ایبسٹریکٹ آرٹ۔ سید محمد جعفری

فرخ منظور نے 'مزاحیہ شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 2, 2009

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,334
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ایبسٹریکٹ آرٹ

    ایبسٹریکٹ آرٹ کی دیکھی تھی نمائش میں نے
    کی تھی ازراہِ مروّت بھی ستائش میں نے

    آج تک دونوں گناہوں کی سزا پاتا ہوں
    لوگ کہتے ہیں کہ کیا دیکھا تو شرماتا ہوں

    صرف کہہ سکتا ہوں اِتنا ہی وہ تصویریں تھیں
    یار کی زلف کو سلجھانے کی تدبیریں تھیں

    ایک تصویر کو دیکھا جو کمالِ فن تھی
    بھینس کے جسم پر اک اونٹ کی سی گردن تھی

    ٹانگ کھینچی تھی کہ مسواک جسے کہتے ہیں
    ناک وہ ناک خطرناک جسے کہتے ہیں

    نقشِ محبوب مصوّر نے سجا رکھا تھا
    مجھ سے پوچھو تو تپائی پہ گھڑا رکھا تھا

    یہ سمجھنے کو کہ یہ آرٹ کی کیا منزل ہے
    ایک نقّاد سے پوچھا جو بڑا قابل ہے

    سبزہء خط میں وہ کہنے لگا رعنائی ہے
    میں یہی سمجھا کہ ناقص مری بینائی ہے

    بولی تصویر جو میں نے اُسے الٹا پلٹا
    میں وہ جامہ ہوں کہ جس کا نہیں سیدھا الٹا

    اُس کو نقاد تو اِک چشمہء حیواں سمجھا
    میں اسے حضرتِ مجنوں کا گریباں سمجھا

    ایک تصویر کو دیکھا کہ یہ کیا رکھا ہے
    ورقِ صاف پہ رنگوں کو گرا رکھا ہے

    آڑی ترچھی سی لکیریں تھیں وہاں جلوہ فگن
    جیسے ٹوٹے ہوئے آئینے پہ سورج کی کرن

    بولا نقاد جو یہ آرٹ ہے تجریدی ہے
    آرٹ کا آرٹ ہے تنقیدی کی تنقیدی ہے

    تھا کیوب ازم میں کاغذ پہ جو اک رشکِ قمر
    مجھ کو اینٹیں نظر آتی تھیں اُسے حسنِ بشر

    بولا نقّاد نظر آتے یہی کچھ ہم تم!
    خُلد میں حضرتِ آدم جو نہ کھاتے گندم

    ابسٹریکٹ آرٹ بہر طور نمایاں نکلا
    “قیس تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا“

    وہ خدوخال کہ ثانی نہیں جن کا کوئی آج
    بات یہ بھی ہے کہ ملتا نہیں رنگوں کا مزاج

    دیر تک بحث رہی مجھ میں اور اس میں جاری
    تب یہ ثابت ہوا ہوتی ہے یہ اِک بیماری


    اس کو کیوب ازم کا آزار کہا کرتے ہیں
    اس کے خالق جو ہیں بیمار رہا کرتے ہیں

    ایبسٹریکٹ آرٹ کے ملبے سے یہ دولت نکلی
    جس کو سمجھا تھا انناس وہ عورت نکلی

    ایبسٹریکٹ آرٹ کی اس چیز پہ دیکھی ہے اساس
    “تن کی عریانی سے بہتر نہیں دنیا میں لباس“

    اس نمائش میں جو اطفال چلے آتے تھے
    ڈر کے ماؤں کے کلیجوں سے لپٹ جاتے تھے

    ایبسٹریکٹ آرٹ کا اِک یہ بھی نمونہ دیکھا
    فریم کاغذ پہ تھا کاغذ جو تھا سُونا دیکھا

    وہ ہمیں کیسے نظر آئے جو مقسوم نہیں
    “لوگ کہتے ہیں کہ ہے پر ہمیں معلوم نہیں“

    ڈر سے نقادوں کے اِس آرٹ کو یوں سمجھے تھے ہم
    “شاہدِ ہستئ مطلق کی کمر ہے عالم“

    الغرض جائزہ لے کر یہ کیا ہے انصاف
    آج تک کر نہ سکا اپنی خطا خود میں معاف

    میں نے یہ کام کیا سخت سزا پانے کا
    یہ نمائش نہ تھی اِک خواب تھا دیوانے کا

    کیسی تصویر بنائی مرے بہلانے کو
    اب تو دیوانے بھی آنے لگے سمجھانے کو


    از سید محمد جعفری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 11
  2. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,482
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    تھا کیوب ازم میں کاغذ پہ جو اک رشکِ قمر
    وضاحت از سید محمد جعفری
    کیوب ازم: تجریدی مصوری کا ایک مکتب جس میں تصویر کو شش پہلو ٹکڑوں سے تشکیل دیا جاتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,334
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    شکریہ حضرت اسے شامل کرنے کے لئے۔ مجھے یہ لکھنا یاد نہیں‌ رہا۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,482
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    میں‌ہوں نا;)
    اس بہانے میرے دعوے کی تصدیق بھی ہو گئی کہ یہ کتاب واقعی میرے پاس بھی موجود ہے;)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,334
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    قبلہ ہم آپ کے کہے پر فوراً ایمان لے آتے ہیں۔ ;)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر