یاسر علی's Recent Activity

  1. یاسر علی نے برائے اصلاح :تھا پیار ان سے مگر کچھ انہیں بتا نہ سکے لڑی میں تبصرہ کیا۔

    الف عین

    ‏اکتوبر 21, 2020 4:37 صبح
  2. یاسر علی نے برائے اصلاح :تھا پیار ان سے مگر کچھ انہیں بتا نہ سکے لڑی میں تبصرہ کیا۔

    دوبارہ دیکھئے جناب! انہیں پلانا تھا امرت کا جام کیا ہم کو فقط جو زہر کے دو گھونٹ بھی پلا نہ سکے یا پلانا کیا تھا انہوں نے ہی جام امرت...

    ‏اکتوبر 20, 2020 6:27 صبح
  3. یاسر علی نے برائے اصلاح :تھا پیار ان سے مگر کچھ انہیں بتا نہ سکے لڑی میں تبصرہ کیا۔

    الف عین

    ‏اکتوبر 19, 2020 4:07 صبح
  4. یاسر علی نے نئی لڑی شروع کی۔

    برائے اصلاح :تھا پیار ان سے مگر کچھ انہیں بتا نہ سکے

    الف عین محمّد احسن سمیع :راحل: محمد خلیل الرحمٰن تھا پیار ان سے مگر کچھ انہیں بتا نہ سکے ہمیں یہ دکھ ہے محبت کو آزما نہ سکے کبھی یہ...

    فورم: اِصلاحِ سخن

    ‏اکتوبر 18, 2020 4:50 صبح
  5. یاسر علی نے برائے صلاح: پیڑ جس پر ثمر نہیں ہوتا لڑی میں تبصرہ کیا۔

    اب دیکھئے جناب! الف عین میرے سینے میں بس رہا ہے دل ہائے اپنا مگر نہیں ہوتا دل میں شازش کرے تُو جو میثم دل مرا بے خبر نہیں ہوتا

    ‏اکتوبر 17, 2020 5:50 صبح
  6. یاسر علی نے برائے صلاح: پیڑ جس پر ثمر نہیں ہوتا لڑی میں تبصرہ کیا۔

    اب دیکھئے جناب! الف عین دل مرے پہلو ہی میں رہتا ہے یا میرے سینے میں قلب رہتا ہے ہائے! اپنا مگر نہیں ہوتا حوصلے کے سوا محبت کا کبھی...

    ‏اکتوبر 16, 2020 5:29 صبح
  7. یاسر علی نے نئی لڑی شروع کی۔

    برائے صلاح: پیڑ جس پر ثمر نہیں ہوتا

    الف عین محمد خلیل الرحمٰن پیڑ جس پر ثمر نہیں ہوتا اس کو پھر کوئی ڈر نہیں ہوتا زلزلے آئیں فکر کیا ان کو جن کا کوئی بھی گھر نہیں...

    فورم: اِصلاحِ سخن

    ‏اکتوبر 15, 2020 5:29 صبح
  8. یاسر علی نے برائے اصلاح :کبھی ہماری جو بستا تھا یار آنکھوں میں لڑی میں تبصرہ کیا۔

    بہت بہت شکریہ سر!

    ‏اکتوبر 14, 2020