احمد ندیم قاسمی

شعیب اصغر نے 'بزم سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 21, 2013

  1. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    زندگی کے جتنے دروازے ہیں مجھ پر بند ہیں
    دیکھنا ۔۔۔۔۔ حدِ نظر سے آگے بڑھ کر دیکھنا بھی جرم ہے
    سوچنا ۔۔۔۔ اپنے عقیدوں اور یقینوں سے نکل کر سوچنا بھی جرم ہے
    آسماں در آسماں اسرار کی پرتیں ہٹا کر جھانکنا بھی جرم ہے
    کیوں بھی کہنا جرم ہے، کیسے بھی کہنا جرم ہے
    سانس لینے کی تو آزادی میسر ہے مگر
    زندہ رہنے کے لئے کچھ اور بھی درکار ہے
    اور اس "کچھ اور" کا تذکرہ بھی جرم ہے
    اے ہنر مندانِ آئین و سیاست!
    اے خداوندانِ ایوانِ عقائد!
    زندگی کے نام پر بس اک عنائت چاہئیے
    مجھے ان سارے جرائم کی اجازت چاہئیے۔

    (احمد ندیم قاسمی)
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. مہدی نقوی حجاز

    مہدی نقوی حجاز محفلین

    مراسلے:
    4,893
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    بہترین انتخاب ہے جناب!
    دو تصحیحات دیکھیے:
    زندہ رہنے کے لیے "انسان" کو کچھ اور بھی درکار ہے
    اور
    اور اس کچھ اور "بھی" کا تذکرہ بھی جرم ہے

    سلامت رہیے :)
     
  3. شعیب اصغر

    شعیب اصغر محفلین

    مراسلے:
    41
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت شکریہ سر
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. مہدی نقوی حجاز

    مہدی نقوی حجاز محفلین

    مراسلے:
    4,893
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    سر کا لاحقہ ہٹا لیجیے حضور۔ گو ہم تو آپ کے شاگردوں کی صف میں ہیں! :)
     

اس صفحے کی تشہیر