، جو تقریباً مکمل ہے۔ یعنی لکھ چکے ہیں، بس ایک عدد پبلشر کا ملنا باقی ہے) ،ایک خیراتی شفا خانے سے دوا لینے کے لیے گئے اور لائن میں لگ کر اپنی باری کا انتظار کیا۔ باری آنے پر کاونٹر کلرک نے دوا دیتے وقت کہا کہ یہ دوا فلاں جماعت کی جانب سے ہے تو اسی وقت دوا زمین پر انڈیل دی اور گھر چلے آئے۔
    ہمیں شاعری اور لکھنے لکھانے کا شوق بھی بچپن ہی سے تھا۔ ایک مرتبہ سوتے سے اٹھے اور کچی نیند میں بڑ بڑائے
    لنگڑ دین بھائی لنگڑ دین
    سالن تھوڑا روٹی تین
    بجاو بین۔
    اور پھر سوگئے۔ اباجان جو مطالعے کا بیحد شوق رکھتے تھے، جاگ رہے تھے۔ انھوں نے یہ ساری کارروائی دیکھی ۔ بعد میں اکثر سنایا کرتے اور خوب ہنستے۔
    جب ذرا اور بڑے ہوئے تو ‘‘ بہتا تکیہ ’’ کے نام سے ایک کہانی لکھی، جس میں ایک بچے کو پانی پر بہتا ہوا ایک تکیہ ملتا ہے جس پر سونے کا ایک تاج محل بنا ہوتا ہے۔ اسی طرح ترنگ میں آئے تو اس وقت کے ڈکٹیٹر کی تعریف میں ایک نظم لکھ ماری اور اباجان کو دکھائی۔ اباجان جو اس ڈکٹیٹر کے سخت خلاف تھے، انھوں نے شفقتِ پدری سے اس نظم کو دیکھا ، نظرِ ثانی اور تصحیح فرمائی۔ پھر ہم نے وہ نظم ریڈیو پاکستان پر بچوں کے پروگرام میں پڑھی اور داد سمیٹی۔
    ایک رات اباجان کو مطالعہ کرتے دیکھا تو خود بھی ان کے شیلف سے ایک کتاب ‘‘ الفاروق’’ نکال کر بیٹھ گئے اور کاغذ پینسل سنبھال کر کئی صفحوں پر مشتمل ایک ضخیم مضمون لکھ مارا۔ ماہنامہ تعلیم و تربیت کو یہ مضمون بھیجا تو انھوں نے ہماری اس مساعی کی لاج رکھتے ہوئے ایک صفحے کا مضمون بعنوان’’ بھوکے بچے خالی ہنڈیا’’ شایع کیا۔
    ‘غالبیات’ پر کام کا شوق چرایا تو دیوانِ غالب نکال لی اور غالب سے ایک انٹرویو لے ڈالا جسے بعد میں ماہنامہ غنچہ کراچی کی ادبی نشست میں پڑھنے کا موقع ملا۔ اسی رسالے کے لیے ایک یتیم بچے کی دکھ بھری داستان ایک خط کی صورت میں لکھی جو شایع ہوئی۔ ایک دن اپنے چھوٹے بھائی کے ساتھ بیٹھے اور بہت سی پاکستانی فلموں کے نام ایک کاغذ پر لکھ لیے ، پھر اس فہرست سے ریڈیو پاکستان کے ایک کمرشیل پروگرام کے ماڈریٹر کے نام ایک خط لکھا، جس کے ہرہر جملے میں کئی ایک فلموں کے نام آتے تھے۔ ماڈریٹر صاحب کو وہ خط اتنا بھایا کہ انھوں نے وہ خط نشر کرتے ہوئے سامعین سے سوال کیا کہ دو دوستوں کے اس خط میں کتنی فلموں کے نام آئے ہیں۔
    اور پھر یوں ہوا کہ ہم انجینیرنگ کالج کے ادبی مجلے کے منظوم حصے کے ایڈیٹر بنا دیے گئے۔ خوش خوش گھر آئے اور چھ ماہ تک سوتے رہے۔ اس دوران صرف اتنا کیا کہ ہر ایرے غیرے سے ایک عدد نظم یا غزل لکھوا لی۔ چھ ماہ اور مسلسل کئی یاد دہانیوں کے بعد جب عمیر بھائی نے الٹی میٹم دیدیا کہ کل نظم سیکشن مکمل چاہیے تو صورتحال کی سنگینی کا احساس ہوا، ساری رات جاگے اور دوستوں کی لکھی ہوئی ان ‘نظموں’ اور غزلوں’ کا ڈائی سیکشن کیا۔ اگلے روز اپنی ‘چھ ماہ ’کی عرق ریزیوں کا نچوڑعمیر بھائی کے حوالے کیا تو وہ پھولے نہ سمائے۔ البتہ ہمارے ایک کلاس فیلو کئی دنوں تک ہم سے ناراض رہے کہ ہم نے ان کی نظم کو کیوں ‘بدل’ دیا۔
    لگے ہاتھوں اب یہ بھی بیان ہوجائے کہ ہمارا ذریعہ معاش کیا ہے۔
    آٹھویں جماعت میں پہنچے تو یہ سوال ہمارے سامنے آیا کہ ہم بیالوجی پڑھیں یا ریاضی۔ گویا یہ شعبے کے انتخاب کا پہلا مرحلہ تھا۔ ہم نے اباجان سے پوچھا کہنے لگے‘‘ اسکول میں طیب صاحب سے پوچھ لو’’۔ طیب صاحب ہمارے استاد تھے اور اباجان سے ان کی دوستی ہوچکی تھی۔ اسکول پہنچے تو طیب صاحب کا یہ فرمان سننے کو ملا ‘‘ خبردار! کوئی بچہ بیالوجی نہ لے۔’’ اللہ جانے اس میں کیا رمز تھا، لیکن ہم نے میٹرک پری انجینئرنگ میں پاس کرلیا۔
    انٹر میڈیٹ میں داخلے کا مرحلہ آیا تو بڑے بھائی( مرحوم) نے صاف صاف کہہ دیا۔ جائو اور پولی ٹیکنیک میں داخلہ لے کر تکنیکی مہارت بہم پہنچائو۔ انٹر، بی اے وغیرہ کرنے کا کوئی فائدہ نہیں۔
    ہم پولی ٹیکنیک اداروں کے چکر کاٹتے رہے اور ادِھر ڈی جے اور آدمجی کالج سمیت تمام اچھے کالجوں میں داخلہ بند ہوگیا۔ اب پچھتاوے کیا ہووت جب چڑیاں چگ گئیں کھیت۔ سب کچھ لٹا کے ہوش میں آئے تو کیا کیا۔ آدمجی کالج کے پرنسپل صاحب نے ہماری رہنمائی نوٹس بورڈ تک کی جہاں پر داخلے بند ہوجانے کا نوٹس جلی حروف میں آویزاں تھا۔عائشہ باوانی کالج پہنچے۔ پرنسپل صاحب نے ہماری مارکس شیٹ دیکھی تو ہمیں ہاتھوں ہاتھ لیا ۔فوراً ہمارے فارم پر اپنے دستخط کیے اور ہمیں داخلہ کلرک کے پاس بھجوادیا۔ جمعے کا دن تھا۔ وہ اپنا کھاتا بند کرچکا تھا۔ اس نے معذرت کی اور ہمیں ہفتے کے روز آنے کا کہہ کر کھڑکی بند کردی۔
    ہم روتے روتے نیشنل کالج پہنچےاور ابھی کالج کی خوبصورت عمارت کو دیکھ کر عش عش کر ہی رہے تھے کہ یارِ جانی شیخ صاحب نے ہمیں دیکھ لیا ۔ پہلے تو ہمیں کئی موٹی موٹی گالیوں سے نوازا، پھر ہمیں لیے ہوئے کشاں کشاں پرنسپل صاحب کے کمرے میں پہنچےاور ان سے استدعا کی کہ ’ مانا کہ داخلے بند ہوچکے ہیں ، لیکن اگر وہ ہمارے جیسے اچھے رزلٹ والے لڑکے کو کھو دیں گے تو کیا کریں گے۔’ آخر کار انھیں منالیا اور یوں ہم نے انٹر کالج میں داخلہ لیا اور اڑتے ہوئے رنگوں میں انٹر پاس کیا۔
    اب گویا ایک ہی چوائس باقی رہ گئی تھی۔ شیخ صاحب کی دم سے بندھے ہوئے دائود کالج پہنچے اور الیکٹرانکس میں سند یافتہ انجینئر بن کر نکلے۔دو سال اِدھر اُدھر بھٹکنے کے بعد اباجان کی کوششوں سے ایک اچھی کمپنی میں ہمارا داخلہ ہوا اور اگلے کچھ سالوں میں ان چند بین الاقوامی کمپنیوں اور ان کے ترتیب دیے ہوئے تربیتی کورسوں نے ہمیں بائیو میڈیکل انجینئر بنادیا۔
    تو صاحبو! گویا یوں ہم نے اپنی مرضی کے بغیر اپنے آپ کو تلاشِ معاش میں کھودیا۔ اگر آج الہ دین کا چراغ ہمارے پاس ہوتا اور ہمیں تلاشِ معاش میں یوں در بدر کی ٹھوکریں نہ کھانی پڑتیں تو آج ہم بھی لکھاری ہوتے۔ اب تو ہم ہیں اور ہماری عزیز ترین سہیلی ردی کی ٹوکری ہے۔جو کچھ لکھتے ہیں ، اس کی نذر کردیتے ہیں۔
    ابنِ صفی بقلم خود کے عنوان کے تحت لکھتے ہیں۔‘‘ بقلم خود، اتنا کچھ لکھ دینے کے بعدسوچ رہا ہوں کہ اپنے بارے میں کچھ لکھنا بڑا جان جوکھم کا کام ہے۔ کہاں تک انانیت کو دبایا جاسکتا ہے۔ تھوڑی بہت لاف گزاف بھی ہوجاتی ہے۔ اسی لیے میرا اپنا ہی خیال ہے کہ اپنے بارے میں گفتگو کرنے والے اوّل درجے کے بے وقوف ہوتے ہیں۔ لیکن مجھ سے یہ بے وقوفی سرزد کرائی گئی ۔ میں خود اس کا ذمہ دار نہیں ہوں۔ اللہ بڑا رحم کرنے والا ہے۔’’
    ہم سے یہ بے وقوفی سرزد کرانے والے حضرات میں شمشاد بھائی، استادِ محترم جناب اعجاز عبید صاحب، حافظ سمیع اللہ فاروقی بھائی اور محفل کے دیگر تمام کرم فرما شامل ہیں جنھوں نےہماری تحریروں کی حوصلہ افزائی کی۔
    اپنی تعلیمی و تربیتی اسناد کی فائل کے سرنامے پر ہم نے فیض صاحب کا یہ قطعہ چسپاں کررکھا ہے ، سو وہ آپ کی بھی نذر ہے، جو مزاجِ یار میں آئے۔ ہم تہی دامنوں کے پاس تو کچھ بھی نہیں۔
    ہم خستہ تنوں سے محتسبو کیا مال منال کا پوچھتے ہو
    جو عمر سے ہم نے بھر پایا، سب سامنے لائے دیتے ہیں
    دامن میں ہے مشتِ خاکِ جگر، ساغر میں ہے خونِ حسرتِ مئے
    لو ہم نے دامن جھاڑ دیا، لو جام الٹائے دیتے ہیں​

    محفل کا شکریہ کہ انھوں نے ہماری تخلیقات کو اس لائق سمجھا کہ انھیں جگہ عطا فرمائی۔
    1. http://www.urduweb.org/mehfil/showt...ینات-(-صلی-اللہ-علیہ-و-سلم)-محمد-خلیل-الرحمٰن
    2. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33141-دیباچہ-بانگِ-درا-ایک-ایکٹ-کا-کھیل
    3. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33140-فسانہ-آزاد-اباجان-چلے-گئے-(-پیش-لفظ)
    4. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33164-ہیری-پوٹر-اِن-ٹربل-ایک-کھیل(-فارس)
    5. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33546-جیون-میں-ایک-بار-آنا-سنگا-پور
    6. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33694-جب-اسکی-آنکھ-سے-ٹپکے-کو-تم-نے-سچ-جانا
    7. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33415-How-to-write-a-Robert-Langdon-murder-mystery
    8. http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?33199-How-to-become-a-successful-American-President
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 26
    • زبردست زبردست × 7
  2. حافظ سمیع اللہ آفاقی

    حافظ سمیع اللہ آفاقی محفلین

    مراسلے:
    308
    موڈ:
    Stressed
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    محترم جناب محمد خلیل الرحمٰن صاحب، آپ نے اپنا تعارف پیش کرکے ہمارے اس مان کی لاج رکھ لی جو ہمیں آپ پر تھا۔ اس کے لیے میں اپنی، شمشاد بھائی اور استادِ محترم جناب اعجاز عبید صاحب کی طرف سے دل کی گہرائیوں سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔
    اتنا جامع، مربوط، ادبی اور خوب صورت تعارف پیش کرنے پر مبارک باد قبول فرمائیں۔
    آپ کے اس تعارف پر مجھ جیسے کم علم کا تبصرہ سورج کو چراغ دکھانے کے مترادف ہوگا، اس سلسلہ میں بس اتنا ہی عرض کروں گا کہ ہمیں آپ جیسے علمی وادبی شخصیت سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا اور آپ اپنے تخلیقی اداب سے اسی طرح اہل محفل کو سیراب کرتے رہیں۔
    میری طرف سےاردو محفل میں دل کی گہرائیوں سے خوش آمدید

    اھلا وسھلا ومرحبا
    بھلی کری آیا
    جی آیانوں
    وش اتکے واجہ
    پخیر راغلے
    ہر کلہ راشہ
    ستڑے مہ شے
    ویلکم
    ہر کدے آؤ
    والسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خلیل بھائی تعارف دینے کا بہت شکریہ۔ انشاء اللہ آپ سے مراسلت رہے گی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    جزاک اللہ الخیر جناب حافظ سمیع اللہ آفاقی بھائی
    شکراً شمشاد بھائی۔ آپ سے مراسلت میرے لیے اعزاز سے کم نہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    32,020
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ خلیل، ویسے مجھ سے پہلے میری طرف سے سمیع اللہ شکریہ ادا کر چکے ہیں۔
    میں پرنٹ پبلشر تو نہیں، برقی پبلشر کہہ سکتے ہو۔ اس لئے اپنی تخلیقات ترتیب کر کے بھجوا دو مجھے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  6. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,011
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    خوب دلچسپ تعارف لکھا آپ نے خلیل صاحب۔ خوش آمدید محترم۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  7. حافظ سمیع اللہ آفاقی

    حافظ سمیع اللہ آفاقی محفلین

    مراسلے:
    308
    موڈ:
    Stressed
    استادِ محترم جناب اعجاز عبید صاحب
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
    میں نے اپنی طرف سے تو محمد خلیل الرحمٰن بھائی کا شکریہ ادا کیا لیکن ساتھ میں آپ اور شمشماد بھائی کی طرف سے بھی شکریہ ادا کردیا، اس کی بھی بنیادی وجہ وہی ہے کہ مجھے آپ دونوں کی ذات پر بہت مان ہے اور آپ حضرات کی محبت، شفقت ورافت اور اپنائیت نے میرے دل کو مجبور کیا کہ میں (خاکم بدہن) اتنی بڑی جسارت کا ارتکاب کر بیٹھوں کہ جن شخصیات کے حوالہ سے اس جسارت کے ارتکاب کا تعلق تھا، ان کی محبت وپنائیت اور ان کا ظرف اس سے کہیں بڑھ کر ہے۔
    اُمید ہے کہ آپ نے اور شمشاد بھائی نے میری اس جسارت کا برا نہیں منایا ہوگا۔
    اللہ رب العزت آپ دونوں حضرات کو دنیا وآخرت میں سرخ رُو فرمائیں اور ہمیں اسی طرح ہمیشہ آپ سے ذات سے فیض یاب فرماتے رہیں۔ آمین۔
    والسلام
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  8. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    شکریہ وارث صاحب! آپ نے پسند کرلیا، میری محنت وصول ہوگئی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    استادِ محترم!
    آفر کے لیے میری جانب سے شکریہ قبول کیجیے۔ پڑھ کر پھولا نہ سمایا۔ صرف ایک انتظار ہے۔ اباجان کے ایک دوست نے اپنے رسالے کا ’’آزاد نمبر‘‘ نکالنے پر رضامندی ظاہر کردی ہے، جس میں میری پوری کتاب’’ فسانہ آزاد‘‘ آرہی ہے۔ انشا اللہ
    دل کا جانا ٹھر گیا ہے، صبح گیا یا شام گیا​
    دعاوں کی درخواست ہے۔
    ( چھپے یا نہ چھپے، ہر دو صورتوں میں آپکی آفر پر آمنا و صدقنا)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  10. پپو

    پپو محفلین

    مراسلے:
    6,999
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بھائی محمد خلیل الرحمٰن ماشااللہ زبردست لکھاری ہیں آپ اللہ آپ کو جزائے خیر دے آمین
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    جزاک اللہ الخیر بھائی۔
    آپ کے اور دیگرمحفلین کے دل بڑھانے سے ہمیں لکھنے کی تحریک مل رہی ہے۔ خوش رہیے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ماہنامہ تعمیرِ افکار کراچی پاکستان کی اشاعتِ خاص بیاد مولانا محمد اسماعیل آزاد ناشر زوار اکیڈمی پبلی کیشنز شمارہ نمبر ۱۰۴ جنوری ْ۔فروری ۲۰۱۱ئ چھپ چکا ہے اور ایک دو دن میں فضلی سنز اردو بازار کراچی سے مل سکتا ہے۔ اس اشاعتِ خاص کا بڑا حصہ راقم الحروف کے طویل مضمون ( ۱۴۰ صفحات) داستانِ آزاد۔ نذرِ عقیدت اباجان( مولانا محمد اسماعیل آزاد) پر مشتمل ہے۔
    ہم جلد از جلد اسے ورڈ فارمیٹ پر منتقل کرکے قارئینِ محفل کے لیے پیش کریں گے اور ساتھ ہی استادِ محترم کی خدمت میں پیش کریں گے تاکہ وہ اسے حسبِ وعدہ برقی فارمیٹ میں شایع کریں۔ شکریہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  13. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    قبلہ رسید حاضر ہے ۔ بشرطِ فرصت و دستیابیِ برقی رو۔۔ حاضر ہوتا ہوں۔
     
  14. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    جنابِ عالی! انتظار کی گھڑیاں ہم سے کاٹی نہ جائیں گی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    جنابِ عالی م۔م۔مغل بھائی! انتظار کی گھڑیاں ہم سے کاٹی نہ جائیں گی۔ نہ آپ کو کبھی فرصت کے لمحات میسر آئیں گے اور نہ ہمارے گھرکبھی برقی رو کی فراوانی ہوگی لیکن وقت تو آپ کو خود نکالنا پڑے گا۔
    وعدہ ٗ فردا کا منتظر۔ احقر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خلیل بھائی اب اور بھی مسئلہ ہو گیا ہے محمود بھائی کو کہ ان کر سڑک پر حادثہ پیش آ گیا ہے، جس کی وجہ سے صاحب فراش ہیں۔ اللہ تعالٰی سے دعا ہے کہ جلد صحتیاب ہوں اور اردو محفل میں واپس آئیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    اللہ محمود بھائی کو صحتَ کاملہ عاجلہ عطا فرمائے۔ حادثے کا سن کر تو دل دھک سے رہ گیا ہے۔ اللہ انھیں اور سب محفلین کو اپنی حفظ و امان میں رکھے۔+مین
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ہرخاص و عام کو مطلع کیا جاتا ہے کہ فدوی نے اپنا نک khazeena سے تبدیل کرواکر محمد خلیل الرحمٰن کروالیا ہے تاکہ سند رہے اور بوقتِ ضرورت کام آوے۔

    ہم روح سفرہیں ہمیں ناموں سے بھی پہچان:)
    کل اور کسی نام سے آجائیں گے ہم لوگ:ROFLMAO:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 8
  19. ندیم احمد یار خان

    ندیم احمد یار خان محفلین

    مراسلے:
    61
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    خلیل بھائی تعارف دینے کا بہت شکریہ۔ خوش آمدید محترم!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  20. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,569
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    جزاک اللہ بھائی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر