اب عہدِ گُل آ گیا ہے - خلیل الرحمٰن اعظمی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 30, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اب عہدِ گل آ گیا ہے​



    خلیل الرحمٰن اعظمی​
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    انتخاب: شہر یار
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کاغذی پیرہن







    پہلے مجموعے سے
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    (۱)
    یوں تو مرنے کے لیے زہر سبھی پیتے ہیں
    زندگی تیرے لیے زہر پیا ہے میں نے

    شمع جلتی ہے پر اک رات میں جل جاتی ہے
    یاں تو اک عمر اسی طرح سے جلتے گزری
    کون سی خاک ہے یہ جانے کہاں کا ہے خمیر
    اک نئے سانچے میں ہر روز ہی ڈھلتے گزری

    کس طرح میں نے گزاری ہیں یہ غم کی گھڑیاں
    کاش میں ایسی کہانی کو سنا بھی سکتا
    طعنہ زن ہیں جو مرے ھال پہ اربابِ نشاط
    ان کو اک بار میں اے کاش رُلا بھی سکتا

    میں کہ شاعر ہوں، میں پیغامبرِ فطرت ہوں
    میری تخئیل میں ہے ایک جہانِ بیدار
    دسترس میں مری نظارۂ گلہائے چمن
    میرے ادراک میں ہیں کُن فیکون کے اسرار
    میرے اشعار میں ہے قلبِ حزیں کی دھڑکن
    میری نظموں میں مری روح کی دل دوز پکار

    پھر بھی رہ رہ کے کھٹکتی ہے مرے دل میں یہ بات
    کہ مرے پاس تو الفاظ کا اک پردہ ہے
    صرف الفاظ سے تصویر نہیں بن سکتی
    صرف احساس میں حالات کی تفسیر کہاں
    صرف فریاد میں زخموں کی وہ زنجیر کہاں
    ایسی زنجر کہ ایک ایک کڑی ہے جس کی
    کتنی کھوئی ہوئی خوشیوں کے مناظر پنہاں
    کتنی بھولی ہوئی یادوں کے پراسرار کھنڈر
    کتنے اُجڑے ہوئے، لُوٹے ہوئے سنسان نگر
    کتنے آتے ہوئے جاتے ہوئے چہروں کے نقوش
    کتنے بنتے ہوئے مٹتے ہوئے لمحات کے راز
    کتنی ایجھی ہوئی راتوں کے نشیب اور فراز
    (۲)
    کیا کہوں مجھ کو کہاں لائی مری عمرِ رواں
    آنکھ کھولی تو ہر اک سمت اندھیرے کا سماں
    رینگتی اونگھتی مغموم سی اک راہگزر
    گردِ آلام میں کھویا ہوا منزل کا نشاں
    گیسوئے شام سے لپٹی ہوئی غم کی زنجیر
    سینۂ شب سے نکلتی ہوئی فریاد و فغاں
    ٹھنڈی ٹھنڈی سی ہواؤں میں وہ غربت کی تھکن
    در و دیوار پہ تاریک سے سائے لرزاں
    کتنی کھوئی ہوئی بیمار و فسردہ آنکھیں
    ٹمٹماتے سے دیے چار طرف نوحہ کناں
    دلِ مجروح سے اٹھتا ہوا غمناک دھواں
    یہی تاریکیِ غم تو مرا گہوارہ ہے
    میں اسی کوکھ میں تھا نورِ سحر کے مانند
    ہر طرف سوگ میں ڈوبا ہوا میرا ماحول
    میرا اُجڑا ہوا گھر میرؔ کے گھر کے مانند

    اک طرف عظمتِ اسلاف کا ماتھے پہ غرور
    اور اک سمت وہ افلاس کے پھیلے ہوئے جال
    بھوک کی آگ میں جھلسے ہوئے سارے ارماں
    قرض کے بوجھ سے جینے کی امنگیں پامال
    وقت کی دھند میں لپٹے ہوئے کچھ پیار کے گیت
    مہر و اخلاص زمانے کی جفاؤں سے نڈھال
    بھائی بھائی کی محبت میں نرالے سے شکوک
    نگہِ غیر میں جس طرح انوکھے سے سوال
    ’ایک ہنگامے پہ موقوف تھی گھر کی رونق‘
    مفلسی ساتھ لئے آئی تھی اک جنگ و جدال
    فاقہ مستی میں تھے بکھرے ہوئے سارے رشتے
    تنگدستی کے سبب ساری فضائیں بے حال

    اک جہنّم کی طرح تھا یہ مرا گہوارہ
    اس جہنم میں مرے باپ نے دم توڑ دیا
    ٹوٹ کر رہ گئے بچپن کے سُہانے سپنے
    مجھ سے منہ پھیر لیا جیسے مرئ شوخی نے
    میرے ہنستے ہوئے چہرے پہ اداسی چھائی
    جیسے اک رات بھیانک مرے سر پر آئی
    ارہں دشوار مگر راہ نما کوئی نہ تھا
    سامنےوسعتٕ افلاک خدا کوئی نہ تھا

    میرے اجداد کی میراث یہ ویران سا گھر
    جس کو گھیرے ہوئے ہر سمت تباہی کے بھنور
    جس کی چھت گرتی ہوئی ٹوٹا ہوا دروازہ
    ہر طرف جیسے بکھرتا ہوا اک شیرازہ
    نہ کہیں اطلس و کمخواب نہ دیبا و ہریر
    ہر طرف منہ کو بسورے ہوئے جیسے تقدیر
    مجھ کو اس گھر سے محبت تو بھلا کیا ہوتی
    ہاں اگر دل میں نہ جینے کی تمنا ہوتی
    یہ سمجھ کر کہ یہی ہے مری قسمت کا لکھا
    اس کی دیوار کے سائے سے میں لپٹا رہتا
    لیکن اس دل کی خلش نے مجھے بیدار کیا
    مجھ کو حالات نے آمادۂ پیکار کیا
    بے کسی رختِ سفر بن کے مرے ساتھ چلی
    یاد آئی تھی مجھے گاؤں کی ایک ایک گلی
    لہلہاتی ہوئی فصلیں وہ مرے آم کے باغ
    وہ کانوں میں لرزتے ہوئے دھندلے سے چراغ
    دوُر تک پانی میں پھیلے ہوئے وہ دھان کے کھیت
    اور تالاب کنارے وہ چمکتی ہوئی ریت
    میرے ہم عمر۔ وہ ساتھی، وہ مرے ہم جولی
    میرے اسکول کے وہ دوست، مری وہ ٹولی
    ایک بار ان کی نگاہوں نے مجھے دیکھا تھا
    جیسے اک بار مرے دل نے بھی کچھ سوچا تھا
    ’میں نے جب وادیِ غربت میں قدم رکھا تھا
    دور تک یادِ وطن آئی تھی سمجھانے کو‘
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بہار کی واپسی

    میں چپ چاپ بیٹھا ہوں اس رہگزر پر
    یہی سوچتا ہوں کہ خط لانے والا
    کہیں آج بھی کہہ نہ دے "کچھ نہیں ہے"
    یہ کیا بات ہے لوگ اک دوسرے سے
    جدا ہو کے یوں جلد ہے بھول جاتے
    وہ دن رات کا ساتھ ہنسنا ہنسانا
    وہ باتیں جنھیں غیر سے کہہ نہ پائیں
    اچھوتے سے الفاظ جو شاہراہوں پر
    آتے ہوئےدیر تک ہچکچائیں
    کچھ الفاظ کے پھول جو اس چمن میں
    کھلے تھے جسے مھٖلِ دوش کہیے
    جو کچھ دیر پہلے ہی برہم ہوئی ہے
    چراغوں سے اب تک دھواں اٹھ رہا ہے
    در و بام پر اب بھی پھیلی ہوئی ہے
    ہر اک سمت صہبائے احمر کی خوشبو
    ہوا میں ابھی شور ہے ہا و ہو کا
    وہ اڑتے ہوئے کاگ کے قہقہوں سے
    الجھتے ہوئے زمزمے بوتلوں کے
    بناتے ہیں دیوار پر کتنے دھبّے
    ابھی ہنس رہے ہیں، ابھی بولتے ہیں
    مری داستانوں کے دلچسپ کردار
    سنسان جگہوں کے رنگین قصّے
    یہ سب میرے پیچھے چلے آ رہے ہیں
    کوئی جیسے روٹھے ہوئے آدمی کو
    منائے، بڑے پار سے تھتھپائے
    دلائے کوئی یاد گزری ہوئی بات
    ہاتھوں کو اس کے دبا کر کہے
    دیکھنا دیکھنا کوئی انجان راہی ہے
    یا لڑکھڑاتا ہوا کوئی پتّہ
    خزاں کے پروں پر اُڑا آ رہا ہے
    کوئی نامۂ شوق لے آ رہا ہے
    ترے شہر کے سر و من کے گۃلوں نے
    خود اپنے ہی ہاتھوں سے تجھ کو لکھا ہے
    چلے آؤ اب عہدِ گل آ گیا ہے
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کاغذی پیرہن

    کچھ ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ جیسے موسم بدل رہا ہے
    اٹھوں اور اب اٹھ کے کیوں نہاس گھر کے ساے دروازے کھول ہی دوں
    مرئ رریچوں پہ جاے کب سے دبیز پردے لٹک رہے ہیں
    میں کیوں نہ ان کو الگ ہی کر دں
    مرا یہ تایک و سرد کمرہ
    بہت دنں سے سنہری دھوپ اور نئی ہوا کو ترس رہا ہے
    جگہ جگہ جیسے اس کی دیوار کی سپیدی اکھڑ گئی ہے
    ہر ایک کونے میں کتنے جالے لگے ہوئے ہیں
    مرے عزیزوں، مرے رفیوقں کی یادگاریں
    یہ ساری تصویریں جیسے دھندلی سی پڑ گئی ہیں
    یہ شیلف، جس میں مری کتابیں ہیں
    میز، جس پر مرے سبھی کاغذات بکھرے ہوئے پڑے ہیں
    یہ سب کے سب گرد سے اٹے ہیں
    مری کتابیں،
    میں کیا بتاؤں کہ کس قدر ہیں عزیز مجھ کو
    بہت سی ایسی ہیں جو مرے دوستوں نے تحفے میں مجھ کو دی ہیں
    وہ دوست جو جاں نثار تھے میرے، کس قدر چاہتے تھے مجھ کو
    میں ان کے ہاتھوں کی پیاری تحریر ان کتابوں پہ دیکھتا ہوں
    کچھ ایسے الفاظ، ایسے فقرے
    جوا ن کے ہاتھوں نے صرف مرے لیے کھے ہیں
    یہ میرے غم خوار، میرے دکھ درد کے امیں ہیں
    مرے یہ سب کاغذات جو منتشر پڑے ہیں
    مجھے یہ محسوس ہو رہا ہے میں ان سے بیزار ہو چلا ہوں
    اگر چہ یہ جانتا ہوں ان کے سوا ہے کیا کائنات میری
    مری تصانیف، میرے مضمون، میری نظموں کی ساری پونجی
    وہ شے کہ جس کی نہ کوئی قیمت ہے، اور نہ جو میرے کام آئی
    مری کتابیں، مری بیاضیں،
    یہ مسودے میری میری فکر و فنکے
    نہ جانے کتنے ہی ناشروں کے حسین فائل میں کچھ دنوں رہ کے
    پھر دوبارہ اس اجڑے کمرے میں آ کے آباد ہو گئے ہیں

    میں جس زمانے میں انکتابوں کو لکھ رہا تھا
    عجب جنوں تھا
    عجیب طوفان میرے دل میں امنڈ رہا تھا
    نہ نیند آتی تھی رات کو اور نہ دن کو دم بھر سکون ملتا
    کہ جیسے خود زندگی نے ہاتھوں کو میرے لوح و قلم دیا ہو
    انھیں کتابوں میں
    میرے دل کی تمام دھڑکن
    مری تمنّا
    مرے ارادوں کی ساری گرمی
    مری محبّت کے سارے نشتر چھپے ہوئے ہیں
    میں آج ان کاغذات کو الٹ کر جو دیکھتا ہوں
    تو اپنے ہی دل سے پوچھتا ہوں
    یہ میری لکھی ہوئی کتابیں ہیں؟
    ایسے اشعار؟
    ایسی نظمیں؟
    کہ جن پہ خود مجھ کو رشک آئے
    یہ سب مرے ذہن کا کرشمہ ہیں؟
    (ہائے کیا ہیں!)
    میں ان کو پہچانتا نہیں ہوں
    یہ ساری تصویریں میری ایسی ہیں
    آج جو مجھ سے مختلف ہیں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کنجِ محبّت
    یہ سنسان راتیں، یہ ٹھنڈی ہوائیں، یہ پھیلی ہوئی تیری یادوں کی خوشبو
    یہ چُپ چاپ سے پیڑ، یہ غم کے سائے، یہ دل کی کسک، یہ محبّت کا جادو

    یہ سب جاگتے ہیں، یہ سب سوچتے ہیں، یہ سب کروٹیں لے کے آہیں ہیں بھرتے
    نئی منزلوں سے، نئے راستوں سے، نئے موڑ سے سب کے سب ہیں گزرتے

    ہر اک موڑ پر جیسے کوئی کھڑا ہو، اشاروں اشاروں میں کچھ کہہ رہا ہو
    سمجھ میں نہ آئے کوئی بات اس کی مگر جیسا چشمہ سا اک بہہ رہا ہو

    کوئی جیسے میٹھے مدھر گیت کے بول مدھم سُروں میں یوں ہی گنگنائے
    کوئی جیسے طوفاں دبائے ہو دل میں، کسی سے مگر پھر بھی کچھ کہہ نہ پائے

    کچھ الفاظ ایسے جو یوں دیکھنے میں پُرانے سے ہیں، اور کتنے ہی انساں
    انہیں کے سہارے سے کہتے رہے ہیں، دلوں کی مرادیں، جوانی کے ارماں!

    یہ ارمان، یہ آرزوئیں ہماری، یہ کچھ رسمساتے ہوئے پھول جیسے
    جگائیں جنھیں آ کے جھونکے ہوا کے، جنھیں گدگدا جائیں آ آ کے بھنورے

    خزاں کی ہواؤں کے چلنے سے پہلے، ٹپکتے ہوئے پھول کے رس میں گویا
    کوئی گیت سا بن لیا ہے بہاروں نے گاتے ہیں اب بھی جسے باغ و صحرا

    جو کنجِ محبّت میں پیروں کی چھنتی ہوئی چاندنی کی زباں سے کہتا
    کہو آج کی رات کیسیس گزاری، کوئی آج کی رات ملنے بھی آیا؟؟
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزلیں


    نشاطِ زندگی میں ڈوب کر آنسو نکلتے ہیں
    سنا ہے اب ترے غم کے نئے پہلو نکلتے ہیں

    جنوں لے کر چلا ہے پا بجولاں اس کے کوچے میں
    لیے آغوش میں ہم نکہتِ گیسو نکلتے ہیں

    تری بستی میں دیوانوں کو رسوائی ہی راس آئی
    یہ اپنا چاک دامن لے کے اب ہر پہلو نکلتے ہیں

    وہی عارض، وہی کاکل، وہی کافر ادا آنکھیں
    مگر ہر لمحہ پھر بھی کچھ نئے جادو نکلتے ہیں

    محبت میں انھیں کو جان دے دینا بھی آتا ہے
    وہ جن کے واسطے لے کر خمِ ابرو نکلتے ہیں
    ۔۔۔۔۔۔
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہر ذرّہ گلفشاں ہے، نظر چور چور ہے
    نکلے ہیں مے کدے سے تو چہرے پہ نور ہے

    ہاں تو کہے تو جان کی پروا نہیں مجھے
    یوں زندگی سے مجھ کو محبّت ضرور ہے

    اپنا جو بس چلے تو تجھے تجھ سے مانگ لیں
    پر کیا کریں کہ عشق کی فطرت غیور ہے

    نازک تھا آبگینۂ دل، ٹوٹ ہی گیا
    تو اب نہ ہو ملول، ترا کیا قصور ہے

    عارض پہ تیرے میری محبّت کی سرخیاں
    میری جبیں پہ تیری وفا کا غرور ہے
    ۔۔۔۔
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہم اہلِ غم بھی رکھتے ہیں جادو بیانیاں
    یہ اور بات ہے کہ سنیں لن ترانیاں

    شرمندہ کر نہ مجھ کو مرا حال پوچھ کر
    لے دے کے رہ گئی ہیںن یہی بے زبانیاں

    کم کیا تھا ہم فقیروں کو آشوبِٕ روزگار
    کیوں یاد آ رہی ہیں تری مہربانباں

    اہلِ زمانہ تم بھی بڑے وقت پر ملے
    کچھ بار ہو چلی تھیں مری شادمانیاں

    تم نے بھلا دیا تو نئی بات کیا ہوئی
    رہتی ہیں یاد کس کو وفا کی کہانیاں

    رکھ لو کہ زندگی میں کبھی کام آئیں گی
    دیوانگانِ عشق کی بھی کچھ نشانیاں
    ۔۔۔۔
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اپنا ہی شکوہ اپنا گلہ ہے
    اہلِ وفا کو کیا ہو گیا ہے

    ہم جیسے سرکش بھی رو دئے ہیں
    اب کے کچھ ایسا غم آ پڑا ہے

    دل کا چمن ہے مرجھا نہ جائے
    یہ آنسوؤں سے سینچا گیا ہے

    یہ درد یوں بھی تھا جان لیوا
    کچھ اور بھی اب بڑھتا چلا ے

    بس ایک وعدہ، کم بخت وہ بھی
    مرمر کے جینا سکھلا گیا ہے

    جرمِ محبٓت مجھ تک ہی رہتا
    ان کا بھی دامن الجھا ہوا ہے

    اک عمر ہی گزری ہے راہ تکتے
    جینے کی شاید یہ بھی سزا ہے

    دل سرد ہو کر ہی رہ نہ جائے
    اب کے کچھ ایسی ٹھنڈی ہوا ہے
    ۔۔۔۔۔
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    زہر پی کر بھی یہاں کس کو ملی غم سے نجات
    ختم ہوتا ہے کہیں سلسلۂ رقصِ حیات

    آخری شمع ہوں میں، میرا لہو جلنے دو
    اب مرے بعد ملے گا نہ اندھیروں کو ثبات

    صبح سے پہلےہی برپا نہ کرو خیمۂ گُل
    کتنے گلچیں ابھی بیٹھے ہیں لگائے ہوئےگھات

    ہم کہ مے خانے کا مے خانہ اُٹھا کر پی جائیں
    تجھ سے چھٹ کر نہ کٹی ہم سے مگر ایک بھی رات

    تشنگی محفلِ خوبإں میں تو کیا خاک بجھی
    پھر بھی بیٹھا ہوں کہ شاید ہو یہیں آبِ حیات

    اتنا باہرنہ قدم سرحدِ ادراک سے رکھ
    تجھ کو ڈص لیں نہ کہیں تیرے جنوں کے لمحات

    صبحِ کاذب سے تو کیا چاک ہو طلمت کی ردا
    جگمگا اٹھّیں گے اب خاک کے لاکھوں ذرّات
    ۔۔۔۔
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تمام یادیں مہک رہی ہیں، ہر ایک غنچہ کھلا ہوا ہے
    زمانہ بیتا مگر گماں ہے کہ آج ہی وہ جدا ہوا ہے

    یہ سچ ہے کھائے ہیں میں نے دھوکے، مگر نہ چاہت سے کوئی روکے
    بجھے بجھے سے چراغِ دل میں بھی ایک شعلہ چھپا ہوا ہے

    کچھ اور رسوا کرو ابھی مجھ کو تا کوئی پردہ رہ نہ جائے
    مجھے محبّت نہیں جنوں ہے، جنوں کا کب حق ادا ہوا ہے

    میں اور خود سر، میں اور سر کش، ہوا ہوں تلقینِ مصلحت سے
    مجھے نہ اس طرح کوئی چھیڑے، یہ دل بہت ہی دکھا ہوا ہے

    ملا جو اک لمحۂ محبّت، یہ پوچھ اس کی ہے کتنی قیمت
    اب ایسے لمحوں کا تذکری کیا، کبھی جو وہ بے وفا ہوا ہے

    یہ درد ابھرا ہے عہدِ گل میں، خدا کرے جلد رنگ لائے
    نہ جانے کب سے سلگ رہا ہے، نہ جانے کب کا دبا ہوا ہے

    وفامیں برباد ہو کے بھی آج زندہ وہنے کی سوچتے ہیں
    نئے زمانے میں اہلِ دل کا بھی حوصلہ کچھ بڑھا ہوا ہے

    ہر ایک لَے میری اکھڑی اکھڑی سی، دل کا ہر تار جیسے زخمی
    یہ کون سی آگ جل رہی ہے، یہ میرے گیتوں کو کیا ہوا ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بس کہ پابندیِ آئینِ وفا ہم سے ہوئی
    یہ اگر کوئی خطا ہے تو خطا ہم سے ہوئی

    زندگی تیرے لیے سب کو خفا ہم نے کیا
    اپنی قسمت ہے کہ اب تو بھی خفا ہم سے ہوئی

    سر اُٹھانے کا بھلا اور کسے یارا تھا
    بس ترے شہر میںن یہ رسم ادا ہم سے ہوئی

    بار ہا دستِ ستم گر کو قلم ہم نے کیا
    بار ہا چاک اندھیرے کی قبا ہم سے ہوئی

    ہم نے اُتنے ہی سرِ راہ جلائے ہیں چراغ
    جتنی برگشتہ زمانے کی ہوا ہم سے ہوئی

    بار ہستی تواُٹھا، اُٹھ نہ سکا دستِ سوال
    مرتے مرتے نہ کبھی کوئی دعا ہم سے ہوئی

    کچھ دنوں ساتھ لگی تھی ہمیں تنہا پا کر
    کتنی شرمندہ مگر موجِ بلا ہم سے ہوئی
    ۔۔۔۔۔
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بہت فسردہ ہیں ان کو کھو کر جگر فگاروں سے کچھ نہ کہنا
    نہ جانے کیا ان کے دل پہ بیتے گی، سوگواروں سے کچھ نہ کہنا

    بہت ہی بھوکے، بہت ہی مفلس، بڑے ہی آوارہ گرد ہیں ہم
    بڑے ہی سرکش ہیں، جانے کیا کہہ دیں، غم کے ماروں سے کچھ نہ کہنا

    کبھی نہ بھولیں گی ایسی گھڑیاں، یہ سخت تنہائیوں کے لمحے
    گزارنی ہجر کی یہ راتیں، مگر ستاروں سے کچھ نہ کہنا

    فغاں کہ ایسی فضا میں جینا پڑا ہے جس کا یہ مشورہ ہے
    وتم سہے جاؤ لیکن اپنے ستم شعاروں سے کچھ نہ کہنا

    یہ کس طرح کی وفا چمن سے ہے، کچھ کہو میرے ہم صفیرو
    خزاں س بڑھ کر جو زہر آگیں ہو، اُن بہاروں سے کچھ نہ کہنا

    یہ مسکراتے ہیں میرے غم پر ت میری ڈھارس بندھا رہے ہیں
    خلوص اک طرح کا ہے ان کو بھی، غم گساروں سے کچھ نہ کہنا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    Oooo..xxxx..oooo
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نیا عہد نامہ
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سوداگر

    لو گجر بج گیا
    صبح ہونے کو ہے
    دن نکلتے ہی اب میں چلا جاؤں گا
    اجنبی شاہراہوں پہ پھر
    کاسۂ چشم لے لے کے ایک ایک چہرہ تکوں گا
    دفتروں، کارخانوں میں ، تعلیم گاہوں میں، تعلیم گاہوں میں جا کر
    اپنی قیمت لگانے کی کوشش کروں گا

    میری آرامِ جاں!
    مجھ کو اک بار پھر دیکھ لو
    آج کی شام لوٹوں گا جب
    بیچ کر اپنے شفّاف دل کا لہو
    اپنی جھولی میں چاندی کے ٹکڑے لیے
    تم بھی مجھ کو نہ پہچان پائیں تو پھر
    میں کہاں جاؤں گا۔۔۔!!
    کس سے جا کر کہوں گا کہ میں کون تھا۔۔۔۔۔
    کس سے جا کر کہوں گا کہ میں کون تھا۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آنچل کی چھاؤں میں
    آج ہر سمت سے آنچل کی ہوا آتی ہے
    کیا کہوں اب کے یہ کس طرح کا آیا موسم
    لمحے لمحے کی زباں پر ہے نئی فصل کا گیت
    میری بستی، مرے کھیتوں کا عجب ہے عالم
    ہنس رہے ہیں مرے معسوم سے ننھے پودے
    جن کو ملتی رہی اب تک مرے غم کی شبنم
    کوئی گوری لیے آتی ہے چھلکتی گاگر
    جس طرح پہلے برستی تھیں یہ آنکھیں چھم چھم
    رس بھرے ہونٹوں سے راتوں کے اندھیرے مہکے
    اس اندھیرے میں کوئی چھیڑ دے جیسے سرگم
    منزلیں اب مرے پاؤں میں بچھی جاتی ہیں
    جانے کس سمت لیے جاتا ہے ایک ایک قدم
    مجھ سے کہتی ہے مری پیاس یہ جیون بھر کی!
    اور کچھ اور کہ یہ نشٓہ ابھی ہے کم کم
    رکھ کے سینے پہ میرے ہاتھ کوئی کہتا ہے
    اتنے پاگل نہ بنو ہوش میں آؤ بالم
    دیکھو اب جاگ اٹھو، رات کٹی بھور ہوئی
    سیج کے گجروں میں باقی نہ رہا کوئی غم
    چل کے پھلواری میں سورج کو نکلتے دیکھیں
    چل کے دیکھیں کہ کلی کھلتی ہے کیسے تھم تھم
    میرے بالوں میں سجا دو کوئی ہنستا ہوا پھول
    چل کے ہاتھوں پہ مرے کھاؤ محبت کی قسم
    ۔۔۔۔
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اپنے بچّے کے نام
    اے مرے سنّ و سال کے حاصل
    میرےآنگن کے نو دمیدہ گلاب
    میرے معصوم خواب کے ہم شکل
    میری مریم کے سایۂ شاداب
    صبح تخلیق کا سلام تجھے
    زندگی تجھ کو کہتی ہے آداب

    اے مقدّس زمیں کے شعلۂ نو
    تو فروزاں ہو اُن فضاؤں میں
    میرے سینے کی جو امانت ہیں
    جو مری نا سرا دعاؤں میں!
    اس طرح مسکراتی ہیں جیسے
    نغمگی دور کی صداؤں میں

    مجھ کو اجداد سے وراثت میں
    وہ خرابے ملے کہ جن میں رہا
    عمر بھر پائمال و خاک بسر
    میرا حصٓہ رہا غمِ فردا
    مجھ کو میرے لہو میں نہلا کر
    جس نے قیدِ حیات میں رکھّا

    اے مری روحِ فن کے عکسِ جمیل
    تجھ کو میری سی زندگی نہ ملے
    جونہ میں ہو سکا، وہ تُو ہو جائے
    کاش تو میرا جانشیں نہ بنے
    میں تصوّرمیں بھی جہاں نہ گیا
    اُن دیاروں میں تیرا نام چلے
    ۔۔۔۔۔۔
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,181
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سلسلے سوالوں کے

    دن کے چہچہوں میں بھی رات کا سا سنّاٹا
    رات کی خموشی میں جیسے دن کے ہنامے
    جاگتی ہوئی آنکھیں، نیند کے دھندلکوں میں
    خواب کے تصوّر میں اک عذابِ بیداری
    رو زو شب گزرتے ہیں قافلے خیالوں کے
    صبح و شام کرتے ہیں آپ اپنی غم خواری
    ہم کہاں ہیں؟ ہم کیا ہیں؟کون ہیں مگر کیوں ہیں؟
    ختم ہی نہیں ہوتے سلسلے سوالوں کے

    چشمۂ ہدایت ہے علم کے صحیفوں میں
    فن کے شاہکاروں میں اک چراغِ عرفاں ہے
    مرحمت کے ساماں ہیں ان کی بارگاہوں میں
    مفت جو لُٹاتے ہیں اب بھی اپنی دانائی
    رزم گاہِ ہستی میں اپنوں اور غیروں نے
    جس سے روشنی پائی، جو عمل کی راہوں میں
    کتنے کم نگاہوں کی مشکلوں میں کام آئی

    ہم نے ان چراغوں کو، ہم نے اِن صداؤں کو
    اپنی خواب گاہوں میں بارہا بلایا ہے
    حال سب سنایا ہے اپنی آرتزوؤں کا
    اپنے دل کے زخموں کا بھید سب بتایا ہے
    دو قدم چل کر داغ کچھ نئے ابھرے
    پھر خلائے بے پایاں، پھر وہی اندھیرے تھے
    ہر چراغ سے روٹھی جیسے اپنی بینائی
    ہر صدا پہ الب تھی جیسے اپنی تنہائی
    ۔۔۔۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر