1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

ایک رکعت میں کسی سورت یاآیت کا تکرار کے ساتھ پڑھنا کیسا ہے؟

فر حان نے 'اِسلامی تعلیمات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 1, 2009

  1. فر حان

    فر حان محفلین

    مراسلے:
    205
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    مسئلہ نمبر۴۶۱: دریک رکعت یک سورت یا یک رکعت یک آیت چند بار خواندن
    (ایک رکعت میں کسی سورت یاآیت کا تکرار کے ساتھ پڑھنا کیسا ہے؟ ۔ت)

    الجواب
    چوں تکرار یک سورت در دو ۲رکعت و دو۲ سورت در یک رکعت ہر دو در فرائض نا بائستہ بودتکرار یک سورت در یک رکعت اولی نبابائستگی باشد و ہمچناں تکرار آیت خلاصہ موجب اطالت ثانیہ براولی باشد وکل ذلک خلاف الماثور المتوارث فی الفرائض فاما کرا ہت تحریم راوجہے نیست جزدرفاتحہ کہ دررکعتین اولین پیش ازقرأت سورۃ اعادہ کل یا اکثر اوکند اقول لتفویت واجب الضم پس اگر عامداست اعادہ کند و اگر ساہی است سجدہ سہو بخلاف تکرار فاتحہ دراخریین اقول لعدم الضم فیہما یا بعد سورت در اولیین اقول لحصول الضم من قبل ولایجب الرکوع اثر السورۃ بل کلماتلامن القراٰن کان لہ ان یتلوہ اقول وازصورت تثقیل بر مقتدی غافل نباید بو د کہ ہمچو سور زائد بر قدر مسنون است پس اگر گرانی آرد مطلقاً ناجا ئز و مکروہ تحریمی باشد و ایں حکم عام است مر فریضہ ونافلہ ہمہ راپس ہرجا از صورت جواز مستثنٰی بایدش فہمید ۔واﷲ تعالٰی اعلم۔

    جب فرائض کی دو رکعتوں میں ایک سورت کا تکرار یا ایک رکعت میں دوسورتوں کا مناسب نہیں تو ایک رکعت میں ایک سورت کا تکرار بطریق اولٰی مناسب نہ ہوگا، اسی طرح کسی مخصوص آیت کا تکرار دوسری رکعت کے پہلی رکعت کے طویل ہونے کی وجہ بن سکتا ہے ،اور یہ تمام باتیں فرائض کے بارے میں منقول ماثور کے خلاف ہیں لیکن اس کو مکروہ تحریمی قرار دینے کی کوئی وجہ نہیں ماسوائے پہلی ۲دو رکعات میں قرأتِ سورت سے پہلے کل سورہ فاتحہ یا اکثر کا اعادہ کرنا کیونکہ یہ مکروہ تحریمی ہے۔ میں کہتا ہوں اس کی وجہ یہ ہے کہ سورت ملانا واجب تھا ،اعادہ کی صورت میں وُہ فوت ہوجاتاہے، پس اگر کسی شخص نے عمداً ایسا کیا تو اعادہ نماز کرے اور اگر سہواً کیا تو سجدہ سہو ہوگا بخلاف آخری دو رکعت میں سورہ فاتحہ کے تکرار کے ۔ میں کہتا ہوں کیونکہ ان میں ضمِ سورت واجب نہیں یا ضمِ سورت کے بعد پہلی دو رکعات میں،کیونکہ ضمِ سورت (واجب) پہلے حاصل ہو چکا اور سورت کے بعد رکوع فوراً واجب نہیں ہوتا بلکہ جب تک نمازی تلاوت کرنا چاہے کرسکتا ہے ۔میں کہتا ہوں مقتدی پر بوجھ ہونے کی صورت سے غافل نہیں ہوجانا چاہئے کیونکہ مثلاً قدر مسنون قرأت سے زائد پر اگر نمازی بوجھ محسوس کرتا ہے تو ایسی صورت مطلقاً ناجائز اور مکروہ تحریمی ہے اور یہ حکم ہر مقام پر ہوگاخواہ نمازفرض ہو یا نفل ،البتہ ہرجا صورت جوازکو مستثنٰی سمجھ لینا چاہئے۔واﷲ تعالٰی اعلم۔

    فتاوی رضویہ جلدنمبر6 (کتاب الصوۃ) بحوالہ صفحہ 268/272
     
  2. ابن جمال

    ابن جمال محفلین

    مراسلے:
    468
    امام ہونے کی صورت میں آیت کی تکرار نہ کرے کیونکہ اس سے مقتدی کو خدشہ ہوگا کہ شاید امام آیت بھول گیاہے اورسورت کی تکرار اس لئے نہ کرے کہ ارشاد رسول ہے تم میں سے جوشخص امامت کرے اسے چاہئے کہ وہ ہلکی(مختصر)نماز پڑھائے۔تکرار کی صورت میں طوالت کاخوف ہے۔
    ہاں نفل نماز میں اجازت ہے کہ چاہئے وہ سورہ کی تکرار کرے یا آیت کی۔ اسلاف سے اس قسم کے بیشتر واقعات منقول ہیں۔امام ابوحنیفہ سے منقول ہے کہ آپ نے ایک مرتبہ پوری رات وامتازواایھاالمجرمون پڑھتے ہوئے گزاردی۔
    والسلام
     

اس صفحے کی تشہیر