1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

حالی اے خاصہ خاصان رسل وقت دعا ہے

یوسف سلطان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 14, 2016

  1. یوسف سلطان

    یوسف سلطان محفلین

    مراسلے:
    3,594
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    اے خاصہ خاصان رسل وقت دعا ہے
    امت پہ تیری آ کے عجب وقت پڑا ہے

    جو دین بڑی شان سے نکلا تھا وطن سے
    پردیس میں وہ آج غریب الغربا ہے

    جس دین کے مدعو تھے کبھی قیصر و کسرٰی
    خود آج وہ مہمان سرائے فقرا ہے

    وہ دین ہوئی بزم جہاں جس سے چراغاں
    اب اس کی مجالس میں نہ بتی نہ دیا ہے

    جو دین کہ تھا شرک سے عالم کا نگہباں
    اب اس کا نگہبان اگر ہے تو خدا ہے

    جو تفرقے اقوام کے آیا تھا مٹانے
    اس دین میں خود تفرقہ اب آ کے پڑا ہے

    جس دین نے غیروں کے تھے دل آ کے ملائے
    اس دین میں اب بھائی خود بھائی سے جدا ہے

    جو دین کہ ہمدرد بنی نوع بشر تھا
    اب جنگ و جدل چار طرف اس میں بپا ہے

    جس دین کا تھا فقر بھی اکسیر ، غنا بھی
    اس دین میں اب فقر ہے باقی نہ غنا ہے

    جس دین کی حجت سے سب ادیان تھے مغلوب
    اب معترض اس دین پہ ہر ہرزہ درا ہے

    ہے دین تیرا اب بھی وہی چشمہ صافی
    دیں داروں میں پر آب ہے باقی نہ صفا ہے

    عالم ہے سو بےعقل ہے، جاہل ہے سو وحشی
    منعم ہے سو مغرور ہے ، مفلس سو گدا ہے

    یاں راگ ہے دن رات وداں رنگِ شب وروز
    یہ مجلسِ اعیاں ہے وہ بزمِ شرفا ہے

    چھوٹوں میں اطاعت ہے نہ شفقت ہے بڑوں میں
    پیاروں میں محبت ہے نہ یاروں میں وفا ہے

    دولت ہے نہ عزت نہ فضیلت نہ ہنر ہے
    اک دین ہے باقی سو وہ بے برگ و نوا ہے

    ہے دین کی دولت سے بہا علم سے رونق
    بے دولت و علم اس میں نہ رونق نہ بہا ہے

    شاہد ہے اگر دین تو علم اس کا ہے زیور
    زیور ہے اگر علم تو مال سے کی جلا ہے

    جس قوم میں اور دین میں ہو علم نہ دولت
    اس قوم کی اور دین کی پانی پہ بنا ہے

    گو قوم میں تیری نہیں اب کوئی بڑائی
    پر نام تری قوم کا یاں اب بھی بڑا ہے

    ڈر ہے کہیں یہ نام بھی مٹ جائے نہ آخر
    مدت سے اسے دورِ زماں میٹ رہا ہے

    جس قصر کا تھا سر بفلک گنبدِ اقبال
    ادبار کی اب گونج رہی اس میں صدا ہے

    بیڑا تھا نہ جو بادِ مخالف سے خبردار
    جو چلتی ہے اب چلتی خلاف اس کے ہوا ہے

    وہ روشنیِ بام و درِ کشورِ اسلام
    یاد آج تلک جس کی زمانے کو ضیا ہے

    روشن نظر آتا نہیں واں کوئی چراغ آج
    بجھنے کو ہے اب گر کوئی بجھنے سے بچا ہے

    عشرت کدے آباد تھے جس قوم کے ہرسو
    اس قوم کا ایک ایک گھر اب بزمِ عزا ہے

    چاوش تھے للکارتے جن رہ گزروں میں
    دن رات بلند ان میں فقیروں کی صدا ہے

    وہ قوم کہ آفاق میں جو سر بہ فلک تھی
    وہ یاد میں اسلاف کی اب رو بہ قضا ہے

    فریاد ہے اے کشتی امت کے نگہباں
    بیڑا یہ تباہی کے قریب آن لگا ہے

    اے چشمہ رحمت بابی انت و امی
    دنیا پہ تیرا لطف صدا عام رہا ہے

    کر حق سے دعا امت مرحوم کے حق میں
    خطروں میں بہت جس کا جہاز آ کے گھرا ہے

    امت میں تری نیک بھی ہیں بد بھی ہیں لیکن
    دل دادہ ترا ایک سے ایک ان میں سوا ہے

    ایماں جسے کہتے ہیں عقیدے میں ہمارے
    وہ تیری محبت تری عترت کی ولا ہے

    ہر چپقلش دہر مخالف میں تیرا نام
    ہتھیار جوانوں کا ہے، پیروں کا عصا ہے

    جو خاک تیرے در پہ ہے جاروب سے اڑتی
    وہ خاک ہمارے لئے داروے شفا ہے

    جو شہر ہوا تیری ولادت سے مشرف
    اب تک وہی قبلہ تری امت کا رہا ہے

    جس ملک نے پائی تری ہجرت سے سعادت
    کعبے سے کشش اس کی ہر اک دل میں سوا ہے

    کل دیکھئے پیش آئے غلاموں کو ترے کیا
    اب تک تو ترے نام پہ اک ایک فدا ہے

    ہم نیک ہیں یا بد ہیں پھر آخر ہیں تمہارے
    نسبت بہت اچھی ہے اگر حال برا ہے

    تدبیر سنبھلنے کی ہمارے نہیں کوئی
    ہاں ایک دعا تری کے مقبول خدا ہے

    خود جاہ کے طالب ہیں نہ عزت کے خواہاں
    پر فکر ترے دین کی عزت کی صدا ہے

    گر دین کو جوکھوں نہیں عزت سے ہماری
    امت تری ہر حال میں راضی بہ رضا ہے

    ہاں حالیء گستاغ نہ بڑھ حدِ ادب سے
    باتوں سے ٹپکتا تری اب صاف گلا ہے

    ہے یہ بھی خبر تجھ کو کہ ہے کون مخاطب
    یاں جنبشِ لب خارج از آہنگ خطا ہے

    اے خاصہ خاصان رسل وقت دعا ہے
    امت پہ تیری آ کے عجب وقت پڑا ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. ریگزار

    ریگزار محفلین

    مراسلے:
    15

اس صفحے کی تشہیر