کرن کرن سورج

الف نظامی نے 'غیر افسانوی ادب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 1, 2008

  1. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    10,511
    موڈ:
    Brooding
    کرن کرن سورج از واصف علی واصف سے اقتباسات
    محب اور محبوب
    محب اور محبوب کی الگ الگ تعریف مشکل ہے۔ محبت کے رشتے سے دونوں ہیں۔ کسی کی کسی پر فوقیت کا بیان نہیں ہوسکتا۔ مقام محبوب مقام محب سے کم تر یا بر تر نہیں کہا جاسکتا۔ ایک کی ہستی دوسرے کے دم سے ہے۔ دنیاوی رشتوں میں محب اور محبوب کا تقابل ناممکن ہے۔ حقیقت کی دنیا میں تو اور بھی ناممکن۔ اللہ کو اپنے محبوب سے کتنی محبت ہے کہ اسے باعث تخلیق کائنات فرما دیا۔ اللہ اپنے فرشتوں کے ہمراہ اپنے محبوب پر دورد بھیجتا ہے ، اس کے ذکر کو بلند کرتا ہے ، اس کی شان بیان کرتا ہے اور محبوب اپنے اللہ کی عبادت کرتے ہیں ، اس کی تسبیح بیان فرماتے ہیں ، اس کے لیے زندگی اور زندگی کے مشاغل وقف فرماتے ہیں۔

    کامیابی اور ناکامی
    کامیابی اور ناکامی اتنی اہم نہیں جتنا کہ انتخاب مقصد۔ نیک مقصد کے سفر میں ناکام ہونے والا برے سفر میں کامیاب ہونے والے سے بدرجہا بہتر ہے۔ ایسا ممکن ہوسکتا ہے کہ ایک آدمی مقصد حاصل کرنے میں کامیاب ہوجائے لیکن اس کی زندگی ناکام ہو۔

    کلام ، تاثیر اور صداقت
    جھوٹا آدمی کلام الہی بھی بیان کرے تو اثر نہ ہوگا۔ صداقت بیان کرنے کے لیے صادق کی زبان چاہیے۔
    بلکہ صادق کی زبان ہی صداقت ہے۔ جتنا بڑا صادق ، اتنی بڑی صداقت

    انسان کا اصل جوہر صداقت ہے ، صداقت مصلحت اندیش نہیں ہوسکتی۔ جہاں اظہار صداقت کا وقت ہو وہاں خاموش رہنا صداقت سے محروم کر دیتا ہے۔ اس انسان کو صادق نہیں کہتے جو اظہار صداقت میں ابہام کا سہارا لیتا ہو۔

    حکومت
    حکومت نااہل ہوسکتی ہے ، غیر مخلص نہیں ۔ ملک سے مخلص ہونا حکومت کی ذمہ داری بھی ہے اور ضرورت بھی۔ ملک سلامت رہے گا تو حکومت قائم رہ سکتی ہے۔ اس لیے حکومت ہمیشہ مخلص ہی ہوتی ہے۔
    حزب اختلاف حکومت کو غیر مخلص کہتا ہے اور حکومت اپنے مخالفوں کو وطن دشمن کہتی ہے ، جو انسان دس سال سے زیادہ عرصے سے ملک میں رہ رہا ہو وہ ملک دشمن نہیں ہوسکتا۔ جس کے ماں باپ کی قبر اس ملک میں ہے وہ غدار نہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    اپنی دعاوں میں اللہ کریم کو راہ نہ سجھایا کریں کہ اسے یوں کرنا چاہیے ، ایسے نہ کرنا چاہیے۔ اس قوم پر رحم کرنا چاہیے ، فلاں پر غضب اور فلاں کو تباہ کرنا چاہیے۔ کچھ لوگ اپنے آپ کو اللہ کا ایڈوائزر سمجھتے ہیں اور اسے کہتے رہتے ہیں: یہاں فضل کرو ۔ یہاں تباہی کا گولہ پھینکو ۔ اس کو نیست و نابود کردو۔ مجھے اور میری اولاد کو سلطان سلاطین بنا دو۔
    ایسا قطعا نہیں۔ اللہ نے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے دشمن کو بھی تباہ نہیں کیا۔ شرار بولہبی ، چراغ مصطفوی کی ضد ہے لیکن پہچان ہے۔ شیطان اللہ کا دشمن ہے ، اس کی ضد ہے لیکن پہچان ہے۔ سنت اللہ یہ نہیں کہ اللہ اپنے دشمنوں کو زندہ ہی نہ رہنے دے۔ اللہ کا دستور کچھ ایسا ہے جیسے نہ ماننے والوں سے کہہ رہا ہو کہ "تم نہ مانو ، میں تمہاری بینائی نہیں چھین لوں گا۔ خوراک دینا بند نہ کروں گا۔ میں اپنے احسانات کرتا رہوں گا۔ تم بغاوت کے بعد آخر میرے ہی پاس آو گے ۔ اور اس دن جان لو گے کہ تم کیا کرتے رہے تھے"
    اللہ سے کسی کی تباہی نہ مانگو۔ سب کی اصلاح ، سب کی خیر ، سب کا بھلا مانگو۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جو شخص اس لیے اپنی اصلاح کر رہا ہے کہ دنیا اس کی تعریف و عزت کرے ، اس کی اصلاح نہیں ہوگی۔ اپنی نیکیوں کا صلہ دنیا سے مانگنے والا انسان نیک نہیں ہوسکتا۔ ریا کار اس عابد کو کہتے ہیں جو دنیا کو اپنی عبادت سے مرعوب کرنا چاہے۔

    دانا ، نا دانوں کی اصلاح کرتا ہے ، عالم بے علم کی اور حکیم بیماروں کی۔ وہ حکیم علاج کیا کرے گا جس کو مریض سے محبت ہی نہ ہو۔ اسی طرح وہ مصلح جو گنہگاروں سے نفرت کرتا ہے ان کی اصلاح کیا کرے گا۔ ہر صفت اپنی مخالف صفت پر اثر کرنا چاہتی ہے ، لین نفرت سے نہیں ، محبت سے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    غیر یقینی حالات پر تقریریں کرنے والے کتنے یقین سے اپنے مکانوں کی تعمیر میں مصروف ہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بچہ بیمار ہو تو ماں کو دعا مانگنے کا سلیقہ خود ہی آجاتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 3
  2. محمد وارث

    محمد وارث منتظم

    مراسلے:
    14,268
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    شکریہ نظامی صاحب شیئر کرنے کیلیئے، واصف صاحب کی سبھی تحریریں لا جواب ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,096
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت ہی زبردست بہت ہی خوب اقتباس شیئر کیا ہے آپ نے۔ شکریہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  4. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    10,511
    موڈ:
    Brooding
    پسندیدگی کا بہت شکریہ محمد وارث صاحب ۔
    پسندیدگی کا بہت شکریہ شمشاد صاحب۔
    واصف علی واصف کی تحریریں حقیقی معنوں میں تفکر کا نتیجہ ہیں۔
     
    • متفق متفق × 1
  5. یونس رضا

    یونس رضا معطل

    مراسلے:
    1,732
    ارے بھئی نظامی صاحب ماشااللہ ۔۔۔۔۔ بہت خوب ۔۔۔۔۔ ایسی تحریروں پر تعریف بھی گنگ ہو جاتی ہے۔۔۔۔ جزاک اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. سارہ خان

    سارہ خان محفلین

    مراسلے:
    14,116
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    شکریہ الف نظامی شیئر کرنے کے لئے ۔۔:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    10,511
    موڈ:
    Brooding
    پسندیدگی کا بہت شکریہ یونس رضا ۔
    پسندیدگی کا بہت شکریہ سارہ خان۔
     
  8. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    10,511
    موڈ:
    Brooding
    کسی بڑے کام کو شروع کرنے سے پہلے اس کے لیے قوی جواز اور قوی دلیل کا ہونا ضروری ہے۔ سفر پر جاتا ہو تو پہلے جانے والے مسافروں سے حالات سفر معلوم کرلینا ضروری ہے۔ دریا کشتی کے ذریعے بھی عبور کرنا ہو تو تیرنے کا علم جاننا بہتر ہوتا ہے۔ بڑے کام کے لیے بڑی دلیل ضروری ہے۔ ہر کام ہر آدمی کا نہیں ہوتا۔ علم کا راستہ طے کرنے والے اور طرح کے لوگ ہوتے ہیں ، تعلیم حاصل کرنے والے اور گھروں میں رہنے والے اور ہیں ، سفر اختیار کرنے والے اور۔ اللہ کی راہ میں نکلنے والے اور ہیں اور ان کا راستہ روکنے والے اور۔ قوی دلیل جذبہ شہادت تھا ، سجدہ شبیر تھا۔ بڑا کام تھا ، بڑی دلیل تھی ، بڑا جواز تھا ، بڑا نتیجہ ہے۔ بڑی بات ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ہر مبلغ کو یہ سوچنا چاہیے کہ جو آدمی اسے پسند نہیں کرتا وہ اس کے دین کو کیسے پسند کرے گا۔ دین کو پسندیدہ ظاہر کرنے کے لیے اپنا عمل پسندیدہ بناو۔ اپنی شخصیت پسندیدہ بناو۔ دوسرے کا مزاج ، اس کی عقل ، اس کی ضرورت کو سمجھ کر اس کو تبلیغ کرو۔ ناسمجھ کے ہاتھ میں صداقت کی لاٹھی دوسروں کو بدظن کردے گی۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اللہ کے ذکر کے بغیر اطمینان قلب میسر نہیں آسکتا۔
    جس عمل سے اطمینان قلب میسر آئے وہ عمل بھی ذکر کا حصہ ہے۔
    جس مقام یا انسان کے قرب سے اطمینان قلب حاصل ہو وہ مقام اور وہ انسان بھی اللہ کے ذکر سے متعلق ہے۔
    مثلا ذکر سے اطمینان ہے تو ذاکر سے بھی اطمینان ملے گا اور مقام ذکر بھی باعث اطمینان قلب و جاں ہوگا۔ یوں کہیے کہ خانہ کعبہ کی زیارت ، مدینہ منورہ کی حاضری ، کربلا معلے کی حاضری ، بزرگان دین کے آستانوں کی حاضری ، اپنے مشائخ عظام کے در دولت پر حاضری سب ہی اطمینان کے ابواب ہیں۔ اور یہ سب ذکر الہی کی عظیم منزل کے عظیم راستے کے مقامات ہیں۔
    نیت اللہ ہو ، سارا سفر اللہ کا ذکر ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    آرزو کا پیدا ہونا فطری بات ہے۔ انسانوں میں آرزوئیں پیدا ہوتی ہی رہتی ہیں۔ کوئی آرزو ، شکست آرزو تک سفر کرتی ہے۔ کوئی آرزو انسان کو بے نیاز آرزو کردیتی ہے۔ کوئی آرزو اسے کُوبکُو پھراتی ہے۔ کوئی آرزو اس کو اپنی ذات کے روبرو لاتی ہے اور کوئی آرزو اسے خوش قسمتی سے سرخرو کردیتی ہے۔
    کون سی آرزو کیا کرتی ہے ، اس کا علم انسان کو ہونا چاہیے۔ ورنہ آرزو جگر کا لہو بن کر خون کا آنسو بنے گی۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جو لوگ اللہ کی تلاش میں نکلتے ہیں وہ انسان تک ہی پہنچتے ہیں۔ اللہ والے لوگ انسان ہی تو ہوتے ہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حضور اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کو کائنات کے لیے رحمت بنا کر بھیجا گیا۔ ہم پر فرض ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کا انداز رحمت سب مخلوق تک پہنچائیں۔ اسلام خود ہی پہنچ جائے گا۔ دنیا کو جب رات کی تاریکی کے بعد روشنی میسر آتی ہے تو اس کی نظریں خودبخود سورج کی طرف اٹھ جاتی ہیں۔ سورج کا دین روشنی ہے۔ اپنے آپ کو منوانا نہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    اپنے ماتحتوں کے ساتھ حسن سلوک یہی ہے کہ انہیں ماتحت نہ سمجھو۔ وہ انسان ہیں۔ اسی طرح زندہ جیسے آپ۔ ان کے جذبات و احساسات اور ان کی ضروریات کا خیال رکھا کرو۔ اللہ راضی رہے گا۔ جو سلوک اللہ سے چاہتے ہو اپنے ماتحت کے ساتھ کیا کرو۔ ماتحت بھی آزمائش ہے اور افسر بھی آزمائش۔ چھوٹا چھوٹا نہ رہا تو بڑا بڑا نہ رہے گا ، انسان نظر آئیں گے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ہر کام کا ایک وقت ہوتا ہے اور ہر وقت کے لیے ایک کام ہوتا ہے۔ بے وقت کی نماز بھی نماز نہیں کہلائی جاسکتی۔ حج کے ایام ہیں ۔ صیام کا مہینہ ہے ۔ نیند کا وقت ہے ۔ تلاش رزق کا وقت ہے ۔ تعلیم کا زمانہ ہے۔ علم کا دور الگ ہے ۔ خواہش کے زمانے اور ہیں۔ فتوحات کے ایام اور ہیں۔ شکست کی گھڑی اور ہے ۔ عمل کا میدان اور ہے ۔ جزا سزا کا وقت الگ مقرر کر رکھا ہے۔ نہ خوشی مستقل ہے نہ غم ہمیشہ رہ سکتا ہے۔ ہر کام اپنے مقررہ وقت پر حسین و موزوں لگتا ہے ورنہ بے زیب و بدنما۔
    علم و عمل کے زمانے پہچاننے چاہییں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    خالق کا گلہ مخلوق کے سامنے نہ کرو اور مخلوق کا شکوہ خالق کے سامنے نہ کرو -------- سکون مل جائے گا۔
    فرض اور شوق یکجا کرو -------- سکون مل جائے گا
    کسی کا سکون برباد نہ کرو ------- سکون مل جائے گا
    دل سے کدورت نکال دو-------- سکون مل جائے گا
    ہوس زر اور لذت وجود چھوڑ دی جائے تو زندگی آسان ہوجاتی ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    انسان پریشان اس وقت ہوتا ہے جب اس کے دل میں کسی بڑے مقصد کے حصول کی خواہش ہو لیکن اس کے مطابق صلاحیت نہ ہو۔ سکون کے لیے یہ ضروری ہے کہ یا تو خواہش کم کی جائے یا صلاحیت بڑھائی جائے۔ ہر خواہش کے حصول کے لیے ایک عمل ہے ۔عمل نہ ہو تو خواہش ایک خواب ہے۔ ہم جیسی عاقبت چاہتے ہیں ویسا عمل کرنا چاہیے۔ کامیابی محنت والوں کے لیے ، جنت ایمان والوں کے لیے ، اور عید روزہ داروں کے لیے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دین و دنیا ----- جس شخص کے بیوی بچے اس پر راضی ہیں اس کی دنیا کامیاب ہے اور جس کے ماں باپ اس پر خوش ہیں اس کا دین کامیاب۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    جو سچا نہیں وہ کسی سچے کا انتظار نہیں کرسکتا۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    ہم ایک عظیم قوم بن سکتے ہیں اگر ہم معاف کرنا اور معافی مانگنا شروع کردیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    سب سے بڑی قوت ، قوت برداشت ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    اللہ کو ماننا چاہیے ، اللہ کو جاننا مشکل ہے۔ ہمارے ذمے تسلیم ہے تحقیق نہیں۔ تحقیق دنیا کی کرو اور تسلیم اللہ کی۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ ہم دنیا کو تسلیم کرلیں اور اللہ کی تحقیق کرنا شروع کردیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    خوش نصیب وہ انسان ہے جو اپنے نصیب پر خوش رہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اگر اللہ کے محبوب نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا۔ اور اگر کچھ بھی نہ ہوتا تو صرف اللہ ہوتا۔ اور صرف اللہ ہوتا تو کیا ہوتا۔ حاصل یہ کہ ہمیں اللہ اور اللہ کے حبیب کے مقامات پر بحث نہ کرنی چاہیے۔ اللہ کا مقام اللہ کا حبیب جانے اور حبیب کا مقام اللہ جانے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نماز پڑھنے کا حکم نہیں ، نماز قائم کرنے کا حکم ہے۔ نماز اس وقت قائم ہوتی ہے ، جب انفرادی اور اجتماعی زندگی تابع فرمان الہی ہو۔ ضروری ہے کہ ملت اسلامیہ ایک انداز اور ایک رخ میں اللہ کے حکم کے مطابق سفر کرے۔ مسلمان کے لیے ضروری ہے کہ وہ جس طرح حالت نماز میں اپنے آپ کو خدا کے سامنے سمجھتا ہے اسی طرح نماز کے بعد بھی خدا کے روبرو رہے اور اس کا کوئی عمل ایسا نہ ہو جو ملی مفاد کے خلاف ہو۔اولی الامر کا فرض ہے کہ نماز قائم کرائے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    تسلیم کے بعد تحقیق گمراہ کردیتی ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بدی کی تلاش ہو تو اپنے اندر جھانکو۔ نیکی کی تمنا ہو تو دوسروں میں ڈھونڈو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ایک کافر اپنے کفر پر نازاں پھرتا ہے ، ایک مومن اپنے ایمان پر کیوں فخر نہیں کرتا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    پھول کی ایک دن کی زندگی ، کیکر کی کئی سال کی زندگی سے بہتر ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    موت سے زیادہ خوفناک شے موت کا ڈر ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بے اعتدالی کی اس سے بڑی کیا سزا ہوسکتی ہے کہ انسان کو خوراک کے بجائے دوا کھانا پڑے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اس کی عطاوں پر الحمد للہ اور اپنی خطاوں پر استغفر اللہ کرتے ہی رہنا چاہیے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مسلمان کے لیے اہل قرآن ہونا ہی کافی نہیں۔ حامل قرآن مبین کے ساتھ نسبت کا مضبوط ہونا بہت ہی ضروری ہے۔ قرآن کا اصول حضور کی زندگی ہے۔ یا یہ کہ حضور کی زندگی اور قرآن کے اصول زندگی میں فرق نہیں۔یہاں تک کہ نزول قرآن سے پہلے بھی حضور اکرم کی زندگی اصول قرآن کے مطابق تھی۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    یہ اللہ کا دعوی ہے کہ
    وما ارسلنک الا رحمۃ للعلمین
    اس نے اپنے حبیب کو جہانوں کی رحمت بنا کر بھیجا ہے۔ اسے یاد رکھنا چاہیے۔
    اگر کبھی یوم حساب میں اپنے اعمال کی کمی کی وجہ سے اور جلالت کبریا سے خوف و لرزہ طاری بھی ہو تو یہ یاد رہنا چاہیے کہ اللہ کے حبیب کا نام ہی شفاعت کا ذریعہ ہوسکتا ہے۔
    اب احتساب میرے گناہوں کا چھوڑیے
    اب واسطہ دیا ہے تمہارے حبیب کا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    قرآن بھی وہی ، شریعت بھی وہی ، اللہ بھی وہی ، اللہ کے حبیب صلی اللہ علیہ والہ وسلم بھی وہی ، سورج چاند ستارے بھی وہی ، پیدائش و موت بھی وہی، پھر زندگی وہ نہیں ، سماج بدل گیا۔ غور کریں کہ کیا چیز بدل گئی ہے۔ اب سکون اور خوشی کس طرح حاصل ہو، اس زمانے میں ، اس زمانے کے انسان کو ، اسی زندگی میں۔
    کتابیں پڑھنے کی بات نہیں ،غور کرنے کی بات ہے۔ زندگی کافرانہ تہذیب میں ڈھل رہی ہے ، نتیجہ اسلامی کیسے ممکن ہو۔ بچوں کو انگریزی سکول میں پڑھاتے ہو اور ان سے توقع کیا رکھتے ہو۔
    تضادات کی دنیا میں سکون محال ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی بات پر کسی اور بات کو فوقیت دینا ایسے ہے جیسے شرک۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ہم لوگ فرعون کی زندگی چاہتے ہیں اور موسی کی عاقبت
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نیکی کا نام لینا بھی نیکی ہے۔ نیک بات سننا بھی نیکی ہے۔ نیک مقام دیکھنا بھی نیکی ہے۔ نیک انسان سے ملنا بھی نیکی ہے۔ نیک لوگوں کا تذکرہ کرنا بھی نیکی ہے۔ نیک خیال بھی نیکی ہے۔ نیک علم بھی نیکی ہے۔ نیک عمل تو خیر ہے ہی نیکی۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    بہترین کلام وہی ہے جس میں الفاظ کم اور معنی زیادہ ہوں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    مکمل وہ چیز ہوتی ہے جس میں کسی اضافے کی ضرورت نہ ہو۔ نہ ترمیم نہ تخفیف۔ سوچیں کہ دین کب مکمل ہوا تھا؟ اس وقت اس دین کا جتنا علم موجود تھا ، وہی کافی ہے۔ علم میں اضافہ ، عمل میں پختگی پیدا نہیں کرسکتا۔ نئی نئی راہیں تلاش کرنے والا مسافر منزل سے رہ جاتا ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    یاد کا نام درود ہے ، ادب کا نام فیض ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    سننے والے کا شوق ہی بولنے والے کی زبان کو تیز کرتا ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ناپسندیدہ انسان سے پیار کرو ، اس کا کردار بدل جائے گا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    وہ چیز جو بے سوال کر دے ، وہ لاجواب ہوتی ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اگر انسان کو اچانک نگاہ مل جائے تو وہ خوف سے پاگل ہو جائے یہ دیکھ کر کہ یہ زمین انسانی ڈھانچوں سے کس طرح بھری پڑی ہے۔ یہ ویرانے کبھی آباد تھے ، یہ آبادیاں بھی کبھی ویرانے بن جائیں گی۔ دنیا میں کون کون نہیں آیا ، یہاں کیا کیا نہیں ہوچکا۔
    کتنے باغ جہان میں لگ لگ کر سوکھ گئے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جو انسان اللہ کی طرف جتنا عروج کرتا ہے اتنا ہی انسانوں کی خدمت کے لیے پھیلتا ہے۔ عمودی سفر ، افقی سفر کے متناسب ہوتا ہے۔ صاحب معراج ، رحمۃ للعلمین ہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جب تک مخبر صادق صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی صداقت پر اعتماد نہ ہو ہم توحید کی تصدیق نہیں کرسکتے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    تضاد : امن کی خاطر جنگ لڑنا یا انسانیت کی خدمت کے نام پر انسانوں کو ہلاک کرنا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    گلاب کا نام خوشبو کے پردوں پر سفر کرتا ہے۔ گلاب ، ذات ہے اور خوشبو ، صفت۔
    ذات اپنی صفات کے حوالے سے پہچانی جاتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 3
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    9,550
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ہمارے معاشرے کو آج اس چیز کی اشد ضرورت ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر