آج کی حدیث

سیما علی

لائبریرین
‏ہر دعا شرف قبولیت سے محروم رہتی ہے جب تک اس میں پاک نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم پر درود پاک نہ پڑھا جائے-
‏طبرانی : 1/220
 

سیما علی

لائبریرین
‏پیارےآقا ﷺ نے فرمایا*
‏جس نے پڑھا
‏ "لاحول ولاقوت الا باللہ"
‏اسکو 99 امراض سےشفاءحاصل ہوگی
‏جس میں سب سےچھوٹی بیماری
‏رنج و غم ہے
‏(الحاکم:1990)
 

سیما علی

لائبریرین
رسول ﷺ نے فرمایا
‏جنت میں ایسے لوگ داخل ہونگے جن کے
‏دل چڑیوں کی طرح نرم ہو گے
‏[ صحیح مسلم : حدیث نمبر : 2840 ]
 

سیما علی

لائبریرین
حضرت انس رضی اللہ عنہ سے نبی پاک صلی اللہ علیہ والہ وسلم نےفرمایا میرے بیٹے جب تم اپنے گھر والوں سے ملو توسلام کرو یہ سلام تم پر اورگھر والوں پر برکت کا سبب ہو گا
‏ترمذی:2698
 

سیما علی

لائبریرین
رسول اللّٰه صَلَّى اللّٰهُ عَلَيْهِ وَسَلَّم نے فرمایا
‏بندہ اپنے پروردِگار کے قریب اس وقت ہوتا ہے
‏جب وہ سجدہ کی حالت میں ہو
‏[ صحیح مسلم ]
 

سیما علی

لائبریرین
اللہ تعالٰی کے ہاں کن اعمال کی قبولیت ہے
حضرت ابو امامہ باہلی رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں
کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے :
اللہ تعالیٰ اعمال میں سے صرف اسی عمل کو قبول فرماتے ہیں
جو خالص ان ہی کے لیے ہو اور اس میں صرف اللہ تعالیٰ
ہی کی خوشنودی مقصود ہو۔
(نسائی)
 

سیما علی

لائبریرین
حضرت زید بن ارقم رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : میں تم میں ایسی دو چیزیں چھوڑے جارہا ہوں کہ اگر میرے بعد تم نے انہیں مضبوطی سے تھامے رکھا تو ہرگز گمراہ نہ ہوگے۔ ان میں سے ایک دوسری سے بڑی ہے۔ اللہ تعالیٰ کی کتاب آسمان سے زمین تک لٹکی ہوئی رسی ہے اور میری عترت یعنی اھلِ بیت اور یہ دونوں ہرگز جدا نہ ہوں گی یہاں تک کہ دونوں میرے پاس حوض کوثر پر آئیں گی پس دیکھو کہ تم میرے بعد ان سے کیا سلوک کرتے ہو؟
سنن الترمذی ابواب المناقب باب فی مناقب اھل بیت النبی صفحہ نمبر:859 حدیث نمبر:3788 ( مکتبہ دارالسلام للنشر والتوزیع )
 

سیما علی

لائبریرین
رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم نے فرمایا
جاگیریں نہ بناؤ ورنہ تم دنیا ہی میں مصروف رہ جاؤ گے
/ ترمذی 2328
 

سیما علی

لائبریرین
‏‏‏‏ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے خرچ کیا ایک جوڑا (یعنی دو پیسے یا دو روپیہ یا دو اشرفی)اپنے مال سے اللہ کی راہ میں پکارا جائے گا جنت میں، اے اللہ کے بندے! یہاں آ تیرے لئے یہاں خیر و خوبی ہے پھر جو نماز پڑھنے والوں میں سے ہو گا وہ نماز کے دروازہ سے پکارا جائے گا۔ اور جو جہاد کرنے والوں میں سے ہو گا وہ جہاد کے دروازہ سے اور جو صدقہ دینے والوں میں سے ہو گا وہ صدقہ کے دروازہ سے اور جو روزہ رکھنے والوں میں سے ہو گا وہ روزے کے دروازے سے۔“ سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے عرض کی کہ اللہ کے رسول! جو سب دروازوں سے پکارا جائے گا۔ اس کو کیا کام کرنا ضروری ہے؟ کیا کوئی ایسا ہو گا جو سب دروازوں سے پکارا جائے گا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ہاں اور میں (اللہ کے فضل سے) امید رکھتا ہوں کہ تم انہی میں سے ہو گے۔“
صحیح مسلم
حدیث نمبر 2448
 

سیما علی

لائبریرین
(الطبرانی: 203/1-651 ، مسند احمد بن حنبل: 430/3-15634)
ترجمہ: حضرت عمرو بن جموح
ra:
روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا: بندہ اس وقت ایمان کی حقیقت کو نہیں پا سکتا جب تک کہ وہ اللہ کے لئے ہی (کسی سے) ناراض اور اللہ کے لئے (کسی سے) راضی نہ ہو (یعنی اسکی رضا کا مرکز و محور فقط ذاتِ الہٰی ہو جائے) اور جب اس نے یہ کام کر لیا تو اس نے ایمان کی حقیقت کو پا لیا، اور بےشک میرے احباب اور میرے اولیاء وہ لوگ ہیں کہ میرا ذکر کرنے سے وہ یاد آجاتے ہیں اور ان کا ذکر کرنے سے میں یاد آجاتا ہوں۔ (میرے ذکر سے انکی یاد آجاتی ہے اور ان کے ذکر سے میری یاد آ جاتی ہے یعنی میرا ذکر ان کا ذکرہے اور ان کا ذکر میرا ذکر ہے)“۔
 

سیما علی

لائبریرین

عَبْدِ اللهِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ جَزْءٍ رضی الله عنه قَالَ: مَا رَأَيتُ أَحَدًا أَکْثَرَ تَبَسُّمًا مِنْ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ. ’’حضرت عبداللہ بن حارث بن جزء رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے زیادہ خوبصورت مسکرانے والا کوئی نہیں دیکھا۔‘‘ (سنن ترمذی، کتاب: المناقب عن رسول اللہ ﷺ، باب: في بشاشة النبي ﷺ، حدیث نمبر: 3641​

 
Top