1. گوگل کروم کے حالیہ نسخہ 53 میں محفل کا اردو ایڈیٹر بعض مقامات پر درست کام نہیں کر رہا۔ جب تک اس کا کوئی حل نہ دریافت کر لیا جائے، احباب گوگل کروم کے پچھلے نسخوں یا دیگر کسی براؤزر کا استعمال کر سکتے ہیں۔ اس بلائے نا گہانی سے ہم کافی پریشان ہیں اور جلدی ہی اس کا کوئی حل دریافت کرنے کی کوشش جاری ہے۔ تفصیل ملاحظہ فرمائیں!

    اعلان ختم کریں

زبانِ عذب البیانِ فارسی سے متعلق متفرقات

حسان خان نے 'ادبیات و لسانیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 22, 2014

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فیس بُک پر تاجکستانیوں سے استفسار کرنے پر معلوم ہوا ہے کہ جنوبی تاجکستان کے بعض گفتاری لہجوں میں 'یَقَن' استعمال ہوتا ہے، جبکہ ایک تاجکستانی نفر نے بتایا ہے کہ اُس کے لہجے میں 'یقه' نہیں بلکہ 'یاقه' استعمال کرتے ہیں۔ اِس کی بھی تصدیق ہو گئی کہ ایران کے برخلاف، تاجکستان میں 'گریبان' کا استعمال زیادہ ہوتا ہے، اور اگر 'یقه' کہا جائے تو تمام تاجکستانی اِس کا معنی نہیں سمجھیں گے، لیکن 'گریبان' ہر تاجکستانی کے لیے آشنا لفظ ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 6, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    مُو لایِ درزِ چیزی نرفتن: (گفتگو) درست و بی‌عیب بودنِ ‌آن، بدونِ اشتباه بودنِ آن؛ دقیق بودنِ آن؛ آ‌ن‌قدر دقیق و منظم است که مو لای درزِ کارهایش نمی‌رود.
    [فرهنگِ روزِ سخن، صفحه ۱۱۹۴]

    لفظی ترجمہ:
    مُو لایِ درزِ چیزی نرفتن: (گفتاری) کسی چیز کا درست و بے عیب ہونا، کسی چیز کا بے غلطی ہونا، کسی چیز کا دقیق و بے کم و کاست ہونا؛ "وہ اِس قدر دقیق و منظّم ہے کہ اُس کے کاموں کی دَرْز کے درمیان بال نہیں جاتا۔"


    بس ذہن میں رکھنا چاہیے کہ یہ ایرانی گفتاری محاورہ ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 6, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک تاجکستانی شخص نے کہا ہے کہ وہ تاجکستان میں کسی کو نہیں جانتا جو 'یقه' یا 'گریبان' بولتا ہو، سب 'یاقه' کہتے ہیں (جو ضمناً اُزبکی تُرکی میں بھی رائج ہے)، امّا 'گریبان' کو، جو اُس کے نزدیک کتابی لفظ ہے، تمام تاجکستانی سمجھتے ہیں لیکن اُس کو استعمال کرنے والے کم ہیں۔ اُس نے مزید کہا کہ اگر مَیں سوال میں یہ نہ لکھتا کہ 'یقه' کا معنی گریبان ہے تو شاید وہ نہیں سمجھ پاتا کہ میں کس چیز کی بات کر رہا ہوں، کیونکہ وہ 'یقه' نہیں، بلکہ 'یاقه' استعمال کرتے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 6, 2017
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    شمالی تاجکستان کے شہر 'کانِ بادام' سے تعلق رکھنے والے ایک تاجکستانی نے کہا کہ وہاں ہر کوئی 'گریبان' کہتا ہے اور اُس نے 'یخه/یقه/یقا/یاقا' کو یکُم بار سنا ہے۔ اُس کی تائید میں ایک دو دیگر شمالی تاجکستانیوں نے بھی یہی کہا کہ اُنہوں نے کبھی 'یقه' یا 'یاقه' نہیں سنا ہے۔
    ایک تاجکستانی نے کہا کہ اُن کے خانے (گھر) میں 'یقا' استعمال ہوتا ہے۔
    ایک شخصِ دیگر نے بتایا کہ یہ لفظ 'یقن، یاقه اور یخن' کی شکلوں میں تاجکستانی گُوئِشوں (بولیوں) میں موجود ہے۔
    ایک شخص نے بتایا کہ تاجکستان میں 'کَشْتَل' نیز کہتے ہیں، جو اِسی 'یاقه/یخن' کا مترادف ہے۔ 'فرہنگِ تفسیریِ زبانِ تاجیکی' میں بھی یہ کلمہ 'علاقائی لفظ' کے طور پر درج ہے۔
    شمالی تاجکستان میں ازبکستان کی سرحد کے پاس واقع شہر ظفرآباد کے ایک شخص نے بتایا کہ اُس کے علاقے میں 'یاقه' بھی استعمال ہوتا ہے، لیکن اُس کے لہجے میں اکثراً گِریوُون، گِریبُون یا گِریبان کہتے ہیں۔
    ازبکستان ہی کی سرحد کے ساتھ واقع شہر 'مست‌چاه' کے باشندے نے بتایا کہ وہاں کبھی بھی 'یاقه' یا 'یقه' نہیں کہتے، بلکہ 'گِریبُون' یا گاہے 'کَشتَل' کہتے ہیں۔
    اکثر افراد کی رائے یہ تھی کہ وہ 'گریبان' کے استعمال کو بہتر سمجھتے ہیں۔
    بہ علاوہ، فارسی ویکی پیدیا کے توسط سے معلوم ہوا ہے کہ افغان فارسی میں 'یخن' رائج ہے۔

    یعنی، اِن سب جوابوں سے یہ نتیجہ نکالا جا سکتا ہے کہ یہ ترکی لفظ اور اُس کی مختلف شکلیں شمالی تاجکستان کی نسبت جنوبی تاجکستان میں زیادہ رائج ہیں، اور شمالی تاجکستان میں مردُم معمولاً گریبان ہی استعمال کرتے ہیں۔ لیکن کئی تاجکسانی مردُم زبانِ فارسی میں مستعمَل اِس تُرکی لفظ کا معنی بھی سمجھ جائیں گے۔
    نیز، یہ بھی قابلِ غور چیز ہے کہ ہر فارسی گو ملک میں فارسی کے کئی لہجے اور زبانچے ہیں، اور ہر زبانچے میں استعمال ہونے والے الفاظ، محاورات اور دستوری قواعد دوسرے زبانچے سے مختلف ہیں، لہٰذا ایسے سوالوں کے جوابات متنوع ہی ہوتے ہیں اور ہر کَس اپنے اپنے علاقائی لہجے یا اپنی شخصی پسند و ناپسند کے لحاظ سے جواب دیتا ہے۔
    فارسی کے اِن طرز طرز کے اور یک دیگر سے بالکل مختلف لہجے بولنے والنے افراد کو معیاری فارسی متحد کرتی ہے جو ہر جگہ یگانہ ہی ہے۔ معیاری ادبی فارسی ہی فارسی گو دنیا کے لسانی اتّحاد کی ضامن ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 7, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک تاجکستانی شخص نے آگاہ کیا ہے کہ شہرِ پنجَکنت میں گریبان کے لیے 'یخک' استعمال ہوتا ہے۔
    اِس سے ظاہر ہوا کہ معمولی چیزوں کے لیے بھی فارسی کے گفتاری زبانچوں میں ایک دوسرے سے مختلف الفاظ رائج ہیں۔ اور یہ سارے جوابات اُن افراد نے دیے ہیں جو تاجکستان ہی کی حدود میں رہتے ہیں۔ ملکی سرحدوں سے بیرون تو یہ زبانچے مزید مختلف ہو جاتے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 7, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تواند کردن = تواند کرد = وہ کر سکے، وہ کر سکتا ہے
    توانست کردن = توانست کرد = وہ کر سکا

    معاصر معیاری فارسی میں 'توانَد' اور 'توانِست' کے بعد عموماً مصدرِ تامّ یا مصدرِ مُرخّم کی بجائے فعل کی حالتِ شرطی یعنی 'بِکُنَد/کُنَد' وغیرہ استعمال ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    علامہ شبلی نعمانی کی کتاب 'شعرالعجم' پر محمود خان شیرانی نے ایک علمی تنقید لکھی تھی۔ اُن کی اُس کتاب کے فارسی ترجمے کو یہاں سے خوانا اور بارگیری کیا جا سکتا ہے:
    نقدِ شعرالعجمِ شبلی نعمانی

    × خوانْنا = پڑھنا؛ بارگِیری = ڈاؤنلوڈ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آج مجھے ایرانی اخبار میں ایک خبر نظر آئی جس کو خوان کر یقیناً آپ کا دل بھی خوش ہو گا۔
    ایران کی ایک گاڑی ساز شرکت (کمپنی) 'سایپا' حال ہی میں ایک نئی گاڑی بازار میں لائی ہے جس کو اُس نے 'کوئیک' کے نام سے موسوم کیا ہے۔ درحالیکہ ایران کی ملّی مجلسِ شورا (پارلیمان) ۱۳۷۵هش/۱۹۹۶ء میں ایک قانون مصوّب کر چکی ہے جس کے تحت 'بیگانہ نام، عنوانات، اور اصطلاحات' ممنوع قرار دے دی گئی تھیں۔ اِسی لیے فرہنگستانِ زبان و ادبِ فارسی کے رئیس غلام‌علی حدّاد عادل نے ایران کے وزیرِ ثقافت سیّد رضا صالحی امیری کے نام مکتوب لکھ کر اُس قانون کی خلاف ورزی کی جانب توجہ دلائی اور اِس 'بیگانہ' نام کو تبدیل کرنے کی خواہش ظاہر کی ہے۔ اُنہوں نے مکتوب میں یہ بھی یاد دلایا ہے کہ پژو (Peugeot) شرکت نے بھی کچھ زمانے قبل 'پژو پرشیا' کے نام سے گاڑی نکالی تھی جس کا نام بعد میں فرہنگستانِ زبان و ادبِ فارسی کی درخواست پر 'پژو پارس' سے تبدیل کرا دیا گیا تھا۔ اُنہوں نے تقاضا کیا ہے کہ اِس مورد میں بھی جلد از جلد اقدامِ لازم ہونا چاہیے تاکہ اِس 'بیگانہ' نام سے استفادہ دیگر شرکتوں کے غیر فارسی نام استعمال کرنے کا اجازت نامہ نہ بن جائے۔
    خبر کا ماخذ
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 11, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مجھے چند روز قبل اِس فارسی بیت کا ترجمہ کرنے کے دوران یہ معلوم ہوا تھا کہ لفظِ 'کمر' کا ایک معنی میانہ و وسطِ کوہ یا کوہ کا درمیانی و وسطی حصہ بھی ہے۔ اِس معنی میں یہ لفظ میں نے مندرجۂ بالا بیت میں یکُم بار دیکھا تھا۔ امروز اتفاقاً مذکورہ لفظ کا یہ استعمال علّامہ اقبال کی ایک اردو بیت میں بھی نظر آیا:
    "خالی ہے کلیموں سے یہ کوہ و کمر ورنہ
    تو شعلۂ سینائی، میں شعلۂ سینائی!"
    بعد ازا‌ں، گُوگل کے توسط سے معلوم ہوا ہے کہ اردو میں یہ لفظ اِس معنی میں کئی بار استعمال ہو چکا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    افغانستان اور زبانِ فارسی
    پاکستان میں کئی افراد کا گمان یہ ہے کہ گویا افغانستان ایک مکمل طور پر پشتون ملک ہے یا یہ کہ وہاں صرف پشتو بولی جاتی ہے۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ افغانستان ایک کثیر نژادی اور کثیر لسانی ملک ہے اور ملکی آئین بھی اِس چیز کو تسلیم کرتا ہے۔ افغانستان کا قانونیِ اساسی کہتا ہے:
    "ملتِ افغانستان اِن نژادی گروہوں پر مشتمل ہے: پشتون، تاجیک، ہزارہ، اُزبک، ترکمن، بلوچ، پشئی، نورستانی، ایماق، عرب، قرغیز، قزلباش، گوجر، براہوی و دیگران۔"
    اکثر افراد اِس سے بھی لاعلم ہیں کہ افغانستان میں نہ صرف زبانِ فارسی بولی اور سمجھی جاتی ہے، بلکہ وہ ملک میں سرکاری زبان کے طور پر بھی رائج ہے۔ افغانستان کے قانونِ اساسی کے مطابق پشتو اور فارسی دونوں ہی کُل ملک کی سرکاری زبانیں ہیں:
    "پشتو، دری، ازبکی، ترکمنی، بلوچی، پشئی، نورستانی، پامیری اور ملک میں رائج دیگر زبانوں میں سے پشتو اور دری [فارسی] ریاست کی رسمی زبانیں ہیں۔
    جن منطقوں میں مردُم کی اکثریت ازبکی، ترکمنی، پشئی، نورستانی، بلوچی یا پامیری میں تکلم کرتی ہے، وہاں پشتو اور دری کے علاوہ وہ زبان تیسری رسمی زبان ہے۔"


    افغانستان کی سرزمین پر سرکاری و رسمی زبان کے طور پر فارسی کا استعمال غزنوی دور سے ہوتا چلا آ رہا ہے۔

    جہاں تک افغانستان کے مختلف نژادی گروہوں اور فارسی گویوں کے تناسب کی بات ہے، تو مجھے وارسا، لہستان (پولینڈ) میں موجود افغان سفارت خانے کی ویب گاہ پر یہ لکھا نظر آیا:
    "سی آئی اے کے اطلاعات نامۂ جہان کے مطابق افغانستان میں نژادی گروہوں کا تناسب تقریباً یہ ہے:
    پشتون ۴۲٪، تاجیک ۲۷٪، ہزارہ ۹٪، ازُبک ۹٪، ایماق ۴٪، ترکمن ۳٪، بلوچ ۲٪، دیگر ۴٪"

    "ہِرات اور فراہ کے شہری علاقوں میں ایک بڑی تاجک آبادی موجود ہے۔ یہ حنفی سنی مسلمان قوم دری زبان بولتی ہے (جو ۵۰% سے زیادہ افغانوں میں بولی جاتی ہے) اور اِس قوم نے مرورِ زمانہ کے ساتھ تُرک ثقافتی عناصر اپنا لیے ہیں۔"
    ماخذ

    یہ بھی ذہن میں رکھنا چاہیے کہ افغانستان میں صرف تاجک ہی فارسی نہیں بولتے، بلکہ ہزاراؤں، ایماقوں، قزلباشوں اور افغان عربوں کی زبان بھی فارسی ہے۔ نیز، کابل اور ہِرات جیسے شہروں میں کئی خانوادے ایسے موجود ہیں جو نسلاً تو پشتون ہیں، لیکن اُن میں گفتاری زبان کے طور پر فارسی مستعمَل ہے۔ افغاستان کا سابق شاہی خاندان محمدزائی اِس کی سب سے خوب مثال ہے۔
    بہ علاوہ، مختلف زبانیں بولنے والے افغانوں کے درمیان ارتباط کے لیے فارسی کا استعمال ہوتا ہے، لہٰذا تقریباً ہر افغان شخص فارسی سمجھ سکتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 23, 2017 10:11 صبح
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
    • زبردست زبردست × 1
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    برادر محمد ریحان قریشی، برائے مشق آپ مولانا رومی کی مندرجۂ ذیل بیت کا اردو میں ترجمہ کیجیے:
    هر که را نبضِ عشق می‌نجهد

    گر فلاطون بُوَد تواَش خر گیر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    نیٹ پر موجود انگریزی سے فارسی کی بہترین معاصر فرہنگ تا حال یہ نظر آئی ہے:
    Farsi123 فارسی یک دو سه
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فارسی میں جب کسی کا شکریہ ادا کیا جاتا ہے تو وہ جواب میں 'خواهش می‌کنم' (لفظی ترجمہ: میں خواہش کرتا ہوں) کہتا ہے۔ ویسے ہی جیسے انگریزی میں اِس مقصد کے برائے 'یو آر ویلکم' استعمال ہوتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 19, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    عیدِ گوسپَندکُشان، عیدِ روزه گُشادن
    یہ چیز علم میں آئی ہے کہ فارسیِ دری کی ابتدائی صدیوں میں عیدِ قربان کے برائے 'گوسپَندکُشان' رائج تھا جو بعد میں متروک ہو گیا۔

    مثال کے طور پر قرنِ پنجمِ ہجری کے شاعر قطران تبریزی کے ایک قصیدے کا یہ مصرع دیکھیے:
    "خجسته باد تو را عیدِ گوسپندکشان"

    نیز، ۴۴۰ھ میں وفات پانے والے عالم ابوریحان البیرونی اپنی 'کتاب التفہیم لاوائل صناعۃ التنجیم' میں لکھتے ہیں:
    "و دهم روز از ذی‌الحجّه عیدِ گوسپندکشان که حاجیان به منیٰ قربان کنند. و بدین روز و دو روز از پسِ وی روزه داشتن حرام است."
    "اور ذی الحجّہ کا روزِ دہم 'عیدِ گوسپندکُشان' [ہے] کہ جس میں حُجّاج منیٰ میں قربانی کرتے ہیں۔ اور اِس روز اور اُس کے بعد کے دو روز میں روزہ رکھنا حرام ہے۔"

    اِسی کتاب میں البیرونی نے عیدِ فطر کے برائے 'عیدِ روزه گشادن' یعنی 'روزہ کھولنے کی عید' کی اصطلاح استعمال کی ہے جو اب فارسی میں رائج نہیں ہے۔
    "و نخستین روز از شوّال عیدِ روزه گشادن است."
    "اور شوّال کا روزِ اوّلین 'عیدِ روزہ گشادن' ہے۔"
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 19, 2017
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    "چھ سو سے زائد سالوں (۱۲۰۳ء تا ۱۸۳۷ء) تک فارسی بنگال کی سرکاری زبان رہی۔ اِس طویل مدت کے دوران فارسی میں ہزاروں کتابیں لکھی گئیں، اور صدہا شاعروں نے فارسی میں شاعری کی۔ اُن تخلیقات کے نسخے بنگال اور برِ صغیر کے مختلف کتاب خانوں میں کتابی یا خطّی شکل میں محفوظ ہیں۔ قرنِ ہجدہم کے وسط سے لے کر قرنِ نوزدہم کے اختتام تک، پانچ چھ فارسی روزنامے، از جملہ سلطان الخبار اور دوربین، باقاعدگی سے کلکتہ سے شائع ہوتے تھے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ فارسی خطّے کی ایک رائج و عمومی زبان تھی۔"
    ماخذ: بنگلاپیڈیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    "۱۲۰۳ء میں سلطانِ دہلی قطب الدین ایبک کے ایک عسکری فرماندِہ اختیارالدین محمد بختیار خَلَجی نے ندیا اور گوڑ کے علاقے فتح کر لیے۔ بعد ازاں، اُس نے تمام شمالی بنگال کو اپنی قلمرو میں شامل کر لیا۔ بنگال میں مسلم اقتدار نے تاریخ کے پورے رُخ کو موڑ دیا۔ بنگال کی اکثر آبادی، خصوصاً مشرقی بنگال کی آبادی، نے اسلام قبول کر لیا۔ برہمنوں اور اُن کی سنسکرت زبان کی اہمیت بتدریج قلیل ہو گئی اور مسلم درباری زبان فارسی بااثر ترین زبان بن گئی۔"
    ماخذ: بنگلاپیڈیا

    × 'خَلَجی' حالیہ افغانستان میں مقیم ایک تُرک قبیلہ تھا۔
    فارسی کے غیر مشروط عاشق کے طور پر میں خَلَجبوں کی فارسی گُستَر شمشیروں کو سلام کہتا ہوں۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 22, 2017 12:42 شام
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    "۱۸۸۲ء میں نواب عبداللطیف نے عربی و فارسی کی تعلیم کی معاشرتی اہمیت کو واضح کرتے ہوئے ہنٹر تعلیمی ہیئت (کمیشن) کے سامنے یہ اظہارِ نظر کیا تھا: 'جب تک کوئی مسلمان فارسی و عربی کا عالم نہ ہو، وہ مسلم معاشرے میں قابلِ احترام مقام حاصل نہیں کر سکتا، اور اُسے عالم نہیں مانا جائے گا۔ اور جب تک وہ اِس مقام پر فائز نہ ہو، وہ مسلم معاشرے میں کوئی اثر و رسوخ نہیں رکھ سکتا۔'"
    ماخذ: بنگلاپیڈیا

    × نواب عبداللطیف کا تعلق بنگال سے تھا۔
     
  18. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    437
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    جس کا نبض عشق نہ دھڑکے، اگر وہ افلاطون بھی ہو تو تو اسے خر سمجھ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آپ نے درست ترجمہ کیا ہے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    8,906
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک ایرانی اخبار کے توسط سے معلوم ہوا ہے کہ ایرانی فارسی میں گاڑیوں کے 'گیئر' کے لیے فارسی اصطلاح 'دَنْدہ' رائج ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر